آپ آف لائن ہیں
اتوار2؍صفر المظفّر 1442ھ 20؍ستمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

امریکی تیل کی پیداوار میں توقع سے زیادہ تیزی سے کمی

امریکی توانائی کے

ایڈیٹر:ڈیریک برور

امریکی تیل کی پیداوار میں توقع سے کہیں زیادہ تیزی سے کمی نے تجزیہ کاروں کو رواں سال کے آخر میں طے شدہ مخالف بہاؤ کے اخراجات کی فراہمی میں مزید کمی میں شدید گرنے سے پہلے پیداوار کی پیشن گوئی میں کمی پر مجبور کردیا۔

کنسلٹنسی ووڈ میکنزی کے یونٹ گینسکیپ نے کہا کہ مارچ میں 13.24 ملین کی بلندی سے 20 مئی تک پیداوار میں فی دن میں تقریبا20 فیصد یعنی 2.3 ملین بیرل کی کمی واقع ہوئی ہے۔

پہلے ہی حجم میں کمی کی اتنی ہی مقدار ہے جتنا روس اور سعودی عرب نے گذشتہ ماہ جون میں شروع ہونے والے تاریخی فراہمی کے معاہدے میں کمی کا وعدہ کیا تھا۔یہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ سمیت امریکی سیاستدانوں کو خوف زدہ کر نے کے لئے کافی ہوگا ، جنہوں نے تیل کی قیمتوں میں اضافے کے لیے اوپیک پر پیداواری کٹوتی کیلئے دباؤ ڈالا تاکہ امریکی پروڈیوسر منافع بخش تیل پمپنگ جاری رکھیں۔

گینسکیپ کے تازہ ترین اعدادوشمار، جو مصنوعی سیارہ کی نگرانی اور پورے امریکہ میں اداروںکی حرارت کے سینسر پر مبنی ہے ، نے تجویز کیا کہ سب سے بڑی کمی ٹیکساس کے پرمین شیل میں ہوئی ، ایک دن میں 1.15 ملی بیرل اور نارتھ ڈکوٹا کے بیکن میں 480،000 بیرل فی دن کمی ہوئی۔

اسٹینڈرڈ چارٹرڈ میں اجناس کی تحقیق کے سربراہ پاول ہارسنیل نے کہا کہ پروڈیوسر سرکاری تخمینے سے پہلے ہی 1.5 ملین بیرل فی دن سے زیادہ کمی کر چکے ہیں۔ انہوں نے پیش گوئی کی کہ آئندہ ہفتوں میں پیداوار 10 ملین بیرل فی دن سے نیچے جاسکتی ہے ، جو مارچ کے بعد سے 3 ملین بیرل فی دن سے بھی کم ہوسکتی ہے۔

تیل کے دیگر ذرائع کے مقابلے میںامریکی شیل تیل کی پیداوار نے قیمتوں میں بدلاؤ کا تیزی سے ردعمل دیا،لیکن تجزیہ کار اس پر متفق نہیں کہ کئی عشروں میں بدترین تیل کی قیمتوں میں بحران کے دوران تیل کی فراہمی میں کتنی کمی کرنی ہوگی۔

گولڈمین ساکس نے اندازہ لگایا تھا کہ 2020 کے دوسرے نصف حصے میں آئل مارکیٹ کی بحال کے آغاز سے قبل زیادہ تر پرانی حالت میں واپس آنےسے پہلے ہی دوسری سہ ماہی میں نقصان زیادہ سے زیادہ 1.3 ملین بیرل فی دن تک پہنچ جائے گا۔

امریکی پیداوار کا ںصف حسہ رکھنے والے نجی طور پر پیداوار کرنے والے پروڈیوسر سرکاری کمپنیوں کے برعکس پیداوار میں کٹوتی کو ظاہر کرنے کے پابند نہیں ہیں۔گینسکیپ کے منیجنگ ڈائریکٹر رینڈل کولم نے کہا کہ اس سے مختلف اعدادوشمارکی وضاحت میں مدد مل سکتی ہے۔

آئل مارکیٹ کے تاجر امریکی سپلائی سے متعلق معلومات کو مستحکم کرتے ہیں ،جس کے مطابق تیل کی پیداوار کرنے والےدنیا کے سب سے بڑے ملک کا ایک بہت بڑا حجم داؤ پر لگا ہوا ہے۔

لیکن اکثر و بیشتراعداد و شمار غیر واضح یا غیرشفاف ہوتے ہیں۔

امریکی پیداوار کے تخمینے کے مطابق مسٹر ہورسنیل نے کہا کہ یہ روزن سیاہ دیکھنے کےمترادف ہے،اس کے حوالے سے کیا کام ہورہا ہے اس کےمشاہدے کے ذریعے ہم حساب کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔

پچھلے دو ماہ کی طرح اچانک مارکیٹ کے نیچے جانے کے ردعمل میں کنویں بند کرنا تیل کی پیداوارکرنے والوں کے لئے ایک بنیادی اقدام ہے ،تاہم یہ قابل واپسی ہے۔اگر قیمتوں میں 30 ڈالر فی بیرل سے زیادہ کا اضافہ ہوتا ہے تو ، آپریٹرز کےکچھ کنوؤں کو بحال کرنے کے بعد پیداوار میں تھوڑا سا اضافہ ہوگا۔

اگرچہ فراہمی کو متاثر کرنے میں سست روی سرمایئے کےخرچ میں کمی کے اثرات سے  بحال کرنا مشکل ہوگا۔

شیل کی وضاحتی خصوصیت یہ ہے کہ تیزی سے کم ہوتے پرانے کنوؤں کو تبدیل کرنے کے لئے نئے کنویں کھودنے کے لئے مستقل اخراجات کی ضرورت ہے۔

مسٹر ہورسنیل نے کہا کہ اچھی تکمیل نہ ہونے کی وجہ سے پیداوار میں ہر ماہ 300،000 b / d کمی واقع ہونے سے سال کے آخر میں کیپکس میں کٹوتی ہوگی ۔

فنانشل ٹائمز سے مزید