آپ آف لائن ہیں
بدھ23؍ذیقعد 1441ھ 15؍ جولائی 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

فواد چوہدری نے لاپروائی و غیر ذمے داری کا ثبوت دیا، فیاض چوہان


پنجاب کے وزیرِ اطلاعات فیاض الحسن چوہان کہتے ہیں کہ حسب سابق فواد چوہدری نے تھوڑی سی لاپروائی اور غیر ذمے داری کا ثبوت دیا ہے۔

ایک بیان میں وزیرِ اطلاعات پنجاب فیاض چوہان نے وفاقی وزیرِ سائنس و ٹیکنالوجی کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ فواد چوہدری میڈیا پر خبر چلائے بغیر وزیرِ اعظم عمران خان سے ملاقات اور مطالبہ کرسکتے تھے، نواز شریف کے ٹیسٹ پنجاب حکومت نے نہیں کرائے، ٹیسٹ ان کے اپنے ہوتے تھے۔

فیاض چوہان نے کہا کہ میڈیکل بورڈ میں پنجاب حکومت اور شوکت خانم اسپتال کے ڈاکٹرز بھی تھے جو ان رپورٹس پر رائے دیتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کے ٹیسٹ ان کے اپنے چینل، اینگل اور لیبارٹری سے ہوتے تھے، سابق وزیرِ اعظم کے ٹیسٹ پنجاب کی سرکاری لیبارٹری سے نہیں ہوئے تھے۔

فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ فواد چوہدری سے پوچھیں کہ میڈیا میں ڈھول بجا کر یہ معاملہ کھڑا کیا، ان کامقصد کیا تھا؟ وزیرِ سائنس و ٹیکنالوجی سے پوچھیں یہ نون لیگ کو شرمندہ کرنا چاہتے تھے یا مقصد کچھ اور تھا؟

انہوں نے کہا کہ نوازِ شریف کو باہر جانے کی اجازت پنجاب حکومت نے نہیں عدالتوں نے دی، ایک عدالت نے نواز شریف کی ضمانت لی، جبکہ دوسری عدالتِ عالیہ نے ان رپورٹس پر باہر جانے کی اجازت دی۔

وزیرِ اطلاعات پنجاب نے مزید کہا کہ پنجاب حکومت کا اوّل اور آخر فیصلہ نہیں، اس میں عدالتیں بھی ہیں، ہم تو بعد میں ہیں پہلے تو یہ عدالت کے مجرم ہیں۔

یہ بھی پڑھیئے: نواز شریف سے سودے بازی نہیں ہو رہی، فواد چوہدری

فیاض الحسن چوہان کا یہ بھی کہنا ہے کہ نوازِ شریف پوری ڈھٹائی کے ساتھ دندانتے پھر رہے ہیں، صحت مند ہیں، برطانوی لیب کی رپورٹ پیش نہیں کر رہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز وزیرِ اعظم عمران خان کو وفاقی وزیرِ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے خط لکھا ہے جس میں سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کے پاکستان میں ہونے والے ٹیسٹوں کے بارے میں تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

وفاقی وزیر برائے سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے خط لکھ کر وزیرِ اعظم سے مطالبہ کیا ہے کہ سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کے پاکستان میں کیے گئے ٹیسٹس کی رپورٹس جعلی ہیں، اس کی تحقیقات کی جائیں ۔

انہوں نے کہا ہے کہ برطانیہ میں سامنے آنے والی تصاویر میں سابق وزیرِ اعظم کی حالت اچھی نظر آرہی ہے۔

قومی خبریں سے مزید