آپ آف لائن ہیں
ہفتہ19؍ربیع الثانی 1442ھ 5؍دسمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

برطانیہ کا کورونا سے متعلق ’’ٹیسٹ اینڈ ٹریس سسٹم‘‘موضوع بحث

لوٹن (نمائندہ جنگ) برطانیہ کا کورونا سے متعلق ٹیسٹ اینڈ ٹریس سسٹم اس وقت اعلیٰ سطح پر موضوع بحث بن گیا ہے اور اس میں بہتری لانے پر زور دیا جا رہا ہے جب کہ بی بی سی کے مطابق کوویڈ رابطوں کے 14 دن کے قرنطین کو کم کیا جاسکتا ہے اس سے متعلق وزرا قومی محکمہ صحت NHS ٹیسٹ اور ٹریس کے درمیان کوویڈ 19 کے لئے مثبت ٹیسٹ آنے والوں کے رابطوں کے لئے قرنطین کی مدت کو کم کرنے پر غور کر رہے ہیں۔ ذرائع نے بی بی سی کو بتایا کہ 14 دن کی مدت کو 10 یا سات دن تک کیا جاسکتا ہے۔ اس متعلق تعمیل پر تشویش کا اظہار کیا گیا ہے جس بابت کنزرویٹو رکن پارلیمنٹ سر برنارڈ جینکن نے ’’ٹیسٹ اینڈ ٹریس میں قیادت کا خلا‘‘ بیان کیا ہے۔ حکومت نے کہا کہ روزانہ 400،000 ٹیسٹ کی گنجائش فرانس، جرمنی، اٹلی اور اسپین سے بھی زیادہ ہے خود کو الگ تھلگ رکھنے کی ضروریات میں کسی بھی تبدیلی کے بعد کنگز کالج لندن کی تحقیق ہوگی جس نے یہ معلوم کیا تھا کہ ان میں سے صرف 10.9 فیصد کوویڈ 19 کے ساتھ رابطے کی وجہ سے مکمل طور پر تنہائی کے عرصے تک گھر پر ہی رہے۔ اس مہینے کے شروع میں ٹرانسپورٹ کے سیکرٹری گرانٹ شپس نے انکشاف کیا تھا کہ وہ بیرون ملک سے برطانیہ آنے پر لوگوں کو قرنطین میں گزارنے کے وقت کی ضرورت کو کم کرنے کے بہت پر امید ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ ان کے آنے کے ایک ہفتہ بعد

لوگوں کو ٹیسٹ کر کے کیا جاسکتی ہے۔ اس متعلق منتخب کمیٹی کے چیئرمینوں کی رابطہ کمیٹی کے چیئرمین سر برنارڈ نے سنڈے ٹیلی گراف میں لکھا تھا کہ انگلینڈ کے نظام کے ساتھ عوامی رضامندی اور تعاون ’’ٹوٹ پھوٹ‘‘ ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس میں ایک ’’نظر آنے والی اور فیصلہ کن‘‘ تبدیلی ہونی چاہئے جس میں ایک سینئر فوجی شخصیت کو اس نظام کی ذمہ داری سونپی جائے گی۔ انہوں نے لکھا تھا کہ بارونیس ڈیڈو ہارڈنگ جو فی الحال نگرانی میں ہیں کو بریک دی جانی چاہئے تاکہ وہ اور دیگر اب تک سیکھے گئے اسباق پر غور کریں ۔تاہم دوسری جانب محکمہ صحت و سماجی نگہداشت (ڈی ایچ ایس سی) کے ترجمان نے بتایا ہے کہ این ایچ ایس ٹیسٹ اور ٹریس نے 1.1 ملین سے زیادہ افراد سے رابطہ کیا ہے اور انھیں خود سے الگ تھلگ رہنے کو کہا ہے۔ فوج، سرکاری اور نجی شعبے سے وابستہ ڈیڈو ہارڈنگ اور ان کی قائدانہ ٹیم نے برطانیہ میں اب تک کی سب سے بڑی تشخیصی صنعت تعمیر کی ہے۔ ڈی ایچ ایس سی کے ترجمان نے کہا یہ مہینوں کے معاملے میں ٹیسکو کے سائز کو اپریشن بنانے کے مترادف ہے۔ ہمیں واقعات میں بہتری لانے کی ضرورت ہے اور ہم اس پر بہت زیادہ فوکس کر رہے ہیں، تاہم ہم کو اوپر جانے کی ضرورت ہے نہ کہ نیچے کی طرف، یہ بھی رپورٹ کیا گیا ہے کہ پچھلے مہینے یہ اعلان کیا گیا تھا کہ سابقہ سینسبری کے چیف ایگزیکٹو مائک کوپ انگلینڈ کی این ایچ ایس ٹیسٹ اور ٹریس ایجنسی میں کوویڈ 19 ٹیسٹ کے ڈائریکٹر کا عہدہ سنبھالیں گے۔ بی بی سی نے رپورٹ کیا ہے کہ اس سروس کے ذریعہ 20،000 سے زیادہ ٹریسروں کو بھرتی کیا گیا تھا لیکن بہت سے لوگوں نے شکایت کی ہے کہ انہیں بہت کم یا کچھ نہیں دیا گیا تھا۔ اور سر برنارڈ نے مزید کہا ہے کہ باس اپنے عملے کے مالک نہیں ہیں، بیشتر عارضی تقرریاں ہوتی ہیں اور کسی ٹاکسک کلچر کی وجہ سے بھرتی کرنا مشکل ہوتا ہے۔ بی بی سی کے مطابق خود وزیر اعظم بورس جانسن نے جمعرات کو تسلیم کیا تھا کہ این ایچ ایس ٹیسٹ اور ٹریس میں بہتری کی ضرورت ہے لہذا نتائج کو جلد فراہم کیا گیا۔ حکومت کے چیف سائنسی مشیر سر پیٹرک والنس نے بھی تبدیلی کی ضرورت کو قبول کیا ہے۔ جبکہ 14 اکتوبر کو ختم ہونے والے ہفتہ کے اعدادوشمار سے پتہ چلتا ہے کہ جن لوگوں کے ٹیسٹ کیے گئے تھے ان میں سے صرف 15.1٪ نے اپنے نتائج 24 گھنٹوں کے اندر اندر حاصل کرلیے جو پچھلے ہفتے میں 32.8 فیصد سے کم ہوگئے۔ اعدادوشمار میں بھی کمی واقع ہوئی ہے جو مثبت ٹیسٹ آنے والے لوگوں کے قریبی رابطوں کے تناسب میں 59.6% فیصد رہ گئی ہے۔ سائنسی کمیٹی سیج جو حکومت کو مشورہ دیتی ہےنے کہا ہے کہ مناسب طریقے سے کام کرنے کے لئے کم سے کم 80٪ رابطوں کو الگ تھلگ کرنے کی ضرورت ہوگی_ سکریٹری صحت میٹ ہینکوک نے پہلے کہا ہے کہ 31اکتوبر تک ایک دن میں 500،000 ٹیسٹ کروائے جاسکتے ہیں۔ تازہ ترین اعداد و شمار سے معلوم ہوا کہ 22 اکتوبر کو 340،132 ٹیسٹ پر کارروائی کی گئی جس کی گنجائش 361،573 ہے۔ ہفتے کے روز مزید 23،012 نئے کورونا وائرس کیس رپورٹ ہوئے اور مثبت ٹیسٹ کے 28 دن کے اندر اندر 174 اموات ہوئیں۔

یورپ سے سے مزید