آپ آف لائن ہیں
اتوار18؍ذی الحج 1441ھ 9؍اگست 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

دماغ میں ریسٹ نامی پروٹین انسانی زندگی کا دورانیہ متعین کرتا ہے، سائنسدان

نیویارک (نیوز ڈیسک)سائنسدان نئی تحقیق میں زندگی کی طوالت سے متعلق اہم انکشافات سامنے لائے ہیں اور ان کا ماننا ہے کہ انسان کے اہم ترین عضو یعنی دماغ ہی اس کی لمبی اور چھوٹی عمر کا فیصلہ کرتا ہے۔

یہ تحقیق امریکی ریاست بوسٹن کے ہارورڈ میڈیکل اسکول میں وفات پاجانے والے انسانوں کے پوسٹ مارٹم کے دوران حاصل کردہ دماغوں کے ٹشوز پر کی گئی۔

تحقیق میں حیرت انگیز بات یہ سامنے آئی کہ جن لوگوں کی عمریں 60 سے لے کر 80 کے درمیان ہیں وہ ان سے بھی لمی عمر پانے والے انسانوں سے بہت مختلف ہیں۔

ہارورڈ میڈیکل اسکول کی اس تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ جن لوگوں کی زندگی 80 سے زائد تھی، ان کے دماغ میں ریسٹ (REST) نامی پروٹین کی مقدار بہت کم ہے۔ یہ پروٹین عمر رسیدہ لوگوں کے مقابلے میں کم عمر والے افراد میں دماغی سرگرمیوں کو تیز کرنے میں مدد دیتا ہے۔

اس کے ساتھ ساتھ یہ پروٹین الزائمر جیسی بیماری کے خلاف حفاظتی کام کرتا ہے، تاہم اس بات کی مکمل تصدیق نہیں کی جاسکتی کہ یہ انسانوں کو موت سے بچاتا ہے یا پھر زندگی کو بڑھا دیتا ہے۔یہاں یہ بات اخذ کی گئی کہ جو انسان کم سے کم دماغی سرگرمیوں میں شامل ہوتا ہے۔

صحت سے مزید
اہم خبریں سے مزید