آپ آف لائن ہیں
منگل20؍ذی الحج 1441ھ 11؍اگست 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

میر شکیل الرحمٰن کی گرفتاری کےخلاف ملک کے مختلف شہروں میں احتجاج


پاکستان کے سب سے بڑے میڈیا گروپ جنگ اور جیو کے ایڈیٹر انچیف میر شکیل الرحمٰن کی گرفتاری کے خلاف ملک بھر میں احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔

کراچی میں جنگ ہیڈ آفس کے باہر ایڈیٹر انچیف میر شکیل الرحمٰن کی رہائی کے لیے احتجاج کیا گیا۔

مظاہرے میں مسلم لیگ (ن) کے رہنما اقبال خاکسار، جنرل سکریٹری ایپنک شکیل یامین کانگا، دی نیوز ایمپلائز یونین، سی بی اے جنرل سیکریٹری دارا ظفر، جاوید پریس کے رانا محمد یوسف، ایڈیٹر ڈیلی ٹیلیگراف کراچی محمد افضل وارثی اور کراچی پریس کلب کے سابق جنرل سیکرٹری عامر لطیف نے بھی شرکت کی۔

شرکاء نے خطاب کرتے ہوئے میر شکیل الرحمٰن کی رہائی کا مطالبہ کیا۔

لاہور

لاہور میں ڈیوس روڈ پر گزشتہ کئی ہفتے سے احتجاجی کیمپ لگایا گیا ہے۔

احتجاجی کیمپ میں شریک سینئر صحافیوں کا کہنا تھا کہ میر شکیل الرحمٰن کی گرفتاری غیرقانونی ہے، انہیں فوری رہا کیا جائے۔

کوئٹہ

کوئٹہ میں جنگ بلڈنگ کے سامنے ہونے والے مظاہرے میں شریک صحافیوں نے میر شکیل الرحمٰن کی رہائی کا مطالبہ کیا۔

پشاور

پشاور میں جنگ، دی نیوز اور جیو کے دفاتر کے سامنے احتجاج کیا گیا۔

مظاہرین کا کہنا تھا کہ میر شکیل الرحمٰن کو غیر قانونی طور پر قید رکھا گیا ہے۔

ملتان

ملتان میں جنگ جیو کے ملازمین اور سینئر صحافیوں نے میر شکیل الرحمٰن کی غیر قانونی گرفتاری کے خلاف جنگ جیو آفس کے باہر مظاہرہ کیا۔

جھنگ

جھنگ ڈویژن بناؤ تحریک کی جانب سے پریس کلب میں احتجاج کیا اور ریلی نکالی گئی۔

اس موقع پر مرکزی سیکریٹری انفارمیشن جھنگ ڈویژن بناؤ تحریک رضا کربلائی نے کہا کہ میر شکیل الرحمٰن کی گرفتاری آزادی صحافت پر حملہ ہے۔

بہاولپور

بہاولپور میں صحافیوں نے پریس کلب کے سامنے احتجاج کیا اور ریلی بھی نکالی۔

نوابشاہ

نواب شاہ میں تاجروں نے کپڑا مارکیٹ روڈ پر میر شکیل الرحمٰن کی گرفتاری کے خلاف مظاہرہ کیا گیا۔

قومی خبریں سے مزید