آپ آف لائن ہیں
منگل20؍ذی الحج 1441ھ 11؍اگست 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

ویسٹ انڈیز کیخلاف شکست کے بعد جوفرا آرچر تنقید کی زد میں

ویسٹ انڈیز کے خلاف ساؤتھمپٹن ٹیسٹ میں شکست کے بعد فاسٹ بولر جوفرا آرچر تنقید کی زد میں آگئے۔

ماہرین کی رائے میں آرچر نے اتنی تیز بولنگ نہیں کی جس کے لیے وہ جانے جاتے ہیں، لیکن سابق انگلش کپتان مائیکل وان کا کہنا ہے کہ آرچر بہترین بولر ہیں اور وہ کپتان ہوں تو آرچر کو کبھی ٹیم سے ڈراپ نہ کریں۔

ویسٹ انڈیز نے سیریز کے پہلے ٹیسٹ میں انگلینڈ کو چار وکٹ سے ہرادیا۔

آرچر پہلی اننگز میں کوئی وکٹ نہ لے سکے لیکن دوسری اننگز میں انہوں نے 45 رنز دیکر تین کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا، مگر ان کا یہ اسپیل ٹیم کو فتح نہ دلا سکا۔

یہ بھی پڑھیے: ویسٹ انڈیز نے انگلینڈ کو 4 وکٹوں سے شکست دیدی

ویسٹ انڈیز کے سابق فاسٹ بولر ٹینو بیسٹ نے آرچر پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ میچ میں آرچر نے اس اسپیڈ سے بولنگ نہیں کی جس کے لیے وہ جانے جاتے ہیں، لیکن سابق انگلش کپتان مائیکل وان آرچر کے دفاع میں سامنے آئے ان کا کہنا تھا کہ کسی بھی بولر کے لیے ہر گیند 90 میل فی گھنٹہ سے کرنا ناممکن بات ہے۔

انہوں نے کہا کہ بریٹ لی شعیب اختر بے پناہ صلاحیتوں کے مالک تھے، دونوں کے پاس اسپیڈ کے ساتھ ورائٹی تھی، لیکن آرچر ابھی نوجوان ہیں انہیں امید ہے کہ عمر کے ساتھ ساتھ وہ تجربہ بھی حاصل کریں گے۔

کھیلوں کی خبریں سے مزید