آپ آف لائن ہیں
پیر7؍ ربیع الثانی1442ھ 23؍ نومبر2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

آپ کی غذا میں چھپا ہے آپ کی اچھی صحت کا راز

کیا غذا آپ کو خوشی دے سکتی ہے؟ یقیناً، اس سوال کا جواب ہر شخص ’ہاں‘ میں دے گا لیکن اس ’ہاں‘ کے پسِ پردہ ہر شخص کا زاویہ مختلف ہوگا۔ کسی شخص کو مرغن اور مسالے دار ڈشز کھا کر خوشی محسوس ہوتی ہے تو کسی کو اگر اُس کی پسندیدہ آئس کریم مل جائے تو وہ انتہائی مسرت محسوس کرے گا۔ لیکن ہم جس خوشی کی بات کررہے ہیں، وہ ہے غذا کے آپ کے طویل مدتی مزاج پر اثرات کی۔

امریکا میں پر اسیس شدہ لذیذ غذاؤں کا استعمال 50سال پہلے شروع ہوا اور ماہرین کے مطابق یہی پراسیس شدہ غذائیں لوگوں میںبڑھتے ڈپریشن کی ایک بڑی وجہ ہیں۔ امریکن اسٹینڈرڈ ڈائٹ (SAD)نے انسانی زندگی کو قابلِ رحم بنادیا ہے۔

ہم یہاں کس طرح پہنچے؟

یہ سب 50برس پہلے اس وقت شروع ہوا، جب امریکا میں پہلی بار پیکیجڈ اور پراسیس شدہ غذائی اشیا تیار کرنے کی اجازت دی گئی اور پھر امریکی مینوفیکچررز اسے دنیا بھر میں برآمد بھی کرنے لگے۔ اسے کارپوریٹ دنیا کی ہوس کا نتیجہ کہیں یا غلط سائنس کہ لگ بھگ اسی دوران یعنی 1960ء کے عشرے میں چکنائی (فیٹ) کو انسانی صحت کے لیے نقصان دہ قرار دیا گیا۔ امریکی حکومت کے ادارے ’یو ایس ڈی اے‘ (امریکا کا محکمہ زراعت) نے ٹھوس سائنسی شواہد کا انتظار کیے بغیر ’کارپوریٹ ایگری بزنس‘ سے جُڑی لابی کے زیرِ اثر غذا کے نئے رہنما اصول اور نقائص سے پُر غذائی تکون (فوڈ پیرامِڈ) جاری کی۔ 

امریکی حکومت کی جانب سے غذا کے نئے رہنما اصولوں میں امریکیوں کو بہتر صحت کے لیے زیادہ سے زیادہ ’ریفائنڈ گرین‘یعنی پراسیس شدہ اناج کھانے کی تجویز دی گئی۔ زیادہ منافع کا لالچ رکھنے والی کمپنیوں نے امریکی حکومت کے ان رہنما اصولوں کو اپنے حق میں استعمال کرتے ہوئے حکومتی سبسڈی پر پیدا ہونے والے اناج کی اس طرح مارکیٹنگ کی کہ اس کے نتیجے میں لوگوں کی زندگی سے چکنائی بتدریج نکلتی اور اس کی جگہ شیرے (سیرپ) اور نشاستہ (اسٹارچ) والی غذائیں لیتی چلی گئیں۔

یہ کہانی کسی خفیہ سازش کا نتیجہ معلوم ہوتی ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ یہ سب کچھ عوام کے سامنے اچھی نیت (بظاہر) کے ساتھ کیا جارہا تھا۔

موڈ ، آنتوں میں جنم لیتا ہے

انسان صدیوں سے جانتاآیا ہے کہ آنتوں کے مسائل اسے شدید دماغی اُلجھن، انزائٹی اور نفسیاتی امراض سے دوچار کرسکتے ہیں۔ تاہم 21ویں صدی کی جدید سائنسی تحقیق نے پہلی بار ہمیں یہ بتایا کہ ہمارے ’گَٹ مائکروبز‘ (انسان کے نظام انہضام کی نالیوں میں پائے جانے والے انتہائی باریک جرثومے) ہمارے لیے کس قدر فائدہ مند ہوتے ہیں۔ تحقیق مزید بتاتی ہے کہ ہمارے گَٹ مائکروبز اور ہمارے ذہن کے مابین ایک تعلق ہوتا ہے اور یہ تعلق ہمارے جذبات، موڈ اور رویوں کو ایک ضابطہ اور ترتیب دیتا یعنی ریگولیٹ کرتا ہے۔

آپ نے پروبائیوٹکس کے بارے میں ضرور سُنا ہوگا جو ہماری غذا میں شامل وہ زندہ بیکٹیریا اور خمیرہیں جو نظام انہضام کے لیے فائدہ مند ہوتے ہیں اور آپ نے پری بائیوٹکس کے بارے میں بھی سُنا ہوگا، جو بنیادی طور پر پروبائیوٹکس کی غذا ہوتے ہیں۔ لیکن کیا آپ نے ’سائکو بائیوٹکس‘ کے بارے میں سُنا ہے؟ سائکوبائیوٹکس وہ پروبائیوٹکس اور پری بائیوٹکس ہیں، جو آپ کے موڈ کو بہتر بناتے ہیں۔سائکوبائیوٹکس ان بیکٹیریا پر مشتمل ہوتے ہیں جو اکثر دہی، گرین یا بلیک ٹی، اور گائے کے دودھ وغیرہ میں پائے جاتے ہیں۔ 

سائکو بائیوٹکس، کامپلیکس کاربو ہائیڈریٹس (فائبر) والی غذاؤں جیسے مٹر، اناج اور سبزیوں میں بھی پائے جاتے ہیں، جو گلوکوز (بلڈ شوگر) میں تبدیل ہوکر جسم کو توانائی فراہم کرتے ہیں۔ حرفِ آخر یہ کہ، فائدہ مند بیکٹیریا کو اگر سب سے زیادہ کوئی چیز پسند ہے تو وہ ہے ’فائبر‘۔ حیران کن طور پر گزشتہ 50برسوں سے اگر ہم اپنی غذا سے کسی چیز کو چھان کر مسلسل نکالے جا رہے ہیں تو وہ بھی ’فائبر‘ ہی ہے۔ 

ایک شخص کو روزانہ 30گرام فائبر درکار ہوتا ہے، اور تحقیق بتاتی ہے کہ امریکا میں ہر 20افراد میں صرف ایک شخص روزانہ مطلوبہ مقدار میں فائبر لیتا ہے۔ اگر ہم خود پر اور اپنے اِرد گِرد نظر دوڑائیں تو ہمیں نظر آتا ہے کہ ناشتے میں وہائٹ بریڈ، ریفائنڈ آٹے کے پراٹھوں اور فروٹ کیک سے لے کر رات کے کھانے کے بعد کی آئس کریم تک،ہم ’فائبر سے پاک‘ غذائیں کھارہے ہیں۔ ایسی غذائیں ہمیں ذیابطیس، موٹاپے، انزائٹی اور ڈپریشن سے دوچار کررہی ہیں۔

مائکروبز کا کردار

ہماری آنتوں میں تقریباً 3 پاؤنڈ وزن کے لگ بھگ مائکروبز ہوتے ہیں۔ ہم جو کوئی بھی غذا لیتے ہیں، یہ مائکروبز اس کا پیچھا کرتے ہوئے اس سے نقصان دہ بیکٹیریا (پیتھوجن) کو نکال باہر کرتے ہیں۔ درحقیقت مائکروبز ہمارے جسم کے مدافعتی نظام کے لیے ’شاہی محافظوں‘ کی حیثیت رکھتے ہیں۔ اس سے پہلے کہ ہمارے مدافعتی نظام کو ان نقصان دہ بیکٹیریاز کا پتہ چلے، مائکروبز ان سے لڑ کر انھیں تباہ کرچکے ہوتے ہیں۔ ہمارے نظام انہضام میں ان شاہی محافظوں (مائکروبز) کی تعداد تقریباً 100ٹریلین ہے۔

حالانکہ یہ 100ٹریلین مائکروبز ہر طرح کے نقصان دہ بیکٹیریا کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں لیکن اگر ہم ان مائکروبز کو ان کی فائدہ مند غذا بہم نہ پہنچائیں تو ان کی دشمن پر حملہ کرنے کی صلاحیت میں کمی واقع ہوجاتی ہے۔ ان مائکروبز کو مسلسل نقصان دہ غذا ملنے کی صورت میں پیتھوجنز (نقصان دہ بیکٹیریا) نظامِ انہضام کو ڈسٹرب کرنے میں کامیاب ہوجاتے ہیں۔ غذا میں زیادہ عرصے تک درستی نہ لائی جائے تو نظامِ انہضام میں پیدا ہونے والے نقصان دہ مادے اور بیکٹیریا، خون میں شامل ہوجاتے ہیں۔ اس طرح یہ نقصان دہ مادے اور خراب بیکٹیریا ہمارے ذہن تک بھی پہنچ جاتے ہیں۔

بُرائی کی جڑ

اب سائنسدانوں کا ماننا ہے کہ سوزش والی تمام بیماریوں جیسے ذیابطیس، دل کے مسائل، گٹھیا یا جوڑوں کا درد، پارکنسنز، الزائمر اور دماغی مسائل جیسے ڈپریشن اور انزائٹی کی ابتدا آنتوں سے ہوتی ہے۔ اس لیے ہماری آنتوں میں فائدہ مند بیکٹیریا اور ان کی صحت، ہماری مجموعی صحت اور موڈ کے لیے سب سے زیادہ اہم بن جاتے ہیں۔ یہی نہیں، سائکو بائیوٹک بیکٹیریا ڈوپامائن اور سیروٹونن جیسے نیوروٹرانسمیٹرز بھی پیدا کرتے ہیں، جو ڈپریشن بھگا کر موڈ کو خوشگوار بناتے ہیں۔

کیا کیا جائے؟

اپنی روزانہ کی غذا میں سبزیوں، پھلوں، سالم اناج (جسے چھانا نہ گیا ہو)، گری دار میوے، زیتون کا تیل، جڑی بوٹیاں اور قدرتی مسالے شامل کریں۔ مچھلی، سمندری خوراک اور خمیرے والی چیزیں ہفتے میں ایک سے زائد مرتبہ کھائیں۔ پولٹری، انڈے اور ڈیری مصنوعات کا ہفتے میں ایک بار استعمال کریں جبکہ لال گوشت (ریڈ مِیٹ) اور مٹھائیاں یا میٹھی چیزیں کبھی کبھار کھائیں۔ مزید برآں، ورزش آپ کے مائکروبز کی صحت کو بہتر بنانے میں معاون رہتی ہے۔

بالا چیزوں پر عمل کرنے سے ایک سے دو ہفتوں میں آپ نہ صرف اپنے موڈ بلکہ اپنے پورے جسم میں بھی مثبت تبدیلی اور قوت محسوس کریں گے اور آپ کی جِلد بھی چمک اُٹھے گی۔