• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

کراچی سے ہانگ کانگ اسمگل کیٹامائن کی تحقیقات شروع

کراچی سے ٹیکسٹائل مصنوعات کی آڑ میں ڈھائی ارب روپے سے زائد مالیت کی کیٹا مائن کنٹینر میں ہانگ کانگ اسمگل کرنے کی اعلیٰ سطحی تحقیقات شروع کر دی گئی ہے، ایک حساس وفاقی تحقیقاتی ادارے کے حکام کے مطابق یارن کی آڑ میں کنٹینر میں اسمگل کی گئی 220 کلوگرام کیٹامائن ہانگ کانگ میں پکڑی گئی۔

تحقیقاتی ادارہ کے ذرائع نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ 220 کلوگرام کیٹا مائن کی مقدار چین کی 10 سالہ تاریخ میں نہیں پکڑی گئی، حکام کے مطابق یارن کا کنٹینر پورٹ قاسم سے انصاری ٹیکسٹائل کی جانب سے ہانگ کانگ بھجوایا گیا تھا۔

کسٹمز حکام کے مطابق کنٹینر نمبر SEGU2866483 کلئیرنگ ایجنٹ ایس ایم انٹرپرائزز کے توسط سے بک کرایا گیا تھا، کنٹینر میں 7500 کلوگرام یارن ظاہر کرکے اسے پورٹ قاسم کراچی سے کلیئر کرایا گیا۔

حکام کے مطابق برآمد ہونے والی کیٹامائن کی بین الاقوامی مارکیٹ میں مالیت دو ارب 65 کروڑ سے زائد ہے، تحقیقاتی حکام کے مطابق چینی حکام کے سخت ردعمل کے بعد کراچی میں کسٹمز نے باقاعدہ مقدمہ درج کیا جس میں انصاری ٹیکسٹائل اور ایس ایم انٹرپرائزز کو ملزم ظاہر کیا گیا ہے۔

کسٹم حکام نے اسمگلنگ کے اس مقدمے پر ردعمل دینے سے گریز کیا ہے، کسٹمز حکام کی جانب سے اس مقدمے میں ملزمان کی گرفتاری یا قانونی پیشرفت کے حوالے سے تفصیلات دینے سے انکار کردیا گیا ہے۔ انصاری ٹیکسٹائل کے مالکان کے مطابق اس کاروائی میں ان کا ایجنٹ ملوث ہے جبکہ ایس ایم انٹرپرائزز کے ذمہ داروں سے کوشش کے باوجود رابطہ نہیں ہو سکا۔

واضح رہے کہ کیٹامائن کو کوکین نامی منشیات بنانے میں استعمال کیا جاتا ہے، وفاقی تحقیقاتی خفیہ ادارے نے اس سلسلے میں کافی تفصیلات جمع کر لی ہیں اور تفصیلی رپورٹ وفاق کو پیش کی جائے گی۔

قومی خبریں سے مزید