Advertisement

اے میرے کشمیر

August 21, 2019
 

امجد اسلام امجد

اے میرے کشمیر

اے ارضِ دلگیر

اپنے لہو سے تُو نے لِکھی جو روشن تحریر

بدلے گی اِک روز اِسی سے دنیا کی تقدیر

اے میرے کشمیر۔اے ارضِ دلگیر

شمعِ وفا کے پروانوں کے تجھ پر لاکھ سلام

ظُلم کی گہری کالی شب میں تُو ہے صبح امام

تُو نے جُہدِ حق کو دیا ہے ایسا ایک مقام

جس کی نہیں نظیر

آزادی وہ خواب کہ جس کی آزادی، تعبیر

اے میرے کشمیر۔ اے ارضِ دلگیر

لہو اُگلتی وادی سے گر تیل نِکل آتا

پل بھر میں اِن اہلِ حشم کا روپ بدل جاتا

تیرا دُکھ اِک تیر کی صورت اِن پر چل جاتا

اُٹھتے جاگ ضمیر

کِس نے کیا ہے، کون کرے گا، خُوشبو کو زنجیر!

اے میرے کشمیر ۔ اے ارضِ دلگیر

تیرے لہو سے روشن ہے اب شمع وفا کی لَو

تونے نئے عنوان دیے ہیں صبر اور ہمت کو

اللہ اور نبیؐ کی تجھ پر خاص عنایت ہو

ٹوٹے ہر زنجیر

بدلے گی اِک روز تجھی سے دُنیا کی تقدیر

اے میرے کشمیر

اے ارضِ دلگیر


مکمل خبر پڑھیں