آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
بدھ3؍ جمادی الثانی 1441ھ 29؍ جنوری 2020ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

وزیر اعلیٰ پنجاب سے اسپیکر پنجاب اسمبلی کی ملاقات ، لاہور واقعے کی مذمت

وزیر اعلیٰ پنجاب سے اسپیکر پنجاب اسمبلی کی ملاقات ، لاہور واقعے کی مذمت


وزیراعلیٰ پنجاب سردارعثمان بزدار سے اسپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویز الہٰی نے ملاقات کی ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب اور اسپیکر پنجاب اسمبلی نے پی آئی سی میں ہنگامہ آرائی کے واقعے کی شدید مذمت کی۔

دونوں رہنماؤں نے ڈاکٹروں، پیرامیڈیکل اسٹاف، مریضوں اور ان کے لواحقین کے ساتھ مکمل یکجہتی کا اظہار کیا۔

وکلا کی ہنگامہ آرائی

واضح رہے کہ گزشتہ روز لاہور میں سیکڑوں وکلاء نے امراض قلب کے اسپتال پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی پرحملہ کیا اور بڑی تعداد میں مشتعل وکلا آپریشن تھیٹر، آئی سی یو اور وارڈ میں گھس گئے تھے۔

وکلا کی جانب سے اسپتال کی قیمتی مشینیں اور دیگر آلات توڑ دیئے گئے، عملے کو تشدد کا نشانہ بنایا اور مریضوں کے آکسیجن ماسک اتار دیئے۔

اسپتال میں ہنگامے اور توڑ پھوڑ کے دوران طبی امداد نہ ملنے سے 4 مریض جاں بحق ہوگئے تھے۔

وکلا نے ہنگاموں کے دوران پولیس موبائل، ڈاکٹرز اور مریضوں کی گاڑیاں بھی جلا دی تھیں، وکلا نے وزیر اطلاعات پنجاب فیاض الحسن چوہان پر بھی تشدد کیا، وکلا کو منتشر کرنے کیلئے پولیس نے لاٹھی چارج اور آنسو گیس کی شیلنگ کی، ہنگامے کے دوران پتھراؤ، شیلنگ اور لاٹھی چارج سے متعدد ڈاکٹرز، شہری، لواحقین اور وکلا زخمی ہوگئے۔

ہنگامہ آرائی کی وجہ کیا تھی؟

چند روز قبل پی آئی سی میں وکیلوں نے قطار سے ہٹ کر دوائی مانگی تھی، جس کے بعد اسپتال کے عملے اور ڈاکٹرز سے ان کا جھگڑا ہوا تھا۔

پی آئی سی کے آؤٹ ڈور میں تقریباً 15 روز قبل کچھ وکلا آئے اور پہلے دوا لینے کے لیے عملے کو دھمکایا، جس پر ڈاکٹروں، پیرامیڈیکل اسٹاف اور وکلا میں لڑائی شروع ہوگئی۔

جھگڑے کے بعد وکیلوں نے ڈاکٹروں کیخلاف ایف آئی آر کٹوائی اور بعد میں اس میں دہشت گردی کی دفعات شامل کروائیں۔

ڈاکٹروں نے منگل کو واقعے پر معافی بھی مانگی اور مطالبہ کیا کہ معاملے کے حل کے لیے مشترکہ کمیٹی بنائی جائے اور اسے سفید اور کالے کوٹ کا جھگڑا نہ بنایا جائے۔

ویڈیو وائرل

گزشتہ روز ڈاکٹرز کی دوسری ویڈیو وائرل ہوئی، جس میں ڈاکٹروں نے وکلا کا مذاق اڑایا، یہ ویڈیو وائرل ہونے پر وکیلوں کو غصہ آگیا۔

وکیلوں نے سائبر کرائم سیل میں شکایت کرنے کے بجائے اسپتال پر ہی دھاوا بول دیا،ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ وکلا نے دو روز قبل وائرل ہونے والی ویڈیو کو حملے کا جواز بنایا۔

ان کے وحشیانہ حملے کی ایک وجہ اگلے ماہ ہونے والے لاہور بار کے الیکشن بھی ہیں۔

قومی خبریں سے مزید