| |
Home Page
اتوار 03 محرم الحرام 1439ھ 24 ستمبر 2017ء
July 16, 2017 | 03:16 pm
جے آئی ٹی کا فوج سے براہ راست کوئی تعلق نہیں، آئی ایس پی آر

Jit Has No Direct Connection To The Army Ispr

Jit Has No Direct Connection To The Army Ispr

ڈی جی آئی ایس پی آرمیجرجنرل آصف غفورنے کہا ہے کہجے آئی ٹی کا پاک فوج سے براہ راست کوئی تعلق نہیں ، جے آئی ٹی سپریم کورٹ نے بنائی ، ایم آئی اور آئی ایس آئی نے بڑی محنت سے کام کیا ۔

پریس کانفرنس کے دوران ڈی جی آئی ایس پی آرمیجرجنرل آصف غفورنے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ یہ کہنا کہ آرمی کسی سازش کا حصہ ہے، اس سوال کا جواب دینا بھی نہیں بنتا ، ملک کی سلامتی کے لیے ہر ضروری اقدام کررہے ہیں ، پاک فوج آئین کی عملداری چاہتی ہے۔

ڈی جی آئی ایس پی آرنے بتایا کہ راجگال اور شوال میں آج سے آپریشن شروع کردیا ہے،راجگال فاٹاکاسب سے مشکل علاقہ ہے،اس کی 8 گزرگاہیں ہیں،آپریشن خیبر4 آپریشن ردالفساد کا حصہ ہے۔ ضرب عضب کومکمل کیاتوہم نےکہا تمام علاقہ کلیئر کرا دیاگیا، شوال کوبھی انشاءاللہ جلد کلیئرکردیاجائےگا۔

انہوں نے کہا کہ خیبر 4جہاں آپریشن کیاجا رہا ہے وہ علاقہ انتہائی دشوار گزارہے۔ یہ سنگلاخ اور اونچی پہاڑیوں پر مشتمل علاقہ ہے،اس علاقےمیں500خاندان آباد ہیں جو حالات کی وجہ سے ہجرت کرچکے ہیں۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے مزید کہا کہ آپریشن کا مقصد سرحد پار موجود داعش کو پاکستانی علاقوں میں کارروائیوں سے روکنا ہے،دہشت گردوں کی کمین گاہوں کوختم کیا جائے گا۔

انہوں نے بتایا کہ ردالفساد کے تحت سندھ میں 522 دہشت گردوں نے ہتھیار ڈالے،کئی دہشت گردوں کو گرفتار کرکے مقدمات چلائے جارہے ہیں۔

میجرجنرل آصف غفورنے کہا کہ کلبھوشن نےآرمی چیف سے رحم کی اپیل کی ہے،کلبھوشن کی رحم کی اپیل پرفیصلہ میرٹ پرکیا جائے گا۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ افغانستان سےمنسلک سرحدپرباڑلگائی جائےگی، افغان سرحد پر باڑ لگانے کا مقصد بارڈر مینجمنٹ کوبہتراورمحفوظ بناناہے۔

انہوں نے کہا کہ ایل اوسی پرصورتحال کچھ عرصے میں کافی گرم رہی ہے،پاک فوج ایل اوسی پربھارتی فائرنگ کا موثر جواب دیتی ہے۔

میجرجنرل آصف غفورکا کہنا تھا کہ کراچی میں ایپکس کمیٹی اجلاس میں آرمی چیف گئے، کراچی آپریشن پر نظرثانی کی گئی اور آپریشن کے نتیجے میں کراچی میں بہتری آئی۔کراچی میں دہشت گردی کے واقعات میں 98 فیصد اورٹارگٹ کلنگ میں 97 فیصد کمی آئی ہے۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نےکسی بھی سیاسی سوال کے جواب سے گریز کیا ، ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ریمنڈ ڈیوس کے معاملے میں کئی اداروں نے کردار ادا کیا،ریمنڈ ڈیوس سفارتی استثنا کے تحت واپس گیا، یہ کہنا کہ فوج سازش کا حصہ ہے،اس سوال کا جواب دینا بھی نہیں بنتا۔

انہوں نے کہا کہ داعش افغانستان میں مضبوط ہورہی ہے،افغانستان میں امن پاکستان کی سب سے زیادہ خواہش ہے۔

ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ پاک فوج آئین کی عملداری چاہتی ہے، ملک کی سلامتی کے لیے ہر ضروری اقدام کررہے ہیں، سی پیک پاکستان کی ترقی کا ضامن ہے،اسے بھرپورسیکورٹی دیں گے۔