آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
اتوار 15؍شعبان المعظم 1440ھ 21؍اپریل 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سابق ممبر قومی اسمبلی علی رضا عابدی کے قتل کی تحقیقات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔

پولیس نے علی رضاعابدی کے قتل کے الزام میں گرفتار ملزمان کے اعترافی بیان کا چالان جاری کر دیا۔

چالان ميں 12 گواہ شامل کیے گئے ہیں جن میں سے 4 ملزمان گرفتار اور 4 مفرور بتائے گئے ہیں۔


مفرور ملزمان ميں بلال، حسنين، مصطفیٰ عرف کالی چرن اور فيضان شامل ہیں۔

پولیس کا دعویٰ ہے کہ ملزمان نے علی رضا عابدی کےقتل کا اعتراف کرلیا۔

پولیس کے مطابق علی رضاعابدی کے قتل کے لیے ملزمان کو 8 لاکھ روپے دیئے گئے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ گوليوں کے خول کی 2018 کے دوران لياقت آباد ميں قتل کی واردات سے مماثلت ہے۔

چالان میں کہا گیا ہے کہ علی رضا عابدی کے قتل کے لیےحسينی بلڈنگ کے پاس نامعلوم شخص نے رقم ادا کی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ سابق ایم این اے علی رضا عابدی کے قتل ميں استعمال ہونے والی موٹر سائیکل جلا دی گئی تھی۔

علی رضا عابدی کو 25 دسمبر کو ان کے گھر کے قريب قتل کر ديا گيا تھا، پوليس نے گرفتار ملزمان کے اعترافی بيانات کو بڑی کاميابی قرار ديا ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں

قومی خبریں سے مزید
خاص رپورٹ سے مزید
ویڈیو رپورٹس سے مزید