آپ آف لائن ہیں
جمعرات9؍ رمضان المبارک 1442ھ22؍اپریل 2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

ٹرانس جینڈر کوالگ جیلوں میں رکھا جائے،خاتون قیدی

راچڈیل (ہارون مرزا)ٹرانس جینڈر قیدیوں کو خواتین کی جیلوں میں رکھنے پر خواتین کے حقوق کا معاملہ ہائیکورٹ جا پہنچا، ٹرانس جینڈر قیدیوں کو خواتین کے ونگ میں رکھنے سے جنسی زیادتی کے واقعات سمیت خواتین خطرے سے دوچار ہو سکتی ہیں، لہٰذا انہیں خواتین کی جیلوں میں نہ رکھا جائے، یہ موقف ایک خاتون قیدی جسے ایف ڈی جے کے نام سے جانا جاتا ہے ،نے ہائیکورٹ میں اٹھایا ہے، عدالت کو بتایا گیا ہے کہ ٹرانس جینڈر خواتین کو خواتین کی جیلوں میں غیر قانونی طور پر دوسری خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے بڑھتے ہوئے خطرے سے دوچار کرتے ہوئے ان کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جاتا ہے، خاتون قیدی نے وزارت انصاف کی پالیسی کے خلاف قانونی چیلنج دیتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ قیدیوں کو ان کی صنفی شناخت کے مطابق رکھے جانے کی اجازت دی جاتی ہے چاہے انہوں نے اس صنف کو حاصل کرنے کیلئے کوئی قانونی یا طبی اقدام اٹھایا ہو ،عورت اس پالیسی کا استدلال کرتی ہے کہ بالواسطہ اور غیر قانونی طور پر ان خواتین کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جاتا ہے جو اس صنف کی وجہ سے پیدا ہوئیں، ہائی کورٹ میں ہونے والی سماعت میں ایف ڈی جے کے وکلا نے دلیل دی کہ خواتین جیل اسٹیٹ میں ٹرانس جینڈر خواتین کو شامل کرنے سے خواتین قیدیوں کو جنسی زیادتی کا خطرہ لاحق ہوجاتا ہے ،ایف ڈی جے نے دعویٰ کیا ہے کہ صنفی شناختی سرٹیفکیٹ والی ٹرانس خاتون کے ذریعہ 2017 میں جیل میں اس کے ساتھ جنسی زیادتی کی گئی، ان کے وکلاء کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس پالیسی میں خواتین قیدیوں کی غیر معمولی کمزوری اور بدسلوکی اور صنفی تشدد کی تاریخ کے پھیلائوپر بھی غور نہیں کیا گیا۔ کارون موناگھن کیو سی نے عدالت کو بتایا کہ ٹرانس جینڈر خواتین قیدی آبادی کا ایک فیصد ہیں مگر جیلوں میں تقریبا 6فیصد جنسی زیادتیوں کیلئے ذمہ دار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 2017 میں ایک غیر متناسب 45 فیصد ٹرانس قیدیوں کو جنسی جرائم کے لئے الزامات کا سامنا رہاموناگھن نے عدالت کو بتایا کہ ڈاکٹر سارہ لیمبل جو اس معاملے میں مداخلت کی اجازت دے رہی ہیں نے کہا کہ جیلوں میں ٹرانس آبادی کے بارے میں اعداد و شمار کا فقدان ہے اور کسی بھی اعداد و شمار کے دعوے کو شکوک و شبہات سے برتاؤ کیا جانا چاہیے اس سے مزید جانچ پڑتال کی ضرورت ہے۔ موناگھن نے کہاہمیں جس چیز کا تعلق ہے وہ معلوم ٹرانس آبادی ہے ، کیوں کہ یہ وہ ٹرانس مرد اور خواتین ہیں جنہیں جیل اسٹیٹ میں منتقل کرنے کی ذمہ دار ہے ایف ڈی جے کی دلیل میں یہ دعویٰ بھی شامل ہے ٹرانس جینڈر قیدیوں کی خواتین کی جیلوں میں جنسی حملوں کا امکان پانچ گنا زیادہ ہے۔
یورپ سے سے مزید