آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر20؍ شوال المکرم 1440 ھ 24؍جون 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

کہتے ہیں کہ موسم سرما میں باقاعدگی سے ہاتھ دھونے کا معمول موسمی وائرس سے دور رکھنے میں مدد دیتا ہے۔ تاہم، اگر آپ موسم سرما کے دوران موسمی وائرس مثلاًفلو اور نزلہ زکام سے محفوظ رہنا چاہتے ہیں تو آپ کو اپنی خوراک میں ان غذاؤں کو شامل کرنے کی ضرورت ہے جنھیں ماہرین’’ونٹر سپر فوڈز‘‘ قرار دیتے ہیں۔ سپر فوڈ کی اصطلاح ان غذاؤں کے لیے استعمال کی جاتی ہے جن کی غذائی خصوصیات عام غذاؤں کی نسبت زیادہ ہوتی ہے۔ ماہرین وٹامن سی، اینٹی آکسیڈنٹس اور اَن سیچوریٹڈ فیٹس سے بھری غذاؤں کو ونٹر فوڈ کے طور پر منتخب کرتے ہیںکیونکہ یہ غذائیں مدافعتی نظام مضبوط کرنے، توانائی بڑھانے اور مختلف انفیکشن کے خلاف مزاحمت کاکام سرانجام دیتی ہیں۔ آئیے جانتےہیں وہ کون سی غذائیں ہیں، جنہیں طبی ماہرین موسم سرما کے دوران اپنی خوراک کا حصہ بنانے پر زور دیتے ہیں۔

جڑ والی سبزیاں

ماہرین جڑ والی سبزیوں کو موسم سرما کی خوراک میں شامل کرنے کامشورہ دیتے ہیں کیونکہ یہ سبزیاں اینٹی آکسیڈنٹس اور معدنیات سے مالا مال ہوتی ہیں۔ کیلوریز میں کم اور غذائیت میں زیادہ ہونے کی وجہ سے ماہرین ان سبزیو ں کو غذائیت کا پاور ہاؤس قرار دیتے ہیں۔ موسم سرما میں ان سبزیوں کی پیداوار بھی دیگر موسموں کی نسبت زیادہ ہوتی ہے۔ ماہرین موسم سرما میں فائدہ مند جڑ والی سبزیوں میں چقندر، گاجر اور شلجم کے زیادہ استعمال کا مشورہ دیتے ہیں۔ گاجریں بیٹا کیروٹین جبکہ ابلے ہوئے شلجم وٹامن اے اور سی کا اہم ذریعہ سمجھے جاتے ہیں ۔

سوپ

موسم سرما میں ہر گھر سوپ کی خوشبو سے مہک رہا ہوتا ہے۔ ماہرین بھی سوپ کو سردی کے موسم کے لیے ایک بہترین غذا قرار دیتے ہیں۔ سوپ مختلف طریقوں مثلا ًسبزیوں، دالوں، یخنی، چکن، کارن فلو ر اور کریم سے تیار کیا جاتا ہے۔ زیادہ تر افراد سوپ کی تیاری کے لیے دیسی مرغی کا استعمال کرتے ہیں۔ دیسی مرغی انسانی جسم کے لیے کئی طرح سے فائدہ مند قرار دی جاتی ہےمثلاًاس کا استعمال ٹوکسن کی کمی میں مددگار ثابت ہوتا ہے،یہ وزن میں کمی لانے اور ذہنی دبا ؤ کم کرنے کی صلاحیت سے مالا مال ہوتی ہے۔ برطانوی یونیورسٹی میں کی گئی تحقیق کے نتائج کے مطابق سوپ کا استعمال نظام تنفس کے انفیکشن کی روک تھام میں مدد دیتا ہے۔

انڈے

انڈے کھانے کا کوئی خاص موسم نہیں ہوتا لیکن سردیوں میں انڈےخاص طور پر دیسی انڈوں کا استعمال بے حد مفید ہوتا ہے۔چونکہ دیسی انڈوں کی افزائش عام انڈوں کے مقابلے کھلی فضا میں کی جاتی ہے یہی وجہ ہے کہ یہ انڈے کیمیکل اور بیکٹریا سے پاک ہوتے ہیں۔ ان میں موجود پروٹین، اینٹی آکسیڈنٹ، امائنوایسڈ اور آئرن کی مقدار جسم کے لیے بے حد مفید ثابت ہوتی ہے۔ ماہرین ایک صحت مند انسان کے لیے روزانہ دو انڈے کھانے کامشورہ دیتے ہیں، ان کے مطابق دو انڈے12گرام پروٹین کی مقدار پر مشتمل ہوتے ہیں ۔

بروکولی اور گوبھی

ماہرین بروکولی اور گوبھی کو بھی ان غذاؤں میں شمار کرتے ہیں، جن کے استعمال کے ذریعے مختلف اقسام کے انفیکشن سے لڑنے میں مدد حاصل ہوسکتی ہے۔ بروکولی اور گوبھی میں وٹامن سی کی وافر مقدار شامل ہوتی ہے۔ وٹامن سی کو مدافعتی نظام کی مضبوطی سے منسلک کیا جاتا ہے، مثال کے طور پر جس انسان کا مدافعتی نظام جتنا مضبوط ہوگا، بیماریاں اس پر اتنا ہی کم حملہ آور ہوں گی۔ اگر آپ یہ سبزیاں تازہ حاصل نہیں کرپاتے تو فریز کی ہوئی سبزیاں بھی اس موسم میں استعمال کی جاسکتی ہیں ۔

جو کا دلیا

ناشتے میں جو کا استعمال بے حد فائدہ مند ہوتا ہے۔ موسم سرما کے دوران ناشتے میں کھایا گیا جو کادلیا ضروری غذائیت فراہم کرنے کا اہم ذریعہ ثابت ہوتا ہے۔ برطانوی پروفیسر کے مطابق کڑکتی سردی کی صبح ناشتے میں جو کے دلیے سے زیادہ فائدہ مند کوئی اور چیز نہیں۔ اس میں موجود زنک مدافعتی نظام کی بہتری جبکہ فائبر کی موجودگی دل کی صحت کے لیےنہایت موزوں ہوتی ہے۔ دوسری جانب ناشتے میں جو کا استعمال کولیسٹرول کم کرنے اور مدافعتی نظام مضبوط کرنے میں بھی مفید ثابت ہوتا ہے۔ یہ بجٹ پر بھی زیادہ بھاری محسوس نہیں ہوتا،اس کی زیادہ غذائی خصوصیات کے سبب اس کو روزانہ اپنے ناشتے کا حصہ بنالیں ۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں