• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

عالمی سطح پر آگے بڑھنے کیلئے یورپی یونین قوانین سے الگ ہونا ہوگا، سینئر وزیر، ٹیکسوں میں کٹوتی کیلئے وزیراعظم پر دباؤ

راچڈیل (نمائندہ جنگ)کابینہ کے ایک سینئر وزیر نے وزیراعظم بورس جانسن پر ٹیکسوں میں کٹوتی کے لیے دباؤ بڑھا دیا،گھریلو پالیسی پر ایک غیر معمولی عوامی مداخلت میں سابق بریگزٹ مذاکرات کار لارڈ فراسٹ نے کہا کہ کم ٹیکس ملک کے طور پر کامیابی کا فارمولا ہے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ برطانیہ کو یورپی یونین کے قوانین سے الگ ہونا چاہیے تاکہ برطانیہ عالمی سطح پر آگے بڑھ کر مقابلہ کر سکے، یہ اس وقت سامنے آیا جب کامنز نے ٹوری بیک بینچرز کی زبردست بغاوت کے بعد سماجی نگہداشت میں حکومت کی منصوبہ بند تبدیلیوں کو صرف 26کی اکثریت کے ساتھ ووٹ دیا، سینئر کنزرویٹو ایم پیز نے متنبہ کیا کہ وہ انگلینڈ میں نگہداشت کے اخراجات کو کم کرنے کے لیے نئی پالیسی کی حمایت نہیں کریں گے، وزراء یہ بتانے سے قاصر تھے کہ آیا دیکھ بھال کے اخراجات پر مقررہ رقم کی حد میں تبدیلی انتخابی وعدے کو پورا کرے گی کہ کسی کو دیکھ بھال کی ادائیگی کے لیے اپنا گھر فروخت نہیں کرنا پڑے گا،قدامت پسند ناقدین ماہرین اور لیبر ایم پیز کے ساتھ مل کر انتباہ کرتے ہیں کہ صرف انفرادی ادائیگیوں کو کیپ کے لیے شمار کرنے کے اقدام سے نہ کہ مقامی اتھارٹی کے تعاون سے امیروں کے مقابلے میں  غریبوں پر  وصول کنندگان کو اثاثوں میں زیادہ لاگت آئے گی لیکن حکومت نے کامنز میں ممکنہ شکست کو دیکھنے کے لیے کام کیا اور ایم پیز نے 272 ووٹوں سے 246 کو شکست دی۔ وزیر اعظم کی تقریباً 80 ایم پی ایز کی ورکنگ اکثریت کو کم کر دیا گیا، اس سے قبل مسٹر جانسن کو بزنس لابی گروپ کی سالانہ کانفرنس میں تقریر کے دوران سی بی آئی سے معذرت پر مجبور کیا گیاتھا،بریگزٹ پر جھڑپوں کے بعد مسٹر جانسن اپنی سی بی آئی تقریر کے دوران بڑے کاروبار کے ساتھ باڑ کو ٹھیک کرنے کی کوشش کر رہے تھے، سینئر ڈاؤننگ اسٹریٹ سورس کے حوالے سے دعوی کیا جا رہا ہے کہ تقریر شیمبولک تھی اور وزیر اعظم کے بارے میں عمارت کے اندر کافی تشویش پائی جاتی ہے، کابینہ کو بیدار ہونے اور سنجیدہ تبدیلیوں کا مطالبہ کرنے کی ضرورت ہے ورنہ یہ بدتر ہوتا رہے گا، اگر وہ اصرار نہیں کرتے ہیں تو اس میں کچھ نہیں ہوگانمبر 10نے اس دعوے پر تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے ۔

یورپ سے سے مزید