آپ آف لائن ہیں
اتوار7؍ ربیع الاوّل1442ھ 25؍اکتوبر2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

بزدار، واوڈا 2018 کے ٹیکس نادہندگان میں شامل

فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کی جانب سے ٹیکس جمع نہ کروانے والے سیاستدانوں کی فہرست میں وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار سمیت وفاقی وزیر فیصل واوڈا اور سینیٹر فیصل جاوید کے نام بھی شامل ہیں۔

ایف بی آرکی جانب سے ارکان پارلیمنٹ کی سال 2018ء کی ٹیکس ڈائریکٹری جاری کی گئی ہے جس میں ٹیکس دہندگان سیاستدانوں کے ساتھ ساتھ نادہندگان سیاستدانوں کے نام بھی شامل ہیں۔

ٹیکس ڈائریکٹری 2018ء کے مطابق ٹیکس نادہندگان سیاستدانوں میں وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار ، وفاقی وزیر فیصل واوڈا، نورالحق قادری، سینیٹر فیصل جاوید، سینیٹر شمیم آفریدی، سینیٹر رانا مقبول احمد ، زاہد اکرم درانی، شیرعلی ارباب، ایم این اے بشیرخان، محمد ساجد کے نام شامل ہیں۔

واضح رہے کہ ایف بی آرکی جانب سے جاری کی گئی ڈائریکٹری کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے 2018ء میں 2 لاکھ 82 ہزار 449 روپے ٹیکس دیا جبکہ پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے 97 لاکھ 30 ہزار 545 روپے اور پاکستان پیپلز پارٹی کے صدر آصف زرداری نے 28 لاکھ 91 ہزار 455 روپے ٹیکس دیا۔

فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے مطابق وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے 10 لاکھ 22 ہزار 184 روپے جبکہ وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے 48 لاکھ 8 ہزار 948 روپے ٹیکس دیا۔

رپورٹ کے مطابق وفاقی وزیر اسد عمر نے 2018ء میں 53 لاکھ46 ہزار 342 روپے، بلاول بھٹو زرداری نے 2 لاکھ 94 ہزار 117 روپے جبکہ خواجہ سعد رفیق نے 29 لاکھ 49ہزار 200 روپے ٹیکس دیا۔

اسی طرح اختر مینگل نے2018ء میں 13 لاکھ 24 ہزار 375 روپے، وفاقی وزیر علی زیدی نے 8 لاکھ 96 ہزار 191 روپے اور سابق وزیر قانون رانا ثناءاللّٰہ نے 13 لاکھ 88 ہزار 275 روپے ٹیکس دیا تھا۔

ایف بی آر کی رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال نے 3 لاکھ 57 ہزار 100 روپے اور سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے 24 کروڑ13 لاکھ 29 ہزار 362 روپے ٹیکس دیا۔

ایف بی آر کے مطابق راجہ پرویز اشرف نے 2 لاکھ 67 ہزار 380 روپے، پاکستان تحریک انصاف کے رہنما پرویز خٹک نے 18 لاکھ 26 ہزار 899 روپے اور علی محمد خان نے 4 لاکھ 30 ہزار 695 روپے ٹیکس دیا۔

اسی طرح 2018ء میں حمزہ شہباز نے 87 لاکھ 5 ہزار 368 روپے ٹیکس دیا، وفاقی وزیر شاہ محمود قریشی نے 1 لاکھ 83 ہزار 900 روپے جبکہ حماد اظہر نے اے او پیز کے تحت 5 کروڑ 94 لاکھ 21 ہزار 700 روپے اور 22 ہزار 445 روپے انکم ٹیکس جمع کرایا۔

ایف بی آر کے مطابق پی پی پی کے خورشید شاہ نے 3 لاکھ 5ہزار 100 روپے ٹیکس ادا کیا ۔

ایف بی آر کی ٹیکس رپورٹ 2018ء کے مطابق سینیٹر فروغ نسیم نے 3 کروڑ 51 لاکھ روپے، سینیٹر طلحہ محمود نے 2 کروڑ 92 لاکھ سے زیادہ ٹیکس ادا کیا۔

اسی طرح تاج محمد آفریدی نے 2 کروڑ 81 لاکھ روپے ، سینیٹرمصدق ملک نے 25 لاکھ روپے سے زیادہ ٹیکس جمع کرایا جبکہ سینیٹر حافظ عبدالکریم نے 43 لاکھ 24 ہزار روپے، سینیٹر مصطفی نواز کھوکھرنے 41 لاکھ روپے ، میاں عتیق نے 8 لاکھ 61 ہزار اور فاروق نائیک نے 64 لاکھ 71 ہزار روپے ٹیکس ادا کیا۔

ایف بی آر کی ٹیکس ڈائریکٹری 2018ء کے مطابق مشاہد اللہ خان نے 3 لاکھ 16 ہزار،رحمان ملک نے ایک لاکھ 73 ہزار روپے، ساجد میر نے 3 لاکھ 96 ہزار، پرویز رشید نے ایک لاکھ 75 ہزار جبکہ سینیٹر عبدالقیوم نے ساڑھے 5 لاکھ روپے ٹیکس جمع کروایا۔

قومی خبریں سے مزید