• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

وزیرِ اعظم ہاؤس کے بجٹ میں 18 کروڑ کا اضافہ ہوا: سینیٹر مشتاق احمد

جماعتِ اسلامی خیبر پختون خوا کے امیر اور سینیٹر مشتاق احمد خان کا کہنا ہے کہ وزیرِ اعظم عمران خان نے بجٹ میں سبسڈی سفید ہاتھیوں کے لیے دی، وزیرِ اعظم ہاؤس کے بجٹ میں 18 کروڑ کا اضافہ کیا گیا ہے۔

سینیٹ کے اجلاس میں بجٹ پر ہونے والی بحث میں حصہ لیتے ہوئے جماعتِ اسلامی خیبر پختون خوا کے امیر اور سینیٹر مشتاق احمد خان نے کہا کہ اس سال 29 ارب ڈالرز کی ترسیلاتِ زر اس لیے آئیں کیونکہ ملک میں مہنگائی بہت زیادہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کی وباء کی وجہ سے جہاز کی آمد و رفت بند ہے تو لوگ حکومتی ذرائع سے پیسے بھجوا رہے ہیں، جیسے ہی آمد و رفت دوبارہ شروع ہو گی ترسیلاتِ زر کم ہو جائیں گی۔

سینیٹر مشتاق احمد نے کہا کہ حکومت نے اس سال 31 ارب ڈالر کا ترسیلاتِ زر کا ہدف رکھا ہے جو پورا ہونا مشکل نظر آتا ہے، مفروضوں اور رسک کی بنیاد پر بجٹ قائم کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بتایا جائے کہ امریکا کے حوالے سے آئی ایم ایف سے کیا معاہدہ کیا جا رہا ہے؟ حکومت کے فراہم کردہ گروتھ ریٹ کو کوئی نہیں مانتا۔

سینیٹر مشتاق احمد کا کہنا ہے کہ حکومت نے قرضوں میں 3 سال میں 30 فیصد اضافہ کر دیا، آپ کا پورا سویلین بجٹ قرضوں پر ہے۔

انہوں نے کہا کہ عوام کا پیسہ آپ واپڈا، آئی پی پیز، کے الیکٹرک، ریلوے، پی آئی اے اور اسٹیل ملز کو سبسڈی میں دے رہے ہیں۔

جماعتِ اسلامی کے سینیٹر نے مزید کہا کہ این ایف سی ایوراڈ کے بغیر بجٹ کی آئینی حیثیت پر سوالات اٹھ رہے ہیں۔

ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ جو رقم ایم ایل ون کیلئے مختص کی گئی اس سے ریلوے لائن بننے میں 200 سال لگ جائیں گے۔

قومی خبریں سے مزید