آپ آف لائن ہیں
جمعرات 15؍ ذی الحج 1441ھ6؍اگست2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

بالی ووڈ اسٹار عرفان خان کی بیوہ کی جانب سے چند یادگار تصاویر شیئر

اس سال 29 اپریل کو انتقال کرجانے والے والے لیجنڈری بالی ووڈ اسٹار عرفان خان کی بیوہ سوتاپا سکدر نے سوشل میڈیا پر مرحوم عرفان خان کی ایسی تصاویر شیئر کی ہیں جو کہ اس سے قبل دیکھی نہیں گئی تھیں۔

جمعہ کو سوتاپا سکدر نے اپنے انسٹا گرام ہینڈل پر اپنے مرحوم شوہر کی یادوں کو شیئر کیا ہے، اس انسٹا پوسٹ میں چند وہ تصاویر ہیں جو کہ ان کے ایک خوبصورت دورے کے موقع پر لی گئی تھیں۔ تصویر میں وہ عرفان خان اور اپنے بیٹے بابیل خان کے ساتھ نظر آرہی ہیں۔


حال ہی میں عرفان خان کے بیٹے بابیل نے دل کوگرما دینے والی ایک پوسٹ اپنے انسٹاگرام پر شیئر کی تھی، جس میں انہوں نے اپنے والد کی جانب سے انہیں سینما کے حوالے سے آگہی فراہم کرنے پر تحریر کیا تھا۔ اس میں ایک اقتباس میں بابیل کچھ اس طرح تحریر کرتے ہیں۔

View this post on Instagram

You know one of the most important things my father taught me as a student of cinema? Before I went to film school, he warned me that I’ll have to prove my self as Bollywood is seldom respected in world cinema and at these moments I must inform about the indian cinema that’s beyond our controlled Bollywood. Unfortunately, it did happen. Bollywood was not respected, no awareness of 60’s - 90’s Indian cinema or credibility of opinion. There was literally one single lecture in the world cinema segment about indian cinema called ‘Bollywood and Beyond’, that too gone through in a class full of chuckles. it was tough to even get a sensible conversation about the real Indian cinema of Satyajit Ray and K.Asif going. You know why that is? Because we, as the Indian audience, refused to evolve. My father gave his life trying to elevate the art of acting in the adverse conditions of noughties Bollywood and alas, for almost all of his journey, was defeated in the box office by hunks with six pack abs delivering theatrical one-liners and defying the laws of physics and reality, photoshopped item songs, just blatant sexism and same-old conventional representations of patriarchy (and you must understand, to be defeated at the box office means that majority of the investment in Bollywood would be going to the winners, engulfing us in a vicious circle). Because we as an audience wanted that, we enjoyed it, all we sought was entertainment and safety of thought, so afraid to have our delicate illusion of reality shattered, so unaccepting of any shift in perception. All effort to explore the potential of cinema and its implications on humanity and existentialism was at best kept by the sidelines. Now there is a change, a new fragrance in the wind. A new youth, searching for a new meaning. We must stand our ground, not let this thirst for a deeper meaning be repressed again. A strange feeling beset when Kalki was trolled for looking like a boy when she cut her hair short, that is pure abolishment of potential. (Although I resent that Sushant’s demise has now become a fluster of political debates, but if a positive change is manifesting, in the way of the Taoist, we embrace it.)

A post shared by Babil Khan (@babil.i.k) on


آپ کو پتہ ہے کہ میرے والد نے مجھے سینما کے بارے میں بطور ایک طالب علم  سب سے اہم بات جو بتائی تھی، وہ میرے فلم اسکول جانے سے بھی پہلے کی بات ہے۔

والد نے مجھے خبردار کیا تھا کہ مجھے خود کو ثابت کرنا ہوگا، کیونکہ ورلڈ سینما میں بالی ووڈ میں عزت کم ہی ملتی ہے، اور ان لمحات میں مجھے انڈین سینما کے بارے میں بتانا ہوگا کہ بالی ووڈ ہمارے کنٹرول سے باہر ہے، اور بدقسمتی سے حقیقت میں ایسا ہی ہے۔

بالی ووڈ میں احترام نہیں ہے، 60 اور 90 کے عشرے کے انڈین سیمنا یا کسی رائے کی ساکھ کا مجھے پتہ نہیں۔

انٹرٹینمنٹ سے مزید