• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

بیلجیئم کے ساتھ دو طرفہ شراکت داری کو مزید مضبوط بنانےکے متمنی ہیں، شاہ محمود

پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے برسلز میں بیلجیئن نائب وزیراعظم و وزیر خارجہ صوفی ولمس سے ملاقات کی ہے۔ 

دوران ملاقات پاکستان اور بیلجیئم کے مابین دو طرفہ تعلقات کے تمام پہلوؤں کا جائزہ لیا گیا۔ وزیر خارجہ نے دورہ بیلجیئم کی دعوت پر اپنی بیلجیئن ہم منصب صوفی ولمس کا شکریہ ادا کیا۔ 

ستمبر میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 76ویں اجلاس کے موقع پر ہونے والی ملاقات اور اگست میں ہونے والی ٹیلیفونک گفتگو کا حوالہ دیتے ہوئے وزیر خارجہ نے اس بات پر زور دیا کہ پاکستان بیلجئیم کو ایک قریبی دوست اور ایک اہم تجارتی شراکت دار کے طور پر قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔

وزیر خارجہ نے پاکستان اور بیلجیئم کے مابین دو طرفہ تجارت میں خاطر خواہ اضافے اور باہمی دلچسپی کے شعبہ جات میں بڑھتے ہوئے دو طرفہ تعاون کو سراہا۔

انھوں نے پاکستان اور بیلجیئم کے درمیان تجارت اور سرمایہ کاری کے فروغ کے لئے پاکستان کے عزم کا اعادہ بھی کیا ۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان بیلجیئم کے ساتھ دو طرفہ شراکت داری کو مزید مضبوط بنانے اور سیاسی، اقتصادی، تجارتی، تعلیمی ، سائنسی و کثیر الجہتی شعبوں میں تعاون کو وسعت دینے کا متمنی ہے۔

علاقائی صورتحال پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہا کہ پرامن اور مستحکم افغانستان نہ صرف پاکستان بلکہ پورے خطے کے لیے انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔

افغانستان میں انسانی بحران کی صورتحال کو قابو میں لانے، معیشت کی بحالی اور دیرپا امن و استحکام کے لیے عالمی برادری کو موثر اور سنجیدہ کاوشیں بروئے کار لانا ہوں گی۔ 

 افغانستان میں ابھرتے ہوئے انسانی بحران سے نمٹنے، مہاجرین کی نقل مکانی کے ممکنہ خطرے کو روکنے اور افغانستان کو ایک بار پھر دہشت گردوں کی پناہ گاہ بننے سے محفوظ رکھنے کیلئے عالمی برادری کا تعاون ناگزیر ہے۔

شاہ محمود قریشی نے اپنی بیلجیئن ہم منصب کو بتایا کہ پاکستان عالمی برادری کی توجہ افغانستان کی مخدوش معاشی صورتحال کی جانب مبذول کروانے کیلئے 19 دسمبر کو او آئی سی کی وزرائے خارجہ کونسل کے غیر معمولی اجلاس کی میزبانی کررہا ہے۔

وزیر خارجہ نے اپنی ہم منصب کو بھارت کی جانب سے مقبوضہ جموں و کشمیر (IOJ&K) میں جاری انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں اور خطے کے امن کو درپیش خطرات سے آگاہ کیا۔

انہوں نے بتایا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی مسلسل خلاف ورزیاں اور کشمیری عوام کو حق خودارادیت کی فراہمی سے انکار، پاکستان اور بھارت کے درمیان تعلقات کو معمول پر لانے میں سب سے بڑی رکاوٹیں ہیں۔

کسی بھی بامعنی گفت و شنید کی راہ ہموار کرنے کیلئے بھارت سرکار کو اپنے 5 اگست 2019 کے غیر قانونی اور یک طرفہ اقدامات پر نظر ثانی کرنا ہو گی۔ اس موقع پر بیلجیئم کی نائب وزیراعظم اور وزیر خارجہ صوفی ولمس نے پاکستان اور بیلجیئم کے درمیان دو طرفہ تعلقات میں مثبت پیش رفت پر اطمینان کا اظہار کیا۔

 بیلجیئم کی نائب وزیر اعظم و وزیر خارجہ نے سفارتی اہلکاروں، بین الاقوامی تنظیموں کے عملے و دیگر غیر ملکیوں کے کابل سے محفوظ انخلاء میں بھرپور معاونت فراہم کرنے پر وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی اور پاکستان کی دیگر قیادت کا شکریہ ادا کیا۔

 انہوں نے خاص طور پر  آپریشن ’ریڈ کائٹ‘ کے کامیاب انعقاد کے لیے پاکستان کی حمایت پر شکریہ ادا کیا، جس میں 201 بیلجیئن شہریوں سمیت 1400 افراد کو افغانستان سے بحفاظت نکالا گیا۔

واضح رہے کہ تقریباً ایک دہائی کے بعد پاکستان کے کسی وزیر خارجہ کا یہ پہلا دورہ بیلجیئم ہے۔

توقع ہے کہ وزیر خارجہ کے حالیہ دورے سے پاکستان اور بیلجیئم کے درمیان دوطرفہ تعلقات  مزید مستحکم ہوں گے۔ اس موقع پر وزیر خارجہ  نے بیلجیئم کی نائب وزیر اعظم اور وزیر خارجہ صوفی ولمس کو دورہ پاکستان کی دعوت دی جسے انہوں نے بخوشی قبول کرتے ہوئے وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کا شکریہ ادا کیا۔

قومی خبریں سے مزید