• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

سندھ پر مسلط حکومت کیوں سندھ مخالف ہے: فواد چوہدری


وفاقی وزیرِ اطلاعات و نشریات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ پورے ملک میں آٹا 1100 اور سندھ میں 1460 روپے میں مل رہا ہے، سندھ پر مسلط حکومت کیوں اتنی سندھ مخالف ہے، سندھ حکومت کی پالیسیوں کا نقصان سندھ کے لوگوں کو ہو رہا ہے۔

اسلام آباد میں وفاقی وزیرِ اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے وفاقی وزیرِ فوڈ سیکیورٹی سید فخر امام کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ سندھ کے سوا پورے ملک میں راشن پر رعایت اور ہیلتھ انشورنس کی سہولت میسر ہو گی، سندھ کے ایم پی ایز کو وزیرِ اعلیٰ سے سوال پوچھنا چاہیے کہ کس بات کا انتقام لے رہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ پچھلے سال کسانوں کو 400 ارب روپے کی اضافی آمدنی ہوئی، ہیلتھ انشورنس میں تمام خاندانوں کا 10 لاکھ روپے تک کا علاج مفت ہو گا، رواں سال ترقی کی شرح 5 فیصد سے زیادہ رہنے کی توقع ہے، کسانوں کو 1700 روپے میں یوریا کھاد فراہم کی جا رہی ہے۔

فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ 50 ہزار روپے سے کم آمدنی والوں کو راشن پر 30 فیصد رعایت ملے گی، ہم مہنگے منصوبے لگا کر عوام کو لوٹ نہیں رہے ہیں، حکومت کی ساکھ پر لوگوں کے اعتماد میں اضافہ ہوا ہے، ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کے سروے میں کہا گیا ہے کہ پہلی بار کسی سیاسی حکومت پر کرپشن کا کوئی شائبہ نہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ پاکستان میں ایسا وزیرِ اعظم ہے جس پر مخالف بھی یقین رکھتے ہیں، پاکستان کو طویل عرصے بعد ایسی حکومت ملی جس پر کرپشن کا کوئی الزام نہیں، 89 فیصد لوگوں نے کورونا کی وباء کے دوران حکومتی کارکردگی پر اعتماد کا اظہار کیا۔

وزیرِ اطلاعات نے کہا کہ بہت کم مثالیں ہیں کہ کورونا وائرس کی وباء کے بعد کوئی ملک 5 فیصد پر ترقی کر رہا ہو، ہماری معاشی گروتھ کے اعداد و شمار آئی ایم ایف بھی تسلیم کر رہا ہے، ہم 5 فیصد گروتھ ریٹ سے بھی زیادہ پر جائیں گے۔

انہوں نے بتایا کہ کسانوں کو گندم کی پیداوار میں 188 ارب روپے ملے، کپاس کی پیداوار میں 138 ارب روپے، چاول میں 46 ارب روپے ، مکئی میں 3 ارب روپے، گنے میں 96 ارب روپے کی اضافی آمدن ہوئی، ایک ٹرک کھاد بیرونِ ملک بھیجی جائے تو 70 سے 80 لاکھ روپے کا فائدہ ہو گا۔

فواد چوہدری کا مزید کہنا ہے کہ وزیرِ اعظم نے سب سے بڑے سوشل پروٹیکشن پروگرام کا اعلان کیا، خیبر پختون خوا اور پنجاب کے ہر شہری کو 10 لاکھ روپے تک علاج کی سہولت حاصل ہو گی، شناختی کارڈ ہی ہیلتھ کارڈ ہو گا، کسی بھی سرکاری اسپتال میں علاج مفت ہو گا، 50 ہزار روپے سے کم آمدن والے افراد کو آٹا، دال اور گھی پر 30 فیصد رعایت ملے گی۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ غریب لوگوں کو براہِ راست امداد کی فراہمی عمران خان کا وژن ہے، نون لیگ کی طرح مہنگے منصوبے لگا کر معیشت کا بیڑہ غرق نہیں کر رہے، اپوزیشن بھان متی کا کنبہ ہے، نفرت پر مبنی پالیسیاں نہیں چلتیں، اپوزیشن ریت کی دیوار ہے، یہ کھڑے ہوتے ہیں اور گر جاتے ہیں، اپوزیشن تھکے ہوئے پہلوانوں کا ٹولہ ہے، 23 مارچ تک پی ڈی ایم رہ گئی تو لانگ مارچ کر لے گی۔

قومی خبریں سے مزید