Raza Ali Abidi - Urdu Columns Pakistan | Jang Columns
| |
Home Page
بدھ 24 ربیع الاوّل 1439ھ 13 دسمبر2017ء
رضا علی عابدی
دوسرا رخ
December 08, 2017
تبدیلی یا نظر کا دھوکا؟

میں پاکستان میں ہوں اور دیکھ رہا ہوں کہ تبدیلی آرہی ہے۔ مقام بدل رہے ہیں، جگہ بدل رہی ہے۔رویّے بدل رہے ہیں، انسانی رشتے بدل رہے ہیں اور سب سے بڑھ کر یہ کہ لوگ تبدیل ہورہے ہیں۔ ترجیحات پہلے جیسی نہیں رہیں۔پسند نا پسند کچھ کی کچھ ہو گئی ہے اور قدم پہلے جدھر اٹھتے تھے، اٹھنے بند ہوگئے ہیں۔رُخ اختیار کرنے میں لوگ پہلی جیسی احتیاط نہیں...
December 01, 2017
ہمایوں کا مقبرہ کیوں گرادیا جائے

غالب کو ایک کمال حاصل تھا۔ انیسویںصدی میں وہ بات کہہ گئے جو آج کے حالات پر یوں چسپاں ہوتی ہے جیسے آج ہی کے لئے کہی گئی تھی۔ کہتے ہیں:ہوئی جن سے توقع خستگی کی داد پانے کی وہ ہم سے بھی زیادہ کشتہء تیغ ستم نکلےابھی ہم منتظر تھے کہ بھارت کے مسلمان تاج محل کوگرادینے کے متعصبانہ نعرے کے خلاف ہماری فریاد کی لے میں لے ملائیں گے کہ ملک کے...
November 24, 2017
پورے وجود کی پیوندکاری

دنیا عجائب گھرہے۔ اس میں عجوبے آباد ہیں۔ ان کی کچھ کہانیاں ایسی ہیں کہ یقین کرنا مشکل ہے۔ ایسی ہی یہ کہانی برطانیہ کی ایک خاتون کی ہے۔دردمند دل توبہت سے سینوں میں دھڑکتے ہوں گے مگر ان خاتون کا قصہ سن کر لگتا ہے کہ ایسا پہلی بار ہورہا ہے۔ ہوا یہ ہے کہ خاتون امید سے ہیں اور ان کے ہاں ولادت ہونے ہی والی ہے۔ ماہر ڈاکٹر ان کی شروع ہی سے...
November 17, 2017
جہانگیر پارک کے نصیب جاگ اٹھے

پاکستان میں ایک اچھا کام بھی ہوا ہے۔ اجڑے،ویران پڑے اور تباہ حال جہانگیر پارک کو بنا سنوار کر ایسے نکھار دیا گیا ہے جیسے کوئی معمار اسے ابھی ابھی مکمل کر کے گیا ہے۔ کراچی کے بے حد بارونق علاقے میںجو صدر کہلاتا ہے، یہ ایک سو تیس سال سے زیادہ پرانا باغ گزرے ہوئے کتنے ہی زمانوں کا گواہ ہے۔ اس نے آتے جاتے وقت کو قریب سے دیکھا ہے۔ سنہ...
November 10, 2017
کراچی کے دامن پر داغ

یہ کیا ہوگیا کراچی والوں کو۔ پہلے تو ایسے نہ تھے۔ کچھ سیدھے سادھے لوگ لی مارکیٹ،لیاری، چاکی واڑہ ، کھارادر ، میٹھا در میں بسے ہوئے تھے۔ کچھ گجراتی بولنے والے پرُامن باشندے تھے، کچھی، میمن اور بوہرے۔ کچھ انگریزوں کا زمانہ دیکھے ہوئے لوگ تھے جو خود بھی آرام سے رہتے تھے اور دوسروں کو بھی چین سے رہنے دیتے تھے۔ اور جو پارسی تھے ان کی...
November 03, 2017
فیس بُک عرف کتاب چہرہ

اگر میرے بزرگ دوبارہ جی اٹھیں اور انہیں پتہ چلے کہ دو تین سو خواتین میری فرینڈ ہیں تو وہ یا تو مجھے مارڈالیں یا صدمے سے دوبارہ مر جائیں ۔اردو میں فرینڈ کو دوست اور یار کہتے ہیں۔ اب کوئی تصور کرے کہ سینکڑوں خواتین میری دوست ہیں تو عام حالات میں اس بات پر چاقو چل جائیں۔ لیکن سوچنے کی بات یہ ہے کہ لفظوں کا گورکھ دھندا سمجھ میں آنا اتنا...
October 27, 2017
بچّو،اس جگہ تاج محل تھا

شاہ جہاں سے بڑی حماقت ہوئی۔ تاج محل جیسی دلکش عمارت بے قدروں کی سرزمین پر اٹھادی۔ ایسے درندہ صفت کٹّر لوگ جو تاج محل کو تاراج کرکے اس کی جگہ ہل چلا نا چاہتے ہیں۔ یہ متعصب لوگ اسی قابل تھے کہ قیامت تک ہل ہی جوتا کرتے اور اوپلے تھاپا کرتے ۔ کہاں یہ بد ذوق غولِ بیابانی اور کہاں جمنا کے دھندلے کنارے خوابوں جیسی فضا میں چپ چاپ کھڑی ہوئی یہ...
October 20, 2017
وہ ایک تھپّڑ

کبھی آپ نے لفظوں کو بولتے سنا ہے؟آپ نے کبھی محسوس کیا ہے کہ بعض لفظوں میں صرف ان کے معنی ہی نہیں، ان کی آواز بھی شامل ہوتی ہے۔ سچ پوچھئے تو کچھ لفظ بعد میں بنے ہوں گے، پہلے ان کی آواز بنی ہوگی۔ جس کی ایک بڑی مثال پڑھئے، بلکہ سنئے۔ وہ لفظ ہے ’تھپّڑ‘۔ایک طاقتور بازو ہو، توانا ہاتھ ہو جسے پنجہ بھی کہہ سکتے ہیں، ساتھ میں غضب کا...
October 13, 2017
وہ ذرا سی مسکراہٹ

آج پھر مجھے سونے کا کھنکتا ہوا سکّہ ملا۔ آج پھر ایک بچّہ مجھے دیکھ کر مسکرایا۔ وہ ایک ذرا سا تبسّم، وہ ہونٹوں پر دھنک جیسے دھیمے سے رنگ، وہ چہرے پر ابھی ابھی کھلا ہوا گلاب، وہ ذرا سی شبنم میں تر لب، وہ کہنے کو ہونٹوں سے لیکن سارے وجود سے چھلکتی شوخی، انسان اس پر قربان نہ جائے تو کیا کرے۔میں بالکل بھولا ہوا تھا کہ ہر سال اکتوبر کے...
October 06, 2017
کینیڈا میں شاہرائہ بہشت

آپ نے بہشتی دروازے کا ذکر سنا ہوگا۔ کسی بزرگ کی درگاہ میں قائم یہ دروازہ سال کے سال کھلتا ہے۔ ایک مجمع کوشش کرتا ہے کہ ایک بار اس دروازے سے گزر جائے۔ بس سمجھئے کہ جس نے یہ سعادت پالی، بہشت میں اس کا ٹھکانہ بن گیا۔ پچھلے دنوں اخبار پڑھتے پڑھتے میں نے ایک اور سعادت کا حال پڑھا۔ جی چاہا کہ دوسروں کو بھی اس کا حصہ دار بنایا جائے۔ یہ قصہ...
September 30, 2017
دیکھو میری تعلیم یافتہ بیٹی

ویسے تو میرے دوست کہا ں نہیں رہتے۔ لیکن آج جس دوست کا ذکرہے وہ پاکستان کے صحرائی علاقے تھرپارکر میں رہتا ہے۔ وہاں کوئی نوکوٹ ہے، نقشے پر دور دراز چھوٹا سا قصبہ۔ میرا دوست ارشاد علی وہیں رہتا ہے۔ اسکے ساتھ اس کی بیوی، بیٹا اسامہ اور کمسن بیٹی عریشہ رہتی ہے۔جب ہم تعارف کے مرحلے سے گزر رہے تھے تو میں نے ارشاد علی سے پوچھا کہ اس ذرا سی...
September 22, 2017
کیا ہمارے بزرگ تنہائی کا شکار ہیں

ایک چھوٹے سے منظر کی بات ہے۔ منظر جس نے ذہن میں چھوٹی سی شمع روشن نہیںکی، ایک بڑا سا الاؤ بھڑکا دیا۔ پہلے تویہ منظر نگاہوں کے سامنے سے یوں گزر ا جیسے چلتی ہوئی گاڑی کے اندر سے نظر آنے والا ہر منظر گزرا کرتا ہے۔ اس کے بعد وقت گزرتا گیا۔ وقت گزرتا ہے تو سب کچھ بدل جاتا ہے۔ مگراُس روز عجب واقعہ ہوا۔ وقت گزرا پر منظر نہ بدلا۔ جو ں کا توں...
September 15, 2017
علم کا ایک اور سفینہ غرقاب ہوا

علم کا ایک اور سفینہ ڈوب گیا۔ بھوپال کی تاریخی اقبال لائبریری کو پچھلے دنوں کی بارش نگل گئی۔ اگست کا آخری ہفتہ تھا۔ ایک روز بادل ٹوٹ کے برسا۔ کہتے ہیں صرف ڈیڑھ گھنٹے کی جھڑی لگی۔ جب بند ہوئی تومنظر یہ تھا کہ کمر کمر پانی میں ڈوبا اقبال لائبریری کا سراسیمہ عملہ کتابوں اور رسالوں کو بچانے کی ناکام کوشش کر رہا تھا۔ کتابوں سے بھری...
September 08, 2017
گوتم بدھ کی واپسی

یاد نہیں کس نے کہا تھا، شاید میں نے ہی کہا تھا کہ درندے سے انسان بننے کا عمل ابھی مکمل نہیں ہوا ہے۔ آج کا انسان اندر سے ابھی تک درندہ ہے البتہ اس پر تہذیب کا ملمع چڑھا رکھا ہے۔ اس بات کی گواہی کے لئے اگر انسانی تاریخ کے ورق کھولے جائیں تو وحشیانہ جور اور بہیمانہ ستم کی داستانیں قطار باندھے کھڑی مل جائیں گی۔انسان نے انسان پر جتنے ظلم...