آپ آف لائن ہیں
جمعہ18؍ذیقعد 1441ھ 10؍جولائی 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

سگریٹ نوشی کے نقصانات سے سبھی واقف ہیں ،یہاں تک کہ سگریٹ نوشی کرنے والے افراد بھی۔ تاہم، وہ پیکٹ پر بنی ہدایات اور کینسر والی تصاویر کو نظر انداز کرکے سگریٹ نوشی کرتے رہتے ہیںاور شاید جانتے نہیں کہ دنیا میں ہر سال 70لاکھ افراد صرف تمباکو نوشی کی عادت کے سبب جہانِ فانی سے کوچ کرجاتے ہیں۔ اس میں صرف عادی سگریٹ نوش ہی شامل نہیں بلکہ وہ افراد بھی شامل ہیں جو کسی اور کے سگریٹ پینے کی وجہ سے متاثر ہوتے ہیں۔ اگر لوگوں میں تمباکو نوشی کی عادت یونہی برقرار رہی تو 2030ء تک ہر سال اس علت کے باعث مرنے والوں کی تعداد سالانہ 80لاکھ سے زائد ہو جائے گی۔

اگر آپ تمباکو نوشی کرتے ہیں یا آپ کے گھر کا کوئی فرد اس عادت کوا پنائے ہوئے ہے تو اس سے جان چھڑانا کوئی خاص مشکل نہیں ہے۔ عمومی طور پر دیکھا جاتا ہے کہ جو لوگ اس عادت میں مبتلا ہیں ، وہ اس کی طلب کی شدت کو برداشت نہیں کرپاتے لیکن اگر ایک بار وہ پکا ارادہ کرلیں تو خود ارادی ہی انھیں اس عفریت سے آئندہ بھی بچا سکتی ہے۔ لوگ یہ بھی سوچتے ہیں کہ سگریٹ چھوڑنے سے کیا ہوگا؟ پھیپھڑوں کو صاف ہونے میں کتنا عرصہ لگے گا؟ تو اس کا جواب یہ ہے کہ اگرآپ سگریٹ نوشی ترک کریں گے تو آہستہ آہستہ آپ کے اندر جو تبدیلیاں رونما ہوں گی، وہ آپ خود بھی محسوس کریں گے اوراپنے فیصلے کی داد دیں گے۔ یہ تبدیلیاں کچھ یوں ہوتی ہیں:

20منٹ بعد

آپ کے بلڈ پریشر اور نبض کی رفتار معمول پر آجاتی ہے اور آپ کے ہاتھوں اور پیروں کا درجہ حرارت نارمل ہو جاتاہے ۔

8گھنٹے بعد

آٹھ گھنٹے بعد آپ کے خون میں نکوٹین اور کاربن مونو آکسائیڈ کی مقدار نصف سے کم ہو جاتی ہے ۔ دل کی بیماری بڑھانے میں نکوٹین ہی سب سے زیادہ کام کرتاہے جبکہ کاربن مونو آکسائیڈ آپ کے خون میں موجود آکسیجن کو استعمال کرسکتاہے اور اس سے صحت کے مزید مسائل پیدا ہوسکتے ہیں۔ اس وجہ سے آپ کو سگریٹ کی جلد طلب ہوتی ہے، لیکن اگر آپ اپنے فیصلے پر ڈٹے رہیں تو یہ وقت بھی گزر جاتاہے۔

24گھنٹے بعد

وہ لوگ جو ایک پیکٹ روزانہ پیتے ہیں ان کو ہارٹ اٹیک کا خطرہ سگریٹ نہ پینے والوں کے مقابلے میں دگنا ہوتاہے۔ اسی لئے اگر آپ نے سارا دن ایک بھی سگریٹ نہیں پی تو یہ خطرہ خود بخود کم ہونے لگتاہے ۔ اس مختصر سے وقت میں بھی آپ کے اندر آکسیجن کی سطح بڑھ جاتی ہے،اور آپ کے لیے جسمانی سرگرمیاں اور ایکسرسائز کرنا پہلے سے زیادہ آسان ہو جاتاہے۔

48گھنٹے بعد

اگر آپ کو سگریٹ نوشی ترک کیے دودن ہو چکے ہیں تو کوئی بھی چاکلیٹ یا کیک کھا کر اس کا جشن منائیں۔ آپ خود محسوس کریںگے کہ آپ کے سونگھنے کی حس اور زبان کا ذائقہ پہلے سے بڑھ چکاہے اورآپ اپنے اعصاب کو بہتر ہوتا محسوس کررہے ہیں۔ اس دوران آپ کے اندر بھی کافی حدتک صفائی ہو چکی ہوگی ۔سگریٹ پینے کے سبب آپ کے پھیپھڑوں پر موجود دھوئیں کی گندگی اوربلغم کی صفائی شروع ہو چکی ہوگی۔آپ کے جسم میں موجود نکوٹین بھی غائب ہونے لگے گا۔

72گھنٹے بعد

تین دن بعد آپ کے پھیپھڑے کافی حد تک صاف ہوجائیں گے ۔ آپ کو سانس لینے میں پہلے زیادہ آسانی محسوس ہوگی ، جس کے نتیجے میں آپ اپنے اندر زیادہ توانائی محسوس کریں گے۔

ایک ہفتے بعد

جب آپ ایک ہفتے کا سنگ میل عبور کرلیںگے تو آپ کے اندر سگریٹ نوشی ترک کرنے کی طاقت 9گنا تک بڑھ چکی ہوگی، یعنی آپ نے اگر ایک ہفتہ گزار لیاتو امید ہے کہ اب آپ ساری زندگی سگریٹ کو ہاتھ نہیں لگائیں گے۔

2ہفتے بعد

دو ہفتے بعد آپ محسوس کریںگے کہ آپ اب زیادہ آسانی سے سانس لے رہے ہیں اور صحت یابی کی طرف مائل اپنے پھیپھڑوں کا شکریہ ادا کریںگے ، جس کی وجہ آپ کے جسم میں آکسیجن وافر مقدار میں داخل ہورہی ہے اور دوران خون بہتر ہورہا ہے۔

ایک ماہ بعد

آپ اپنے اندر پہلے سے زیادہ توانائی محسوس کریں گے۔ آپ سگریٹ نوشی کی وجہ سے ہونے والی علامات و عوارض میں نمایاں کمی محسوس کریں گے جیسے کہ سینے میں جکڑن اور ایکسرسائز کرتے وقت سانس لینے میں مشکل وغیرہ۔

3ماہ بعد

اگلے تین مہینوں میں آپ کا دوران خون بہتر سے بہتر ہوتا چلا جاتاہے، اسی لیے آپ کی جسمانی حالت بھی بہتر ہوتی چلی جاتی ہے۔ سگریٹ نوشی ترک کرنے والی حاملہ خواتین میں پری میچور ڈلیوری کا خطرہ بھی کم ہو سکتاہے ۔

6ماہ بعد

چھ ماہ بعد آپ محسوس کریں گے کہ آپ اسٹریس والی اس صورتحال سے بھی بآسانی باہر نکلنے کے قابل ہوجائیں گے ،جس کیلئے پہلے آپ سگریٹ کا سہارا لیتے تھے۔ آپ کو کھانسی اور بلغم کم آنے لگتی ہے اور پھیپھڑوں میں ہونے والی انفلیمیشن میں کمی ہونے لگتی ہے۔

ایک سال بعد

ایک سال میں پھیپھڑے بہت اچھی طرح کام کرنے لگتے ہیں۔ صحت بہتر کرنے کے ساتھ ساتھ آپ سگریٹ کی خریداری کیلئے استعمال ہونے والا خرچہ بھی کافی حد تک بچا چکے ہیں۔

3سال بعد

تین سال بغیر سگریٹ کے گزارنے پر آپ کو ہارٹ اٹیک کا خطرہ سگریٹ نہ پینے والے جتنا ہو جاتاہے ۔

5سال بعد

آپ کے ہارٹ اٹیک کاخطرہ 50فیصد کم ہوچکا ہوتا ہے ، ساتھ ہی منہ، حلق ، معدے اور مثانے کےکینسر کا خطرہ بھی نصف رہ جاتا ہے۔

10سال بعد

پھیپھڑو ں کی وجہ سے موت کا شکا رہونے کی شرح سگریٹ نہ پینے والے جتنی ہو چکی ہوتی ہے۔ کینسر پیدا ہونے یا بڑھنے کا خطرہ بھی 30سے50فیصد تک کم ہوجاتا ہے ۔ کینسر سے متاثر ہونے والے خلیے بھی صحت مند خلیوں سے تبدیل ہوجاتے ہیں۔

15سال بعد

آپ بالکل عام انسان کی طرح ہوجاتے ہیں اور خود کو سگریٹ سے وابستہ تمام بیماریوں جیسے ہارٹ اٹیک یا پھیپھڑے کے کینسر وغیرہ سے محفوظ بنالیتے ہیں اور ایک صحت مند زندگی گزانے کی جانب رواںدواں رہتے ہیں۔