آپ آف لائن ہیں
ہفتہ6؍ربیع الاوّل 1442ھ 24؍اکتوبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

بد قسمتی سے پاکستان پیپلز پارٹی اور کراچی کے ستارے شروع ہی سے آپس میں نہیں ملے اور ایک دوسرے سے ٹکراتے رہے۔سب سے پہلے بانی پی پی پی ذوالفقار علی بھٹو کےدور میں اردو اور سندھی زبانیں ایک دوسرے سے گتھم گتھا ہوئیں۔اس طرح مشہور جملہ مرحوم رئیس امروہوی کا’’اردو کاجنازہ ہے ذرادھوم سے نکلے‘‘پھر پاکستان کے واحد صوبہ سندھ میں کوٹہ سسٹم کا نفاذ ہوا اور کراچی کے نوجوانوں کی نوکریوں پر پہرا بٹھا دیا گیا۔

جو صرف 10 سال کے لئے تھا مگر آج تک جاری ہے اور نوکریوں پر مکمل طور پر دروازے بند ہو چکے ہیں۔پھر اس کیخلاف MQM میدان میں آئی اور پوری مہاجر برادری نے اس کا بھر پور ساتھ دیا توبظاہر مہاجر کاز وہ بھی درپردہ مہاجروں کے مفادات کا سودا کرتی گئی اور ایک ایک کر کے کراچی کے ادارے سندھ کے ہاتھوں فروخت ہوتے گئے، پہلے کراچی ڈیلویلپمنٹ اتھارٹی یعنی کے ڈی اے سندھ SBCAبنا ، کراچی روڈ اتھارٹی SRT بنا۔

تمام ٹیکس کراچی کو ملتے مگر وہ سندھ کے کھاتے میں جاتے رہے۔ پھر آہستہ آہستہ ہر ادارہ کراچی سے ہتھیاکر سندھ انتظامیہ کو دے دیا گیا۔ اس میںاگر سندھی اور مہاجر وں کے مفادات کا خیال رکھا جاتا تب بھی کوئی بات نہیں تھی۔مگر ایسا نہیں ہوا۔

پی پی پی کی حکومت جب بھی آتی ترمیمیں کر کے کراچی میں ڈسٹرکٹ اپنی مرضی کے بناتی، جس علاقے کو جہاں سے چاہتی نکال دیتی اور جہاں وہ کمزور ہوتی اس علاقے سے جوڑ دیتی،اس کی آخری مثال کراچی کے ساتویں ڈسٹرکٹ کیماڑی کی ہے۔ ایم کیو ایم واحد مہاجروں کی اسٹیک ہولڈر تھی اور الطاف حسین اکیلے مہاجروں کے مفادات سے کھیلتے رہے ،یہاں تک کہ اب فارغ لندن میں شاندار زندگی 30سال سے گزار رہے ہیں ۔

کراچی والوں کی بے چینی بڑھتی گئی ،اب مہاجروں نے نئی ابھرتی ہوئی پاکستان تحریک انصاف پر بھروسہ کیا کہ بقول وزیر اعظم پاکستان عمران خان میںکراچی والوں کو تنہا نہیں چھوڑوں گا ،مگر 2سال بعد اب تینوں اسٹیک ہولڈر اکٹھے بیٹھ کر کراچی کے مفادات کا مداوا کریں گے۔

یہ کیسے ممکن ہے کہ صوبائی حکومت کراچی کو پھلتا پھولتے دیکھے ، اس نے تو کراچی کو روشنیوں کے شہر سے بقول انور مقصود موہنجودڑو کے مانند کراچی جودڑو بنا دیا ہے۔تما م کراچی اور شہری علاقوں کی نوکریاں ان سے چھین لی گئی ہیں ۔حیدر آباد میں ایک یونیورسٹی بھی نہیں بنی ،کوئی ترقیاتی کام کرا چی اور حیدر آباد میں نہیں کئے گئے ۔تمام ٹیکس ہضم کر کے سڑکیں ،بجلی،گیس،سیوریج کے نظام تباہ کر دئیے گئے۔

نالوں پر آباد کاریاں اور نئی بندشیں کر کے پانی کی نکاسی جو مرحوم نعمت اللہ خان اور مصطفی کمال کے دور میں ہوئی تھی سب کی سب تباہ کر دی گئی۔دکھانے کیلئے ایک،دو اردو بولنے والے مشیر اور وزیر کھلواڑ کیلئے رکھ لئے ہیں ،جو مرکز کو للکار رہے ہیں ۔سوال یہ پیدا ہو تا ہے کہ یہ 3سیاسی جماعتیں کیسے مل کر کراچی کی محرومیوں کا ازالہ کریں گی، ان کےتو اپنے اپنے مفادات ہیں جو ایک دوسرے سے مختلف ہیں ۔

متحدہ قومی موو منٹ پر سے مہاجروں کا اعتماد اٹھ چکا ہے ، پاکستان پیپلز پارٹی والوں کو کراچی والوں نے آج تک اپنا ووٹ نہیں دیا ،اب رہا معاملہ پی ٹی آئی کا،کیا وہ صوبے کی حکومت کے بغیر کچھ کر سکے گی اور کیا صوبائی حکومت اپنے ہاتوں سے کرا چی جانے دے گی۔

ابھی مرکزی حکومت نے صرف اعلان ہی کیا ہے تو مشیران اور وزراء نے واویلا شروع کر دیا ہے اور خود بلاول بھٹو زرداری میدان میں آنے کیلئے تیار ہیں وہ کراچی کا ترنوالاچھوڑنے کیلئے تیار نہیں ہیں۔ایم کیو ایم خود انتشار کا شکار ہے اکیلے جنگ نہیں لڑ سکے گی،ابھی مذاکرات شروع بھی نہیں ہوئے تھے کہ پاکستان پیپلز پارٹی نے 7واںڈسٹرکٹ بنا ڈالا،ایم کیو ایم نے 7ویں ڈسٹرکٹ پر اعتراض کیا ہے اور کہا ہے کہ ہم کورٹ میں جائیں گے مگر سوال یہ ہے میئر کراچی کا کیا ہوگا۔

پاکستان پیپلز پارٹی اپنے مفادات سے کیسے دستبردار ہوگی،وہ تو کراچی کی پوزیشن اور خراب کرے گی اور اس کی نظریں اب کراچی کی میئر شپ پر ہیں۔پاکستان پیپلز پارٹی نے خیر پور کو بھی 2اضلاع میں تقسیم کرنے کی تجویز پیش کی ہے،متحدہ قومی موومنٹ صرف نئے الیکشن کیلئے مہاجروں سے ہمددیاں دکھا کر اپنے بچے کھچے مفادات لیتی رہے گی۔ کراچی یتیم کا یتیم ہی رہے گا ،جب تک خود کراچی والے اپنے مفادات کیلئے میدان میں نہیں نکلتے ۔

اگر کراچی کے مفادات کی حفاظت نہیں کی گئی تو 70فیصد معیشت فراہم کرنے والا شہر ڈوب جائے گا۔ ابھی توصرف ایک، دو بارشیں ہو ئی ہیں، آگے آگے دیکھئے ہوتا ہے کیا۔تحریک انصاف کے رہنما خرم شیر زمان نے کہا ہے کہ سندھ کے عوام باہر نکلیں اور بھر پور احتجاج کریں ،پیپلز پارٹی کا یہ فیصلہ ان کی نیتوں کے کھوٹ کو ظاہر کر رہا ہے ۔

یہ فیصلہ کراچی کے اسٹیک ہولڈر کی مشاورت سے کیا جانا چا ہئے تھا۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے کراچی کے اضلا ع کے نام تبدیل کرنے کیلئے بورڈ آف ریونیو کو تجویز بھی دی ہے۔