آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
ہفتہ9؍ربیع الثانی1441ھ 7؍دسمبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز
پچھلی کئی دہائےوں سے پاکستان کے صوبوں بلوچستان، سندھ اور خےبرپختونخوا کے دور دراز علاقوں اور صوبہ پنجاب کے سرائےکی وسےب مےں۔”تخت لاہور“ کی اصطلاح اور اس کے خلاف مختلف قسم کے جذباتی نعرے سننے اور وال چاکنگ کی صورت مےں دےکھنے کو ملتے رہے ہےں۔ حقےقت چاہے کچھ بھی ہو لےکن ےہ بھی سچ ہے کہ اکثر اوقات چےزوں کے بارے مےں ”تصور عام“ اور ”پروپےگنڈا“ حقےقت سے زےادہ طاقتور محسوس ہوتا ہے۔ افسوسناک حقےقت ےہ بھی ہے کہ اس مملکت پاکستان مےں ہم سے اکثر لوگوں کو ان کا اپنا ذاتی، سےاسی، صوبائی، مسلکی ، لسانی اور برادری کا مفاد قومی مفاد سے زےادہ عزےز نظر آتا ہے۔ بے دلےل جذباتےت تو کوئی اس قوم سے سےکھے۔ان مسلکی، گروہی اور لسانی مفاد کے لئے ہم کٹنے مرنے پر بھی تےار۔ اگر کسی ملک مےں اےسا مسلسل کچھ عرصے تک ہوتا رہے تو ےقےن جانےئے اس ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچے کے لئے کوئی زےادہ وقت نہےں چاہئے ہوتا ہے۔ حال ہی مےں سرائےکی صوبہ کے قےام کے لئے کافی شوروغوغا دےکھنے مےں آےا ہے اور اس کے حق اور مخالفت مےں بھی دلےلوں کا اےک لمبا سلسلہ۔ سرائےکی صوبہ کے حق مےں بات کرنے والوں کے دلائل کا بنےادی نکتہ اس علاقہ کی پسماندگی اور سرائےکی زبان اور کلچر کا علےحدہ تشخص، تحفظ اور فروغ ہے۔
اگر سرائےکی علاقے کے تےن ڈوےژنز کے 11اضلاع پر

پچھلی اےک دہائی مےں خرچ ہونے والے ترقےاتی فنڈز کا صوبہ پنجاب کے باقی علاقوں پر خرچ ہونے والے فنڈز کا تقابلی جائزہ لےا جائے تو ےہ بات سامنے آتی ہے کہ سرائےکی بےلٹ پر اس کی آبادی اور رقبے کے لحاظ سے ترقےاتی فنڈز کا استعمال بہت کم ہوا ہے۔ پلڈاٹ تنظیم کی2010ءکی رپورٹ کے مطابق 2004ءسے 2013ءتک سرائےکی اضلاع جو کہ پنجاب کی کل آبادی کا تقرےباً تےس فےصد بنتے ہےں، پر پچھلے دس سالوں مےں ترقےاتی فنڈز کے استعمال کی اوسط پندرہ ےا زےادہ سے زےادہ بےس فےصد سے اوپر نہےں رہی۔ ےہ علاقہ چونکہ باقی پنجاب کی نسبت کم گنجان آباد ہے اس لئے رابطہ سڑکےں اور مواصلات کے دوسرے ذرائع بھی اس علاقے مےں بہت کم اور خستہ حالت مےں نظر آتے ہےں۔ ضلع ڈےرہ غازی خان اور راجن پور کے ٹرائےبل اےرےا مےں آج بھی سےکڑوں سال پہلے کی طرح ذرائع نقل و حرکت کے لئے کوئی خاص وسائل موجود نہےں اور کسی اےمرجنسی کی صور ت مےں وہاں کے لوگ اونٹوں پر سفر کر کے قرےبی شہری علاقے تک رسائی حاصل کرتے ہےںاور پےنے کے پانی کے لئے انسان اور جانور برسات کے دنوں مےں بھر جانے والے تالاب کو سارا سال اکٹھے استعمال مےں لاتے ہےں۔ ان ٹرائےبل علاقوں مےں کہےں کہےں کوئی پرائمری اسکول تو ضرور نظر آتا ہے مگر صرف عمارت کی حد تک۔ اساتذہ نہےں اور ےقےنا تعلےم بھی نہےں....صحت کی سہولتیں تو بالکل نہ ہونے کے برابر....کہ سانپ کے ڈسے ہوئے مرےض اور ڈیلیوری کےس مےں مرےضہ کو قرےبی مےدانی علاقے کے کسی دےہی مرکزصحت مےں منتقل کرنے کے لئے کئی گھنٹے درکار....نتےجہ وہی کہ اکثر مرےض راستے مےں ہی دم توڑ جاتے ہےں۔ مجموعی طور پر اگر سرائےکی علاقے مےں صحت اور تعلےم کی صورتحال کا جائزہ لےا جائے تو صورتحال کچھ زےادہ حوصلہ افزاءنظر نہےں آتی۔ پورے جنوبی پنجاب مےں سرکاری سطح پر صرف دو بڑے اسپتال ہےں جو کسی اےمرجنسی صورتحال مےں تمام قسم کی ضرورےات پورا کرنے کی صلاحےت رکھتے ہوں۔ اےک نشر اسپتال ملتان اور دوسرا بہال وکٹورےہ اسپتال بہاولپور۔ اعلیٰ تعلےم کے شعبے مےں بھی سرکاری سطح پر صرف دو ےونےورسٹےاں، بہاﺅالدےن ذکرےا ےونےورسٹی ملتان اور اسلامےہ ےونےورسٹی بہاولپور۔ مےڈےکل کی تعلےم کی صورتحال بھی اس سے کچھ مختلف نہےں ہے۔ اتنے وسےع رقبہ اور اتنی بڑی آبادی کے لئے صحت اور تعلےم کی ےہ سہولتیں شاےد بہت ناکافی ہےں۔اب سوال ےہ پےدا ہوتا ہے کہ اس پسماندگی کی تمام ذمہ داری مختلف ادوار مےں پنجاب کی صوبائی حکومتوں پر عائد ہوتی ہے ےا اس مےں کچھ اور عوامل کا بھی کردار ہے ؟اس مےں کوئی شک نہےں کہ صوبائی حکومت کی ےہ ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ صوبے کے تمام علاقوں کی ترقی کے لئے مناسب اقدام کرے اور زےادہ پسماندہ علاقوں پر اپنی توانائےاں بطور خاص مرکوز کرے۔ ساتھ ساتھ اگر قےام پاکستان سے لےکر آج تک دےکھا جائے تو کئی گورنرز، وزرائے اعلیٰ اور اسی طرح صدر اور وزےراعظم بھی اس علاقے سے منتخب ہوتے رہے مگر ےہ لوگ اپنے علاقے کی ترقی کے لئے کوئی خاطر خواہ اقدام نہےں کر سکے۔ اس کے برعکس جاگےردار، گدی نشےن اور قبائلی سردار الےکشن جےتنے کے بعد اسلام آباد ےا لاہور کے پوش علاقوں مےں منتقل ہو کر عےش کی زندگی گزارتے رہے اور اپنے بچوں کو اےچی سن ےا اس طرح کے دوسرے تعلےمی اداروں مےں تعلےم دلوا کر اپنے علاقے کے غرےب لوگوںکے لئے مستقبل کے”حاکم“ تےار کرتے رہے۔ ےہاں تک بھی سننے مےں آےا ہے کہ ان مےں سے کچھ جاگےردار ےا سردار عوامی نمائندوں کو اگر اپنے علاقے مےں کسی غرےب سے مجبوراً ہاتھ ملانا پڑجائے تو وہ بعد مےں جراثیم کش صابن سے ہاتھ دھوتے ہےں۔ ان عوامی نمائندوں مےں بہت سے اےسے بھی ہےں جن کے اپنے گاﺅں کے لئے سڑک اور وہاں کے غرےب لوگوں کے لئے پرائمری سے اوپر اسکول تک موجود نہےں۔ البتہ اےک حوصلہ افزاءبات ےہ ہے کہ اس علاقے کے عوام اب ہزار مسائل اور وسائل نہ ہونے کے باوجود اپنے پےٹ کاٹ کر بھی اپنے بچوں کو زےور تعلےم سے آراستہ کرنے کی کوشش کر رہے ہےں۔ ےہی اےک چےز ہے جس کو ےہاں کے تمن دار ، سردار اور گدی نشےن اپنے لئے اےک بہت بڑا خطرہ محسوس کر رہے ہےں۔ ان کو بخوبی اندازہ ہے کہ اگر ان لوگوں مےں تعلےم آ گئی تو ان کی سرداری، گدی نشےنی اور تمن داری خطرے مےں پڑ سکتی ہے۔
سرائےکی صوبہ کے قےام کی تحرےک کا اگر تارےخی جائزہ لےا جائے تو ےہ بات سامنے آتی ہے کہ ےہ تحرےک اگرچہ کافی سالوں سے کسی نہ کسی شکل مےں موجود رہی ہے مگر اس کی جڑےں کبھی بھی نچلی سطح پر عوام مےں نہےں رہےں۔ آج بھی سوائے چند علاقوں کے، ےہ تحرےک عوام مےں اس طرح مقبولےت حاصل نہےں کر سکی جس طرح صوبہ ہزارہ کی تحرےک۔آج اس تحرےک مےں سب سے زےادہ سرگرم اور ہراول دستہ ےہاں کے جاگےردار ، تمن دار اور گدی نشےن ہی ہےں۔ لگتا ہے کہ ساری زندگی اقتدار مےں رہ کر عوام کی خدمت مےں جو کمی رہ گئی ہے وہ نےا صوبہ بنا کر پوری کرنا چاہتے ہےں۔ ہاں البتہ ےہ سچ ہے کہ سرائےکی علاقے کے باسےوں مےں اےک احساس محرومی ضرور رہا ہے اور وہ ابھی بھی موجود ہے اور جس کا اظہار سرائےکی علاقے کے شعراءبھی ہر دور مےں کرتے رہے ہےں۔ نمونے کے طور پر سرائےکی کے اےک مزاحمتی شاعر کا اےک شعر
جڈاں ملک اِچ وَل دستور بنا
تہاڈا انڈرمےڑک اے سی ہا، ساڈا پی اےچ ڈی مزدور بنا
مگر اس پسماندگی کی ذمہ داری کس پر ڈالی جائے اس بارے مےں سرائےکی وسےب کا عام آدمی اےک تضاد کا شکار ضرور ہے۔ کچھ کے نزدےک اس کا ذمہ دار ” تخت لاہور“ اور زےادہ لوگوں کے نزدےک ہمارے اپنے چنے گئے ”فرعون نما“ عوامی نمائندے ہےں۔
ےہ بھی اےک دہرا معےار ہے کہ اےک طرف تو اچھے نظم و نسق کو بنےاد بنا کر صوبوں کی تقسےم کی بات اور دوسری طرف ضلعی سطح کا عوامی نظام ختم کر کے انگرےزوں کے زمانے کا کمشنری نظام لانے کی تےارےاں.... نتےجہ وہی عوامی نمائندے اور”نوکر شاہ“ کے بےچ اےک ”غےر مقدس“ جوڑ....اور اللہ حافظ عوام کا۔ عام آدمی کا سب سے زےادہ واسطہ تو اپنے ضلع کی حکومتی مشےنری سے پڑتا ہے لہٰذا سب سے زےادہ ضرورت اس امر کی ہے کہ ضلعی سطح پر اچھا نظم و نسق اور قانون کی حکمرانی کو ےقےنی بنانا چاہئے۔
کسی نے ٹھےک کہا کہ پاکستان کو نئے صوبوں سے کوئی خطرہ نہےں اگر کوئی خطرہ ہے تو وہ نئے صوبوں کی سےاست سے ہے۔ اگر نئے صوبوں کی ضرورت ہے تو ضرور بننے چاہئےں۔ ضرورت صرف اس چےز کی ہے کہ اس کے لئے خالص نےت، مناسب تےاری اور ہوم ورک ہونا چاہئے۔ دوسرا لسانےت کی بنےاد پر صوبوں کا قےام بھی شاےد مستقبل مےں پاکستان کی سا لمےت اور قومی ےکجہتی کے لئے فائدہ مند نہ ہو۔ اس سے مرکز گزےز قوتوں کو طاقت مل سکتی ہے اور لسانےت کی بنےاد پر مزےد صوبوں کے قےام کے مطالبے کی شکل مےں اےک نےا پنڈورا باکس بھی کھل سکتا ہے۔ ہونا تو ےہ چاہئے کہ نئے صوبوں کے لئے مناسب تےاری کے بعد اےک جنرل فارمولا تےار کرنا چاہئے اور جب اور جہاں اس فارمولے کے تحت نئے صوبے کا قےام ضروری ہو تو اس کو اےک وضع کردہ طرےقہ کار سے عملی شکل دےنی چاہئے۔
نظم و نسق اور گورننس کا کوئی بھی نظام شاےد مطلقاً اچھا ےا برا نہےں ہوتا اگر نظام کو چلانے کے لئے مخلص اور نےک نےت لوگ موجود ہوں تو نظام ضرور کامےاب ہوتا ہے۔ بے شک اللہ کے آخری نبیﷺ نے بجا فرماےا کہ اعمال کا دارومدار نےتوں پر ہے اور اگر نےت مےں کھوٹ ہو تو عمل مےں بھی لامحالہ کھوٹ اور نتےجہ....ناکامی اور رسوائی، اور نےت کا ےہ کھوٹ ےقےنا پاکستان اور پاکستان کے عوام کے لئے نقصان دہ ہو گا۔