آپ آف لائن ہیں
جمعرات6؍ صفر المظفّر 1442ھ24؍ستمبر2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

کوئی پیلا کوئی اناری

خوشبو اس کی پیاری پیاری

سارے باغ پہ راج ہے اس کا

اس کی دھوم ہے کیاری کیاری

کانٹوں میں رہتا ہے پھر بھی

اس کو چاہے دنیا ساری

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

راتوں کو دکھ سہتی ہوں میں

دن میں غافل رہتی ہوں میں

روشن مجھ سے ڈیرا ڈیرا

دیکھ کے مجھ کو بھاگے اندھیرا

محفل میں جل جاتی ہوں میں

شب بھر میں ڈھل جاتی ہوں میں

بھیگ رہا ہے دامن میرا

جلنے لگا ہے تن من میرا

مجھ سے پتنگے ڈرتے ہیں

پھر بھی وہ مجھ پر مرتے ہیں

پاس وہ میرے جب آتے ہیں

موت کا لقمہ بن جاتے ہیں

عادلؔ میرا نام بتاؤ

علم کی شمعیں ہر سو جلاؤ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کالا چہرہ منہ میں آگ

چلنے میں گویا ہے ناگ

ٹھنڈی آہیں بھرتی جائے

گاتی جائے ایک ہی راگ

آندھی ہو طوفان یا رات

بڑھتی جائے بھاگم بھاگ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بہت میٹھی ہوں میں بہت خوب ہوں میں

ہر اک بچے بچی کو مرغوب ہوں میں

سفیدی مری دودھ سے بھی زیادہ

ہے اوڑھا ہوا برف جیسا لبادہ

ملائم ہوں کھوئے کی مانند بچو

ذرا مجھ کو منہ سے لگا کر تو دیکھو

کئی رنگوں میں اور کئی خوشبوؤں میں

میں ملتی ہوں ہر طرح کی محفلوں میں

ذرا مجھ کو پہچان کر تو بتانا

میں کیا ہوں کہاں پر ہے میرا ٹھکانا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈبکی کھا کر آئی نکل

دیکھ کے نیت جائے پھسل

دیکھنے میں تو پھول نہ پھل

کہنے کو اک پھول اک پھل


جوابات:1۔گلاب 2۔موم بتی 3۔ ریل گاڑی 4۔گلاب جامن