Advertisement

دِل خون ہوا جاتا ہے یوں شدتِ غم سے

September 18, 2019
 

٭…محمد حفیظ الرحمٰن…٭

دِل خون ہوا جاتا ہے یوں شدتِ غم سے

ہو جوئے لہو جیسے رواں کوہِ الم سے

کشمیر کے زخموں پہ نمک ڈالنے والو

دِل جیتو گے تم کیسے بھلا ظلم و ستم سے

آزادی ہے کشمیر کا مقسوم بلا شک

قابض نہیں رہ سکتے ہو تم جاہ و حشم سے

پرچم وطنِ پاک کا ہے سبز ہلالی

کشمیرکو سجنا ہے اِسی پاک عَلم سے

وانی نہ تھا بس ایک ، کہ ہم سب ہی ہیں وانی

منزل کا پتہ لیں گے اسی نقشِ قدم سے

کشمیر کے زخموں کا مداوا بھی کریں گے

ہر زخم کا بدلہ بھی چکائیں گے ، قسم سے

ہیں آج اگر دور تو کچھ غم نہیں یارو

جلد آئے گا وہ دِن کہ وہ مل جائیں گے ہم سے

یارب یونہی بستا رہے دِل میں مرے کشمیر

لکھتا رہوں نغمے یونہی میں اپنے قلم سے


مکمل خبر پڑھیں