آپ آف لائن ہیں
اتوار3؍جمادی الثانی 1442ھ 17؍جنوری2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

عدالت ِعظمیٰ کے تین رکنی بینچ نے ڈی ایچ اے لاہور کی جانب سے اپنے رہائشی منصوبے کی جگہ تبدیل کرنے سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران ایل ڈی اے کو نوٹس جاری کرتے ہوئے کیس کی مزید سماعت غیرمعینہ مدت کیلئے ملتوی کر دی۔ جسٹس مظہر عالم نے کہا کہ زرعی زمینوں پر تعمیرات نے سبزہ ختم کر دیا ہے جبکہ جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے ہیں کہ سوسائٹیاں وہاں ہونی چاہئیں جہاں زرعی زمین نہ ہو، ساری دنیا میں صحرائوں میں تعمیرات ہو رہی ہیں۔ اِس حقیقت کو جھٹلانا ممکن نہیں کہ سرِدست پاکستان میں سب سے زیادہ منافع بخش کاروبار میں سے ایک رئیل اسٹیٹ یعنی پراپرٹی کا ہے، تاہم المیہ یہ ہے کہ اِس کاروبار سے زرعی زمینیں معدوم ہو رہی ہیں، ملک بھر میں زرخیز زرعی اراضی پر کسی منصوبہ بندی کے بغیر ہزاروں رہائشی اسکیمیں بن رہی ہیں کیونکہ زراعت کی نسبت رہائشی اسکیمیں بنانا زیادہ نفع بخش ہے، اسی رجحان کے باعث رہائشی اسکیموں کیلئے زرعی اراضی کی خرید و فروخت میں تیزی آئی، یہ الگ بات کہ کالا دھن چھپانے اور کھپانے کا آسان طریقہ بھی یہی ہے۔ مارچ 2019میں وزیراعظم عمران خان نے زرعی اراضی پر رہائشی آبادیوں کی تعمیر پر پابندی کا حکم دیا تھا لیکن اُس پر عملدرآمد نہ ہو پایا۔ شہر لاہور کے چاروں اطراف، رائے ونڈ روڈ، ملتان روڈ، فیروز پور روڈ اور

برکی روڈ سمیت مختلف علاقوں میں زرعی اراضی پر درجنوں رہائشی آبادیاں قائم ہو چکی ہیں، جس کے باعث شہر میں سبزیوں اور دیگر اجناس کی پیداوار میں واضح کمی آئی۔ لاہور اگر دنیا کا آلودہ ترین شہر بن گیا ہے تو اُس کی بنیادی وجہ یہاں سے درختوں اور سبزے کا صفایا ہو جانا ہے، ہمیں اسلامی تصور کی طرف رجوع کرنا ہوگا، یعنی چھوٹے شہر آباد کئے جائیں تا کہ زرعی زمینوں کو بچایا جا سکے، یوں بڑے شہروں کی طرف نقل مکانی کے رجحان میں بھی کمی آئےگی جو خطرناک حد تک بڑھ چکی ہے۔

تازہ ترین