آپ آف لائن ہیں
ہفتہ26؍شعبان المعظم 1442ھ 10؍اپریل 2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

میانمار میں فوج کے خلاف مظاہرہ کرنے پر 1700افراد گرفتار

نیویارک ( نیوز ڈیسک) اقوام متحدہ کے انسانی حقوق سربراہ نے میانمار کی سیکورٹی فورسز سے کہا ہے کہ وہ پُرامن مظاہرین کے خلاف قابل مذمت کریک ڈاؤن کا سلسلہ بند کرے۔ مشیل باشیلیٹ کی طرف سے جاری کردہ بیان میں انکشاف کیا گیا ہے کہ حالیہ مظاہروں کے دوران 1700 سے زائد افراد کو گرفتار کیا گیا، جن میں 29 صحافی بھی شامل ہیں۔ انہوں نے میانمر کی فوج سے مطالبہ کیا ہے کہ غیر قانونی طور پر گرفتار شدہ تمام افراد کو رہا کیا جائے۔ میانمار میں فوجی جنتا کے خلاف گزشتہ ایک ماہ سے جاری مظاہروں کے دوران سیکورٹی فورسز کی طرف سے 54 افراد مارے جا چکے ہیں۔ ادھر میانمار میں گزشتہ ماہ کی فوجی بغاوت کے بعد کی صورتحال پر بات چیت کے لیے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا آج جمعہ کے روز اجلاس منعقد کرنے کا منصوبہ ہے۔ سلامتی کونسل نے یہ اجلاس بند کمرے میں منعقد کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ میانمار میں یکم فروری کو فوج کے تختہ الٹنے کے بعد سے بڑے پیمانے پر مظاہرے ہو رہے ہیں۔ فوج مظاہرین کے خلاف پکڑ دھکڑ کے اقدامات سخت کر رہی ہے۔ اقوام متحدہ کی نمایندہ خصوصی برائے میانمر کرسٹین شرانر برگنر نے ’’بدھ‘‘ کو فوجی بغاوت کے بعد کا سب سے خونی دن قرار دیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ صرف اس ایک دن میں مظاہروں کے دوران 38 افراد ہلاک کیے گئے ۔ اس دوران پولیس نے مظاہرین پر دھاتی وربر کی گولیاں اور آنسو گیس کے شیل برسائے۔ انہوں نے کہا کہ صحافیوں کے خلاف تشدد اور مظاہرین کو گولی مارنے کی وڈیوز انتہائی تشویش ناک ہیں۔ میانمر کی عملی حکمران آنگ سان سو چی اور دیگر اعلیٰ سرکاری حکام کو فوج کی جانب سے حراست میں لیے جانے کے بعد سے یہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا دوسرا اجلاس ہو گا۔ گزشتہ اجلاس میں میانمار سے حلیف ملک چین کی مخالفت کے باعث سلامتی کونسل کے بیان میں فوجی بغاوت کی مذمت نہیں کی گئی تھی۔
یورپ سے سے مزید