Advertisement

مرثیے تڑپتے ہیں

October 23, 2019
 

شامِ غم نا تمام کب تک ہے

جبر یوں بے لگام کب تک ہے

یہ جہان خراب کب تک ہے

ڈھونڈتے پھر رہے ہیں معنی سب

نعرے اُگتے ہیں،باس دیتے ہیں

ایسی لا یعنیت میں فرصت ہے

کیسے ہوتی تھی پرچموں کی بہار

کیسے زخموں پہ مہکتا تھا نشہ

ہونٹوں پہ مصلحت کے کانٹے ہیں

قفلِ مرگ اب ہے گلستاں کا نصیب

گلستاں کیا، یہ رنگِ گورستاں

روز اِک تازہ قبر بنتی ہے

مُردہ آوازیں ڈُوب جاتی ہیں

مرثیے بے بسی کی چادر میں

منہ چھپائے ہوئے تڑپتے ہیں

سارے قصّے تمام ہوتے ہیں

فلسطیں، گُم شُدہ فسانہ ہوا

ارضِ کشمیر اب نشانِ قضا

شامِ غم ناتمام کب تک ہے

نعرے اُگتے ہیں، باس دیتے ہیں

مرثیے بے کسی کی چادر میں

منہ چھپائے ہوئے تڑپتے ہیں


مکمل خبر پڑھیں