• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

سمیر واکھنڈے کو گرفتاری سے 3 روز قبل نوٹس دیا جائے گا

ممبئی ہائی کورٹ نے نارکوٹکس کنٹرول بیورو (این سی بی) افسر سمیر واکھنڈے کی طرف سے دائر درخواست کو نمٹا دیا ہے جس میں ممبئی کروز شِپ منشیات کیس میں جبری وصولی کے الزامات کے بعد گرفتاری سے عبوری تحفظ کی درخواست کی گئی ہے۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق مہاراشٹر حکومت کے وکیل نے کہا ہے کہ اگر سمیر واکھنڈے کے خلاف کوئی مقدمہ درج ہوتا ہے تو وہ گرفتاری سے 72 گھنٹے قبل پیشگی کی اطلاع دیں گے۔

دوسری جانب سمیر واکھنڈے نے دعویٰ کیا ہے کہ مہاراشٹر حکومت کی طرف سے ان پر ذاتی طور پر حملہ کیا جا رہا ہے۔

این سی بی افسر سمیر واکھنڈے نے ممبئی ہائی کورٹ کو بتایا کہ ’مجھ پر ریاست کی طرف سے ذاتی طور پر حملہ کیا جا رہا ہے، میرا خدشہ ہے کہ  مجھے کسی بھی دن گرفتار کر لیا جائے گا لہٰذا میں عبوری تحفظ چاہتا ہوں۔‘

سمیر واکھنڈے نے اس معاملے کی جانچ سی بی آئی یا کسی مرکزی ایجنسی کو منتقل کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔

اُنہوں نے مزید کہا کہ ’میں منشیات فروش نہیں ہوں، میں ایک زونل ڈائریکٹر ہوں، تحقیقات سی بی آئی یا این آئی اے کو دیں۔‘

واضح رہے کہ ایک بھارتی نیوز ایجنسی نے ٹوئٹر پر جاری بیان میں بتایا تھا کہ سدھا نامی ایک وکیل نے سمیر واکھنڈے سمیت دیگر 4 افراد کے خلاف پولیس میں شکایت درج کروائی ہے جس میں انہوں نے ان تمام افراد کے خلاف بھتہ خوری یعنی جبری وصولی کا الزام لگاتے ہوئے ایف آئی آر درج کرنے کا مطالبہ کیا۔

انٹرٹینمنٹ سے مزید