• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

لچک کامظاہرہ نہ ہوا تو تحریک ملک بھر میں پھیل جا ئیگی،ینگ ڈاکٹرز

کوئٹہ (آن لائن)ینگ ڈاکٹرز پاکستان، پیرا میڈیکل اسٹاف اور ینگ نرسز کے رہنمائوں نے کہاہے کہ اگر حکومت بلوچستان نے لچک کامظاہرہ نہیں کیا تو پھر یہ تحریک ملک بھر تک پھیل جائے گی صوبے کے ہسپتالوں میں سپرٹ امونیا تک دستیاب نہیں، ادویات اور بنیادی سہولیات مکمل طور پر نا پید ہے،احتجاجی تحریک سے متعلق جنرل باڈی اجلاس میں طے کیاگیالائحہ عمل پریس کانفرنس کے ذریعے عوام اور میڈیا کے سامنے رکھاجائے گا۔ ان خیالات کااظہار ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن بلوچستان کے چیئرمین ڈاکٹر حفیظ مندوخیل ،صدر ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن پنجاب ڈاکٹر مدثر نواز اشرفی ،آل پاکستان پیرامیڈیکل سٹاف فیڈریشن صدر فضل کاکڑ ،وائی ڈی اے بلوچستان کے ڈاکٹرحنیف خان لونی ،صدر ینگ نرسز ایسوسی ایشن بلوچستان ملک عزیز کاکڑ ڈاکٹرارسلان بلوچ ودیگر نے ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن بلوچستان، پیرامیڈیکل سٹاف فیڈریشن اور ینگ نرسز ایسوسی ایشن بلوچستان کی جانب سے پی جی ایم آئی ہال سنڈیمن پرونشل ہسپتال کوئٹہ میں ایک ہنگامی جنرل باڈی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اجلاس میںمیں ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن پنجاب بالخصوص اور دیگر صوبوں سے آئے ینگ ڈاکٹرز نے شرکت کی اجلاس کا باقاعدہ آغاز تلاوت قرآن پاک سے کی گئی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر حنیف لونی نے گرفتار ینگ ڈاکٹرز کو خراج تحسین پیش کی اور کہاں حکومت بلوچستان ایسے اوچھے ہتھکنڈوں سے باز آجائیں ،ڈاکٹرحفیظ مندوخیل نے کہاکہ ہم اپنے مطالبات میں کوئی لچک نہیں دکھائیں گے اور نہ ہی اپنے احتجاج کی شدت میں کمی لائیں گے وزیر اعلی کو پتہ بھی ہے کہ ینگ ڈاکٹرز ہڑتال پر ہیں آپ مختلف دورے کر رہے لیکن اپنے بلوچستان کے ینگ ڈاکٹرز کو سننے کے لیے سنجیدہ نہیں،اس جنرل باڈی اجلاس کی توسط سے میں یہ پیغام دینا چاہونگا کہ ہم مکران، جھالاوان اور لورالائی کے طلبا کے ساتھ ہیں اور ہر فورم پر ان کے لیے بھرپور آواز اٹھائیں گے ٹیچنگ ہسپتال آپ نے نوٹیفکیشن کے ذریعے تو بنا دیا لیکن جو کرائیٹیریا ہو تاہے اس پر تو پورا اتریں اور ان تمام ہسپتالوں کو بنیادی سہولیات سے آراستہ کریں،ہم ایک جمہوری انداز میں اپنی تحریک چلا رہے ہیں ہمیں اشتعال پہ مجبور نہ کریں وگرنہ ملک گیر احتجاج اور دھرنوں کی طرف جائیں گے ،میں تمام سیاسی جماعتوں بشمول بلوچستان نیشنل پارٹی، پشتونخواہ ملی عوامی پارٹی اور سیاسی و سماجی تنظیموں کا کا شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے غیر مشروط انداز میں ہماری حمایت کی اور ہمارے ساتھ اظہار یکجہتی کی ینگ ڈاکٹرز اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کریں یہ لڑائی ایک فرد تک محدود نہیں اب ہم اس لڑائی کو مزید وسعت دیںگے ،صدر ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن پنجاب ڈاکٹر مدثر نواز اشرفی نے کہاکہ پورے پنجاب نے وائی ڈی اے بلوچستان کے مطالبات کی حمایت میں جزوی اوپی ڈی بند رکھی ہے اور اس احتجاج کو مزید وسعت دینگے اگر بالا حکام نے سنجیدگی سے ان مسائل کو حل کرنے کی کوشش نہیں کی. آپ لوگوں کا جذبہ اور ولولہ دیکھ کر ہم پنجاب والے مسائل کے حل ہونے تک ادھر ہی ہونگے ہماری جو جنگ ہے وہ ایک نظریہ ہے اور یہ جنگ پورے پاکستان میں پھیلانی ہے اب اس کو عملی جامہ پہنائی جائے گی جس کیلئے پورا پاکستان یہاں پہ موجود ہیں حکام بالا ہر میٹنگ میں یہی کہتے ہیں کہ آپ لوگوں کے مطالبات جائز ہے. تو پھر ان مطالبات کو تسلیم کرنے میں اتنی تاخیر کیوںں! پھر ہم سمجھ لیں کہ آپ لوگ سنجیدہ نہیںایم ٹی ایکٹ کو پنجاب نے یکسر مسترد کریا اور یہاں بلوچستان میں بھی آخری حد تک اس کے خلاف لڑیں گے. NLE ایک سازش ہے جو صرف ہاس آفیسرز تک محدود نہیں ہوگا بلکہ ہر ڈاکٹر پر اپلائی کیا جائیگاہیلتھ کارڈ ایلیٹ کلاس تک محدود ہوگی اور اس میں صرف پرائیویٹ ہسپتال شامل ہونگے،تنظیم کا وجود اس لیے ہے وہ نا حق کے خلاف بولیں اور سرکاری ہسپتالوں کو جدید سہولیات اور مشینری سے آراستہ کرانے کی بھرپور کریں ،مطالبات کی خاطر جو ڈاکٹرز جیل میں ہیں اور مارے کھائی ہیں وہ غریب عوام اور ڈاکٹر کمیونٹی کیلئے ہیں اب اس تحریک کو نئی رنگ دینگے بلوچستان، سندھ اور پنجاب سے ہوتا ہوا کشمیر تک پہنچا دینگے،بلوچستان کا شکریہ ادا کر تا ہوں جنہوں نے پورے پاکستان سے ینگ ڈاکٹرز کو ایک پلیٹ فارم پر اکٹھا کر دیا۔
کوئٹہ سے مزید