آپ آف لائن ہیں
ہفتہ12؍ربیع الثانی 1442ھ 28؍نومبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

فرانس کے بائیکاٹ کی مہم زور پکڑ گئی، فرانسیسی زراعت، توانائی، جنگی سامان اور گاڑیوں کی صنعت کو خطرہ

کراچی (نیوز ڈیسک) دنیا بھر میں بائیکاٹ فرانس کی مہم زور پکڑ رہی ہے، فرانسیسی زراعت، توانائی، جنگی سامان اور گاڑیوں کی صنعت کو خطرہ، فرانسیسی مصنوعات کے بائیکاٹ سے فرانسیسی شعبہ زراعت سے منسلک زرعی مصنوعات متاثر ہوں گی، فرانسیسی پیٹرولیم مصنوعات بھی متاثر ہوں گی ، متعدد مسلم اکثریتی ممالک بشمول پاکستان، بنگلہ دیش اور ترکی میں فرانسیس کا ʼٹوٹل پیٹرول پمپʼ موجود ہے، فرانس کی تھیلس نامی کمپنی متعدد مسلم اکثریتی ممالک کو اسلحہ، ایروناٹکس ٹیکنالوجی اور پبلک ٹرانسپورٹ سسٹم فروخت کرتا ہے۔

کمپنی کی ویب سائٹ کے مطابق اس کے صارفین میں سعودی عرب، متحدہ عرب امارات ترکی اور قطر شامل ہیں۔مصر اور قطر ان ممالک میں شامل ہیں جنہوں نے ڈاسالٹ سے رافیل جنگی طیارے کا آرڈر دیا ہے۔

فرانسیسی کار ساز کمپنی ʼرینالٹʼ نے ترکی کو اس کی آٹھویں بڑی منڈی کے طور پر فہرست میں پیش کیا ہے جہاں رواں سال کے پہلے 6 ماہ میں 49 ہزار 131 گاڑیاں فروخت ہوئیں۔ اے این آئی اے انڈسٹری لابی کے مطابق فرانس زرعی مصنوعات کا ایک اہم عالمی برآمد کنندہ ہے اور برآمدات کا 3 فیصد مشرق وسطی کو جاتا ہے اور ان برآمدات میں زرعی اناج (گندم، دالیں وغیرہ) کا ایک بڑا حصہ ہے۔

فرانسیسی وزارت زراعت کے اعداد و شمار کے مطابق الجیریا زرعی مصنوعات کے لیے فرانس کی دسویں بڑی برآمدی منڈی ہے جس کی برآمدات 2019 میں تقریباً ایک ارب 40 کروڑ یورو تھی۔الجزائر نے بھی فرانسیسی مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان کیا ہے۔

الجیریا گزشتہ برس فرانس کی 17 ویں بڑی زرعی مصنوعات کی برآمدی منڈی تھی جس کی برآمدات 70 کروڑ یورو تھی۔ اے این آئی اے لابی گروپ نے کہا کہ وزارت خارجہ میں محکمہ تجارت نے ایک ʼبحران مرکزʼ قائم کردیا اور وہ زراعت کی صنعت کے نمائندوں سے رابطہ کر رہا ہے۔ سعودی عرب میں بائیکاٹ کے مطالبات کا ایک ہدف سپر مارکیٹ چینʼ تھی۔

گزشتہ ہفتے صارفین کو مذکورہ فرانسیسی اسٹورز سے دور رہنے کی مہم زور و شور سے جاری تھی اور سوشل میڈیا پر ٹرینڈ کررہی تھی۔فرانسیسی ریٹیلرز مشرق وسطیٰ، جنوبی ایشیا میں اپنے شراکت داروں سے فرانچائز کے ذریعے انتظام چلاتے ہیں۔ ایک شراکت دار کے پاس پاکستان، لبنان اور بحرین سمیت ممالک میں ʼ سپر مارکیٹ چینʼ کے خصوصی حقوق ہیں۔ 

ایک اور پارٹنر کے پاس مراکش کے لیے سپر مارکیٹ چینʼ کے حقوق ہیں۔سعودی دارالحکومت ریاض میں برطانوی نیوز ایجنسی کے صحافیوں نے کیریفور کی دو دکانوں کا دورہ کیا جہاں معمول کے مطابق صارفین نظر آئے۔پیرس میں نمائندے نے بتایا کہ بائیکاٹ کی کال سے اب تک فرم کو کوئی اثر محسوس نہیں ہوا۔ 

اہم خبریں سے مزید