روزے میں انجکشن لگانے کا حکم
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

تفہیم المسائل

سوال: ۔میں شوگر کا مریض ہوں، کیا میں روزے کے دوران انسولین لگواسکتا ہوں ؟ کمزوری کی صورت میں طاقت یا گلوکوز کا انجکشن لگوایاجاسکتا ہے؟اس سے روزے پر کوئی اثر پڑے گا یا نہیں؟ (تنویر اقبال کراچی )

جواب: روزے کے بارے میں اُصول یہ بیان کیا گیا ہے :ترجمہ:’’حضرت ابن عباسؓ اور حضرت عکرمہؓ بیان کرتے ہیں کہ روزہ کسی چیز کے داخل ہونے سے ٹوٹتا ہے، خارج ہونے سے نہیں ٹوٹتا، (صحیح بخاری ،باب الحجامۃ والقیٔ للصَّائم)‘‘۔ ہماری تحقیق کے مطابق آنکھ میں دواڈالنے یا کسی بھی قسم کا انجکشن لگانے سے روزہ فاسد ہوجاتا ہے ،بعض علماء کے نزدیک اِس سے روزہ نہیں ٹوٹتا۔ جس مسئلے کے بارے میں قرآن وحدیث میں صریح حکم نہ ہو ،وہ مسئلہ اجتہادی کہلاتا ہے، اس میں لوگوں کو جس عالم پر اعتماد ہو ،اُس کے فتوے پر عمل کریں ۔ اجتہادی مسائل میں فقہاء کا اختلاف ایساہی ہے ،جس طرح ہمارے اعلیٰ عدالتی فیصلوں کا ماخَذ آئین ،قانون اور مُسلَّمہ عدالتی نظائرہوتے ہیں ،لیکن بعض اوقات اعلیٰ عدالتوں کے ججوں کے فیصلے ایک دوسرے سے مختلف ہوتے ہیں ۔ 

اجتہادی مسائل میں فقہاء کے اختلاف کی صورت بھی یہی ہے ۔شام کے مشہور حنفی فقیہ ڈاکٹر وھبہ الزوحیلیؒ لکھتے ہیں:ترجمہ: ’’انجکشن پٹھوں میں جلد کے اندرلگانا ہو یا رگوں میں لگانا ہو،بہتر یہ ہے کہ روزے کی حالت میں نہ لگائے اور افطار کے وقت تک انتظار کرے ،اگر رگوںمیں خون لگائے گا ،توروزہ فاسد ہوجائے گا ،(فقہ الاسلامی وادِلّتہ)‘‘۔روزے میں انجکشن لگوانے سے صرف روزہ کی قضا لازم ہوگی ،کفارہ لازم نہیں ہوگا۔ اِنسولین کے بارے میں بھی ہمارا موقف یہی ہے ۔