• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

یورپی یونین، افغانستان میں محاذ آرائی کے خاتمے اور بحالی امن کیلئے کردار ادا کرے، پاکستان

پاکستان کے وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے وزارتِ خارجہ میں یورپین پارلیمنٹ کے چار رکنی ساؤتھ ایشیا ڈیلیگیشن (DSAS) سے ملاقات کی۔

یورپین پارلیمنٹ کے ساؤتھ ایشیا وفد کی قیادت چئیرپرسن نکولا پروکاسینی ایم ای پی نے کی۔ وفد کے دیگر ارکان میں یورپین پارلیمنٹ کی گرینز کی جانب سے نائب صدر ہائیدی ہوتالا ایم ای پی، لوئیس گاریکانو ایم ای پی اور توماش زیدو خووشکی ایم ای پی شامل تھے۔

دوران ملاقات پاکستان اور یورپی یونین کے مابین کثیرالجہتی شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے فروغ و اہم علاقائی و عالمی امور پر تبادلہ خیال ہوا۔ اس موقع پر وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان اور یورپی یونین کے مابین "یورپی یونین اسٹریٹیجک انگیجمنٹ پلان (SEP) اور دو طرفہ کثیر الجہتی تعاون بڑھانے کے لیے ایک ٹھوس بنیاد اور فریم ورک مہیا کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان اور یورپی یونین کے مابین اسٹریٹیجک انگیجمنٹ پلان کا اگلا مرحلہ، دو طرفہ تجارت کے فروغ، پائیدار ترقی کے اہداف کے حصول، موسمیاتی تبدیلیوں سے متعلقہ چیلنجز سے نمٹنے اور ڈیجیٹلائزیشن سے متعلقہ امور کے حوالے سے انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔

انہوں نے وفد کو مزید آگاہ کیا کہ یورپی یونین کی جانب سے پاکستان کو "جی ایس پی پلس" کی سہولت باہمی طور پر فائدہ مند رہی ہے۔ جی ایس پی پلس اسٹیٹس نے دونوں فریقوں کے درمیان تجارت کے فروغ میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

وزیر خارجہ نے کورونا وبا کے دوران یورپی یونین کی جانب سے فراہم کردہ معاونت کو بھی سراہا۔ ملاقات میں فریقین نے پاکستان اور یورپی یونین کے تعلقات کو مزید مستحکم بنانے کیلئے نتیجہ خیز اور تعمیری شراکت داری کی بنیاد پر مشترکہ کاوشیں جاری رکھنے کی ضرورت پر زور دیا۔

فریقین کے مابین افغانستان کی موجودہ صورتحال پر بھی تفصیلی تبادلہ خیال ہوا۔ وزیر خارجہ نے وفد کو آگاہ کیا کہ پاکستان قریبی ہمسایہ ہونے کے ناطے گذشتہ 40 سال سے افغانستان میں جاری جنگ و جدل کے باعث سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی برادری میں افغانستان کی مخدوش معاشی صورتحال کا ادراک خوش آئند ہے۔ ضرورت اس امر کا تقاضہ کرتی ہے کہ عالمی برادری افغان شہریوں کی اقتصادی بحالی کیلئے ہنگامی بنیادوں پر ٹھوس اقدامات کرے۔

وزیر خارجہ نے یورپی یونین پر زور دیا کہ وہ افغانستان میں گذشتہ چار دہائیوں سے جاری محاذ آرائی کے خاتمے اور افغانستان میں دیرپا امن کیلئے اپنا کردار ادا کرے۔ انھوں نے یورپی یونین کے وفد کو کابل سے انخلاء کے عمل کے دوران پاکستان کی جانب سے فراہم کردہ معاونت کی تفصیلات سے آگاہ کیا۔

یورپی یونین کے وفد نے کابل سے یورپی ممالک کے سفارتی عملے اور شہریوں کے محفوظ انخلاء میں پاکستان کی معاونت کو سراہتے ہوئے وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی اور پاکستانی قیادت کا شکریہ ادا کیا۔

وزیر خارجہ نے یورپی یونین کے وفد کی توجہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری بھارتی مظالم اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کی جانب مبذول کروائی۔

وزیر خارجہ نے پاکستان کےاس عزم کو دہرایا کہ پاکستان خطے میں امن و استحکام کا خواہاں ہے۔

ملاقات میں دونوں فریقین نے پاکستان اور یورپی یونین کے مابین دو طرفہ تعلقات کو مزید مستحکم بنانے کیلئے پہلے سے موجود میکنزم کو مزید فعال بنانے کے عزم کا اظہار بھی کیا۔ ملاقات کے موقع پر یورپین یونین کی سفیر اندرولا کامینارا بھی موجود تھیں۔

قومی خبریں سے مزید