آپ آف لائن ہیں
منگل7؍شعبان المعظم 1439ھ24؍اپریل 2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
x
Todays Print

راولپنڈی (ایجنسیاں ‘جنگ نیوز)بری فوج کے سربراہ جنرل قمرجاوید باجوہ نے امریکی عسکری حکام پر واضح کیا ہے کہ واشنگٹن کی جانب سےالزامات دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیوں کو نظر انداز کرنے کے مترادف ہیں‘پاکستان امریکا کو کبھی بھی امداد کی بحالی کے لیے درخواست نہیں کرے گا‘دہشت گردی کیخلاف کارروائیاں جاری رہیں گی‘دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستانیوں کی قربانیوں کو سراہا جائے ‘پاکستانی قوم سمجھتی ہے کہ امریکا کی جانب سے اسے دھوکادیاگیاہے‘افغان شہری مہاجر کیمپوں کو بطور پناگاہ استعمال کرتے ہیں اس لئے مہاجرین کی جلد واپسی کا عمل شروع کیاجائے۔پاک فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری پریس ریلیز کے مطابق امریکی سینٹرل کمانڈ (سینٹ کام) کے سربراہ جنرل جوزف ووٹل اور ایک امریکی سینیٹر نے پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ سے ٹیلی فونک رابطہ کیا اور امریکی صدر کے بیان سے قبل اور بعد کی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔جنرل جوزف ووٹل نے کہا ہے کہ امریکا دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیوں کو سراہتا ہے ‘دونوں ممالک کے درمیان موجودہ تناؤکی صورتحال عارضی ہے ‘امیدہےکہ اسلام آباد اور واشنگٹن کے درمیان کشیدگی کو جلد ختم کر لیا جائے گا‘امریکا پاکستان میں

x
Advertisement

یکطرفہ کارروائی کا ارادہ نہیں رکھتا‘واشنگٹن چاہتاہے کہ سرحد پارحملوں کیلئے پاکستانی سرزمین استعمال کرنے والے افغان عسکریت پسندوں کے خلاف کارروائی کی جائے‘امریکی جنرل نے جنرل قمر جاوید باجوہ کو امریکی امداد اور کولیشن سپورٹ فنڈ سے آگاہ کیا اور مزید کہا کہ امریکا، پاکستان میں موجودان شرپسند عناصر کے خلاف کارروائی چاہتا ہے جو پاکستان کی سرزمین سے افغانستان میں امریکی اور افغان افواج کے خلاف منظم کارروائی کی منصوبہ بندی کرتے ہیں۔آرمی چیف نے امریکی حکام کو واضح کیا کہ پاکستان نے آپریشن رد الفساد کے ذریعے دہشت گردوں کے تمام ٹھکانے تباہ کر دیے ہیں۔ میجر جنرل آصف غفور کی جانب سے جاری کردہ پریس ریلیز کے مطابق امریکی سینیٹر کا نام ظاہر نہیں کیا گیا۔آئی ایس پی آر کے مطابق امریکی جنرل نے کہا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ پاکستان اور امریکا کے درمیان حالیہ کشیدہ صورتحال عارضی ہو۔انہوں نے آرمی چیف کو یقین دلایا کہ امریکا، پاکستان کی حدود میں کسی بھی طرح کی یک طرفہ کارروائی نہیں کر رہا بلکہ وہ پاکستان سے اس کی سرزمین پر موجود عسکریت پسند و ں کے خلاف کارروائی چاہتا ہے۔آرمی چیف نے جنرل جوزف ووٹل پر واضح کیا کہ پاکستان اور امریکا کے درمیان دہائیوں پرانے دوستانہ روابط کے باوجود امریکی صدر کی جانب سے ایسے بیان کی وجہ سے پاکستانی قوم محسوس کیا کہ اس کے ساتھ دھوکا ہوا جس کے بعد قوم کی جانب سے متفقہ ردِ عمل سامنے آیا۔جنرل قمر جاوید باجوہ نے باور کرایا کہ پاکستان امریکا کی مالی امداد کے بغیر بھی اپنے قومی مفاد میں جان فشانی کے ساتھ دہشت گردی کے خلاف جنگ کو جاری رکھنے کے لیے پُر عزم ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کو خطے میں دہشت گردی کے خلاف جنگ میں شدید نقصان ہوا۔ان کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان امریکی خدشات سے مکمل طور پر واقف ہے، پاکستان پہلے ہی اپنی سرزمین پر دہشت گردوں کے خلاف مؤثر کارروائی کر چکا ہے تاہم اس وقت افغان باشندے مہاجر کیمپوں کو اپنی پناہ گاہوں کے طور پر استعمال کرتے ہیں اسی لیے پاکستان چاہتا ہے کہ جلد از جلد افغان مہاجرین کی واپسی کا عمل شروع کیا جائے۔آرمی چیف نے امریکی حکام کو بتایا کہ پاکستان نے پاک افغان سرحد کو محفوظ بنانے کے لیے یکطرفہ طور پر کام کیا ہے تاہم اگر افغانستان واقعی ایسا محسوس کرتا ہے کہ شرپسند عناصر پاکستان سے آتے ہیں تو کابل کو بارڈر مینجمنٹ کو ترجیحی بنیادوں پر رکھنا ہوگا۔جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ خطے کا امن افغانستان کے امن سے مشروط ہے اور پاکستان قربانی کا بکرا بنائے جانے کی کوشش کے باوجود امن کی بحالی کے لیے اٹھائے جانے والے تمام اقدامات کی حمایت کرے گا۔جنرل جوزف ووٹل نے پاکستان کی جانب سے افغان پناہ گزینوں کے لیے اٹھائے گئے اقد اما ت کی بھی تعریف کی۔

​​
Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں