• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

امریکی قانون سازوں کا غیراعلانیہ دورہ تائیوان

تائی پے ( نیوز ڈیسک) امریکا کے 5قانون سازوں نے تائیوان کا غیرعلانیہ دورہ کیا، جس میں انہوں نے صدر سائی انگ وین اور دیگر حکام سے ملاقاتیں کی۔ اس موقع پر قانون سازوں کا کہنا تھا کہ اس دورے کا مقصد تائیوان کے خود مختار جزیرے کے لیے امریکا کی چٹان کی طرح مضبوط حمایت کا اعادہ کرنا ہے۔ ایوان نمائندگان کا یہ وفد ڈیموکریٹک اور ری پبلکن پارٹیوں پر مشتمل ہے۔ تائیوان میں امریکی انسٹیٹیوٹ، جو در حقیقت سفارت خانہ ہے، اس کے مطابق کانگریس کے ارکان تائیوان کی صدر کے علاوہ دوسرے اعلیٰ رہنماؤں سے ملاقات کریں گے۔ خبر رساں ادارے ایسو سی ایٹڈ پریس کے مطابق، قانون سازوں کا یہ اچانک دورہ ایسے وقت ہو رہا ہے جب چین اور تائیوان میں کشیدگی گزشتہ کئی عشروں میں سب سے زیادہ ہے۔ خیال رہے کہ 1949ء میں ہونے والی خانہ جنگی کے بعد سے تائیوان کی اپنی خود مختار حکومت چلی آرہی ہے، لیکن چین اس جزیرے کو اپنے علاقے کا حصہ سمجھتا ہے۔ امریکی وفد میں شامل رکن کانگریس نینسی میس نے ایک ٹوئٹ میں لکھا کہ جب اس دورے کی خبر سامنے آئی تو چین کے سفارت خانے نے ان کے دفتر سے کہا کہ اس دورے کو منسوخ کردیں۔ نینسی میس کے علاوہ ڈیموکریٹک قانون ساز مارک ٹکانو، ڈیموکریٹک رکن کانگریس کالن آلریڈ، ڈیموکریٹک قانون ساز سارا جیکبزاور ڈیموکریٹک رکن کانگریس ایلیسا سٹاٹکین اس وفد میں شامل ہیں۔
یورپ سے سے مزید