آپ آف لائن ہیں
اتوار9؍صفر المظفّر 1442ھ 27؍ستمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

مطیع اللّٰہ جان کے اغوا پر آئی جی کی رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع


سینئر صحافی مطیع اللّٰہ خان کے اغوا پر آئی جی اسلام آباد نے سپریم کورٹ میں رپورٹ جمع کرادی ہے، جس کی کاپی جیو نیوز نے حاصل کرلی۔

سپریم کورٹ میں جمع کرائی گئی رپورٹ میں کہا گیا کہ پولیس تحقیقات میں ابھی تک کسی محکمے نے جواب نہیں دیا۔

رپورٹ کے مطابق مقدمے کے اندراج کے بعد وزارت دفاع، آئی بی، ایم آئی اور آئی ایس آئی سے معاونت کی درخواست کی گئی، ابھی تک کسی محکمے نے جواب نہیں دیا ہے۔

آئی جی اسلام آباد کی رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا کہ واقعےکے مقام کی جیو فینسنگ رپورٹ بھی اب تک موصول نہیں ہوئی ہے۔

سپریم کورٹ جمع کرائی گئی رپورٹ میں کہا گیا کہ موبائل کال ڈیٹا کے لیے واقعے کے دن ہی درخواست متعلقہ محکمے کو لکھ دی گئی تھی جبکہ اسلام آباد سیف سٹی کے کیمروں کا ریکارڈ بھی تاحال موصول نہیں ہوا۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ سینئر صحافی کی بازیابی کے مقام سےآنکھوں کی کالی پٹی اور ٹیپ برآمد کرلیے گئے، جن کی فرانزک رپورٹ بھی اب تک موصول نہیں ہوئی ہے۔

آئی جی اسلام آباد کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ ملزمان کی تلاش اور شناخت کےلیے بھرپور کوششیں جاری ہیں، نادرا نے فوٹیج میں موجود اغوا کاروں کی شناخت کے بارے میں جواب نہیں دیا۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ تمام اضلاع کی پولیس اور ایف آئی اے کو خط لکھا گیا ہے کہ مطیع اللّٰہ جان انہیں کسی مقدمے میں مطلوب تھے؟ جواب میں سب نے ’نہیں‘ کہا۔

سپریم کورٹ میں جمع کرائی گئی رپورٹ کے مطابق معاملے ایس آئی ٹی کےلیے تفتیش کی، اس معاملے پر جے آئی ٹی بنائی جائے گی، مطیع اللّٰہ جان کے اغوا مقدمے میں انسداد دہشت گردی کی دفعہ 7 بھی شامل کرلی گئی۔

قومی خبریں سے مزید