آپ آف لائن ہیں
منگل11؍صفر المظفّر 1442ھ 29؍ستمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

عدنان صدیقی اپنے بچپن کو یاد کرنے لگے

عالمی شہرت یافتہ اداکار عدنان صدیقی کا کہنا ہے کہ اُن کے والد کہتے تھے کہ جہاں انسان کا بچپن گزرا ہو وہ اس جگہ کو کبھی بھول نہیں سکتا۔

فوٹو اور ویڈیو شیئرنگ ایپ انسٹاگرام پر اپنے بچپن کی یادگار تصویریں شیئر کرتے ہوئے ساتھ ہی اُن کی تفصیلات بھی بتائیں۔

اداکار کا کہنا تھا کہ ’اس البم کا میرے ساتھ ہونا گویا بچپن کا میری زندگی میں لوٹ آنے کے مترادف ہے، اس البم کو دیکھتے ہوئے بہت سی پرانی یادیں ملی ہیں جن میں سے ایک میں اپنے والد کی کہانی آپ سب کے ساتھ شیئر کرتا چلوں۔‘

View this post on Instagram

Having this album again with me is like visiting my childhood lane again! Found so many old pictures and cherished them. Let me share one of the stories of my dad with you all. Papa used to talk a lot about India, as my parents migrated from India UP to Pakistan. I would often tell him; “Aap apni zindagi ka zyaada hissa Pakistan main bita chukey hain, toh aap India ko kyun itna yaad kartey hain? His reply was; “Jis jagah pe aap ka bachpan guzra hota hai woh jagah nahi bhulai jaati, aur mera bachpan India main guzra hai.” And he added on, that people from Pakistan who have now migrated to India, I’m sure would also remember parts of Pakistan they spent their childhood in and would talk about it to their children the way I do with you all. It made sense to me when I started reminiscing about my childhood while crossing the old house we lived in- Defence phase 1, Sunset Boulevard, Karachi. All the memories flush back in my mind- Ammi planting palm trees, me counting the red government buses (17-A) go by from the terrace, the lilac colour walls of the room I shared with my sisters, the round staircase, the grills on the terrace and garden area, papaya tree in the backyard in front of the kitchen, playing hide and seek with my siblings in the garden... and so many more fond memories. Here’s some nostalgia from the old house. 1- baby me in Lahore, Zaman Park. 2- I was very fond of dressing up as a cowboy as a kid, so my father got this outfit for me from London which I’m wearing in picture. 3- Also seen standing with my younger sister Ayesha, who’s now a mother of 3 amazing kids. The pictures have been taken by my eldest sister. 4- Posing with my cousins, where I resemble Zayd sahib lot. 5- Eid outfit- clearly remember I didn’t like what I was made to wear. 6- Oh, and apparently I got a certificate at school too. Convent of Jesus and Mary School. . . . . #adnansiddiqui #actor #childhood #memories #pakistan #lahore #karachi #nostalgia #oldhouse #siblings #school #eid #outfit #live #life #pictures #instaphotos #cousins #london #buses #lilac #palmtrees #papaya #hidenseek #India #up #photography #father #son #conversation

A post shared by Adnan Siddiqui (@adnansid1) on


اداکار نے بتایا کہ اُن کے والدین تقسیم ہند کے بعد یو پی سے پاکستان ہجرت کر کے پہنچے، عدنان صدیقی نے کہا کہ والد ہمیشہ بھارت کی اور اپنے بچپن کی باتیں کیا کرتے تھے تو ہم اُن سے کہتے تھے کہ آپ کو یہاں آئے ایک عرصہ بہت گیا لیکن آپ پھر بھی بھارت کی باتیں کرتے ہیں۔‘

عدنان صدیقی کے اس شکوے کے جواب میں اُن کے والد کا جواب انتہائی پُرا اثر ہوتا تھا جو عدنان آج تک نہیں بُھلا پائے۔

جس جگہ آپ کا بچپن گزرا ہوتا ہے، وہ جگہ نہیں بھلائی جاتی اور میرا بچپن بھارت میں گُزرا ہے۔

عدنان صدیقی نے یہ بھی کہا کہ ’والد کہا کرتے تھے کہ پاکستان سے جو لوگ بھارت گئے ہیں وہ بھی پاکستان کو یاد کرتے  ہوں گے جہاں انہوں نے اپنا بچپن گزارا ہوگا اور وہ بھی اپنے بچپن کے قصے اپنے بچوں کو سناتے ہوں گے۔‘

عدنان صدیقی نے کہا کہ انہیں اپنے والد کی بات کی اب سمجھ آئی ہے اس میں کوئی شک نہیں کہ انسان اپنے بچپن کی باتیں اور جگہ کو کبھی بھی نہیں بھول سکتا۔

انہوں نے تصویر کے کیپشن میں اپنے بچپن کے کچھ یادگار قصے بھی شیئر کئے۔

انٹرٹینمنٹ سے مزید