آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر2؍ربیع الثانی 1440ھ 10؍دسمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

سردیاں آئیں اور مچھلی کے مزے نہ لئے جائیں ایسا ممکن نہیں ہے۔ سرد موسم میں جب مسالہ لگی گرما گرما مچھلی سامنے آتی ہے تو پھر ہاتھ نہیں رکتا اورجی چاہتا ہے کہ بس کھائے چلے جائیں۔ بعض مچھلیاں تو اتنی مزیدار ہوتی ہیں کہ اسے کھانے کے دوران کانٹے بھی رکاوٹ نہیں بن پاتے۔ بہر حال فشریز میں رش بڑھنے لگا ہےاور فش پارٹیز کا اہتمام ہمارے گھروں میں رونق لگانے لگاہے۔ سردیوں میں مچھلی کھانےکے ویسے بھی بہت فوائد ہیں اورہمیں چاہئے کہ اس نعمت سے بھرپور فائدہ اٹھائیں۔

مچھلی کے فوائد

سیلینیم وہ جز وہے جو کہ ہمارے جسم میں مدافعتی نظام کو مضبوط کرنے میں اہم کردارادا کرتاہے۔ مچھلی میں سیلینیم وافر مقدار میں پایا جاتا ہے۔ لہٰذا اگر مچھلی کو خوراک کا حصہ بنایا جائے تو اس سے زکام اور کھانسی کو بھگانے میں مدد ملتی ہے۔

مچھلی کا گوشت توانائی بخش اور زود ہضم ہوتا ہے۔ مچھلی کے گوشت میں غذائیت بخش اجزا وافر مقدار میں پائے جاتے ہیں۔ مچھلی میں فاسفورس کی موجودگی جسم کی نشوونما کے علاوہ دماغ کو توانائی بخشتی ہے، جس سے ذہانت تیز ہوتی ہے۔ مچھلی کو وٹامن اے اور وٹامن ڈی کا خزانہ کہا جاتا ہے۔ یہ دونوں وٹامن جِلد، دانتوں اور ہڈیوں کے لیے اہم ہیں۔ مچھلی کے گوشت میں وٹا من بی بکثرت پایا جاتا ہے۔ یہ وٹامن لحمیات کو ہضم کرنے میں مدد دیتا ہے۔ اعصابی نظام کی خرابیاں اور کمزوریاں دور کرنے میں بھی مدد دیتا ہے۔ مچھلی میں پوٹاشیم، فولاد اور آئیو ڈین موجود ہوتے ہیں۔ مچھلی میں موجود فلورائڈ دانتوں کو مضبوط بناتا اور امراض سے محفوظ رکھتا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ مچھلی دماغ کی غذا ہے جبکہ تحقیق نے بھی مچھلی کو دماغ اور اعصاب کے لیے مفید قرار دیا ہے۔ تحقیقات سے یہ بھی پتہ چلا ہے کہ مچھلی کا تیل کولیسٹرول اور چربی کی مقدار کم کر کے عارضہ قلب میں فائدہ دیتا ہے۔ خون کا گاڑھا پن عموماً امراض قلب کا سبب بنتا ہے۔ مچھلی کا تیل خون کو گاڑھا ہونے سے روکتا ہے۔ تحقیق کے مطابق اومیگا تھری چکنائی و بلڈ پریشر کم کرتی ہے اور جِلدی امراض میں مفید ہے۔ دماغ کے ٹشوز کی نشوونما میں مدد دیتا ہے۔ مچھلی کم کیلوریز والی پروٹین حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ ہے، جس سے امراض قلب کا خدشہ کم ہو جاتا ہے۔ ماہرین طب و صحت کی تحقیقات کے مطابق مچھلی میں پائی جانے والی اومیگا تھری چکنائی قلب اور اس کی شریانوں کے لیے بہت مفید ہے۔ یہ چکنائی خاص قسم کی مچھلیوں میں پائی جاتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ دل کے مریضوں کو مچھلی کھانے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔دل اور اس کی شریانوں کے لیے مفید یہ چکنائی در اصل فیٹی ایسڈز ہیں، جو مچھلی کے علاوہ نباتی ذرائع سے حاصل کیے جاتے ہیں، ان میں سویا بین سے بنا ہوا تیل قابل ذکر ہے۔

مچھلی کے گوشت سے لحمیات، فولاد، کیلشیم اوروٹامن بی حاصل ہوتا ہے جبکہ سمندری مچھلی سے آیوڈین ملتا ہے۔ اس طرح مچھلی کا تیل بھی انہی خصوصیات کا حامل ہوتا ہے۔ اب تک ہونے والی تحقیقات کے مطابق مچھلی کھانے سے خون کی چکنائی تبدیل ہو جاتی ہے۔ کولیسٹرول اور ٹرائی گلیسرائیڈ کم ہوتے ہیں۔ تحقیقات کے مطابق مچھلی کا استعمال بلڈ پریشر کو بڑھنے سے روکتا ہے ، جس سے امکانی طورپر فالج سے محفوظ رہا جاسکتا ہے۔

انسانی دماغ ایک روغنی عضو ہے۔ پانی کے علاوہ اس کا زیادہ تر حصہ چربی ہے۔ جو چکنائی ہم کھاتے ہیں وہ مزاج کے طور پر نمایاں ہوتی ہے۔ افسردہ مزاج کے لوگوں میں اومیگا تھری فیٹی ایسڈ کم ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ مچھلی استعمال کرنے والے ممالک میں افسردگی کا مرض کم دیکھنے میں آتا ہے۔ مچھلی کا استعمال بڑھاپے کے عمل کو سست کرتا ہے۔ پھیپھڑوں میں تمباکو سے ہونے والی سوزش کم ہوتی ہے۔

مچھلی پر تحقیق کرنے والوں کا کہنا ہے کہ مچھلی کسی بھی قسم کی ہو، وہ امراض قلب کے لیے مفید ہوتی ہے۔ جسم میں کولیسٹرول اور شوگر کا توازن برقرار رکھنے میں مدد دیتی ہے ۔ موسم سرما میں اس کا استعمال صحت کو قائم رکھنے میں معاون ہوتا ہے۔

جھینگوں کے فوائد

قدرت نے سمندری غذا کو انسان کے لئے بے پناہ فوائد کا حامل بنایا ہے اور اس کی بہترین مثال جھینگا ہے، جو مردانہ صحت کی حفاظت اور جگر کی بیماریوں کے خاتمے کے لئے مفید ترین نسخہ ثابت ہوا ہے۔

امریکا کی اسٹینفورڈ یونیورسٹی کی ایک تازہ تحقیق میں انسانی صحت کے لئے جھینگے کے حیران کن فوائد سامنے آئے ہیں۔ یونیورسٹی کے ہاپکنز میرین سینٹر کے سائنسدانوں نے تحقیق میں معلوم کیا ہے کہ جھینگے کا گوشت schistosomiasis نامی بیماری کے پھیلاؤ کو روک کر بانجھ پن، جگر کی خرابی، مثانے کے کینسراور متعدد دماغی بیماریوں کا راستہ روک دیتا ہے۔ تحقیق میں یہ اہم بات بھی سامنے آئی کہ جب schistosomiasis پر ادویات قابو پانے میں ناکام ہو جائیں تو جھینگوں کو اس بیماری کو روکنے کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے۔

سائنسی جریدے Proceedings of the National Academy of Sciences میں شائع ہونے والی اس تحقیق میں یہ تشویشناک انکشاف بھی کیا گیا ہے کہ دنیا بھر میں تقریباً 80کروڑ افراد schistosomiasis بیماری اور خواتین اس مرض کے باعث میں بانجھ پن جیسے مسائل کے خدشے سے دوچار ہیں۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ ان مسائل سے بچنے کا آسان حل تازہ پانی میں پائے جانے والے جھینگے کو روزمرہ غذا کا حصہ بنانا ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں