Advertisement

غزل: آ کے پتھر تو مرے صحن میں دو چار گِرے

October 10, 2018
 

شکیب جلالی

آ کے پتھر تو میرے صحن میں دو چار گِرے

جِتنے اُس پیڑ کے پھل تھے پسِ دیوار گِرے

مُجھکو گِرنا ہے تو پِھر اپنے ہی قدنوں پہ گِروں

جِس طرح سائہِ دیوار پہ دیوار گِرے

تیرگی چھوڑ گئی دِل میں اُجالے کے خطوط

یہ سِتارے میرے گھر ٹوٹ کے بیکار گِرے

کیا کہوں دیدہِ تر ، یہ تو مِرا چہرا ہے

سنگ کٹ جاتے ہیں بارِش کی جہاں دھار گِرے


مکمل خبر پڑھیں