آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
بدھ12 ربیع الاوّل 1440ھ 21؍نومبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

چند ہفتے قبل کی بات ہے۔ مقامی پولیس کے جوان انار کلی میں معمول کا گشت کر رہے تھے۔ غالباً ان کو سلامتی کے حوالے سے غیر معمولی حالات کے سبب سے یہ ہدایت جاری کی گئی تھی کہ غیر ملکی افراد کی تمام احترام کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے شناختی دستاویزات کی جانچ پڑتال کریں۔ دنیا بھر میں یہ ایک معمول کا معاملہ تصور کیا جاتا ہے اور دوست ممالک کے شہری بھی اس پر ناگواری کا احساس ظاہر نہیں کرتے۔ قصہ مختصر، پولیس نے چند چینی افراد کو چہل قدمی کرتے ہوئے دیکھا اور دوستوں سے شناخت طلب کی۔ مگر رد عمل غیر معمولی طور پر غیر متوقع اور جارحانہ سامنے آیا۔ پولیس والے بھونچکا رہ گئے۔ جب ان افراد نے اپنی شناخت کروانے اور کسی بھی قسم کی شناختی دستاویزات پیش نہ کرنے کا رویہ اپنایا، غیر ملکی اور وہ بھی چینی۔ پولیس والوں کو سمجھ نہ آیا کہ چوک میں لگے اس تماشے سے جان کیسے چھڑائیں۔ بہرحال جان کسی نہ کسی طرح چھڑا لی گئی۔ مگر اس واقعے نے ہر اس شخص کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا جو کہ پاکستان اور چین کی مستحکم دوستی میں دونوں ملکوں کا مفاد دیکھتا ہے۔ کیونکہ اس نوعیت کے چھوٹے چھوٹے واقعات غلط فہمی اور رفتہ رفتہ معاملات کو بدمزگی کے حوالے کر ڈالتے ہیں۔ لازم ہے کہ ہم پاک چین دوستی کو ان دونوں المیوں سے بچانے کی غرض سے کھل کر اپنا نقطہ نظر بیان کریں۔

گزشتہ سال کی آخری سہ ماہی میں چینیوں کی دعوت پر دو بار چین کی سرزمین پر وقت گزارنے کا موقع ملا۔ دوستوں نے اس امر کا برملا اظہار کیا کہ انہیں سی پیک کے منصوبے کے پایہ تکمیل تک پہنچانے میں پاکستان میں کچھ رکاوٹیں درپیش ہیں۔ غیر ضروری رکاوٹیں، شکایات افسوس ناک تھیں۔ اسی طرح پاکستان کے سرکاری ، سیاسی اور صحافتی حلقوں میں بھی بعض رویوں کے سبب سے چین کے معاملات پر ایک ابہام نظر آیا۔ دوستوں میں شکایت کی کیفیت ہو یا ابہام کا معاملہ۔ رفع فوراً ہونا چاہیے۔ پاکستان کے مقتدر سیاسی اور غیر سیاسی حلقوں میں اس امر پر کافی تشویش پائی جاتی ہے کہ جو چینی حکومت چین کی طرف سے پاکستان آ رہے ہیں۔ وہ تو مکمل دستاویزات رکھتے ہیں مگر جو چینی براہ راست حکومت چین کی طرف سے نہیں آ رہے ان کی دستاویزات نا مکمل بلکہ مشکوک تک پائی گئی ہیں۔ مشکوک دستاویزات کے حامل افراد مشکوک دستاویزات پر کیوں سفر کر رہے ہیں؟ معاملے نے اس وقت مزید چونکا دیا۔ جب چینی باشندے ایک صوبے سے غائب ہوئے اور بدقسمتی سے قتل ہو گئے۔ چونکنے کا معاملہ یہ تھا کہ یہ ویزا جن وجوہات کی بنا پر لیکر آئے تھے اس کی بجائے عیسائیت کی تبلیغ میں، درپردہ، مصروف تھے۔ ایسی مزید مذہبی سرگرمیاں دیکھنے کو مل رہی ہیں۔ مقصد صرف تبلیغ ہے، اس کے آگے سوالیہ نشان ہے۔ پاکستان میں غیر ملکی افراد کی حصص کی خریداری اور جائیداد خریدنے کے لئے باضابطہ قوانین موجود ہیں جو ان قوانین کے اندر رہتے ہوئے باآسانی خریدی جا سکتی ہے۔ کچھ معاملات میں سامنے یہ آیا کہ پاکستانیوں کو فرنٹ مین بنا کر جائیداد، حصص چینیوں نے خرید لئے۔ کاروبار کی دنیا میں کاروباری حربے ضرور استعمال کیے جاتے ہیں مگر ایسے حربے جن سے تشویش جنم لے، سی پیک اور دیگر سفارتی معاملات کے حوالے سے بہت نقصان دہ ثابت ہونگے۔ کاروبار کے حوالے سے یہ بھی دیکھنے میں آ رہا ہے کہ بعض کاروبار کے دفاتر بنائے گئے مگر ان دفاتر سے کاروبار نہیں کیا جا رہا۔ کاروبار کے دفاتر سے اگر کاروبار نہ کیا جا رہا ہو تو ۔ دھوکے بازی کی جا رہی ہوتی ہے۔ یہ تصور کیا کیا گل کھلا سکتا ہے؟ اسی طرح پرائیویٹ سکیورٹی ایجنسیز کے قیام کا پاکستان میں طریقہ کار وضع کر دیا گیا ہے۔ کوئی کتنا ہی دوست کیوں نہ ہواسے قانونی طریقہ کار سے روگردانی کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ شکایت اس حوالے سے بھی موجود ہیں۔ ابھی ان معاملات کی مکمل رونمائی عوامی طبقات میں نہیں ہوئی۔ اس لئے عوامی سطح پر یہ زیر بحث بھی نہیں۔ کچھ دن قبل پشتونخواہ ملی عوامی پارٹی کے سینیٹر عثمان خان کاکڑ میرے پاس تشریف لائے۔ دوران گفتگو کہنے لگے کہ ورلڈ بینک اور آئی ایم ایف کا قرضہ نہ دے سکو تو وہ مزید قرضہ دے کر اپنا قرضہ واپس نکلوانے کی سبیل کرتے ہیں مگر سری لنکا جب چین کا قرضہ نہ دے سکا تو آج اس کی بندرگاہ چین کے پاس ہے۔ اس میں کوئی دورائے نہیں کہ پاکستان اور چین کی دوستی دونوں ممالک کے لئے بہت اہمیت کی حامل ہے۔ چین میں جو بھی سی پیک پر بریفنگ ملی اس میں چینی دوستوں نے برملا اعتراف کیا کہ چین کے لئے سی پیک بنیادی اور پائلٹ پروجیکٹ ہے اور نہایت ضروری ۔ پاکستان کے لئے اس پائلٹ پروجیکٹ کی اہمیت کسی سے پوشیدہ نہیں۔ جن مسائل کے حوالے سے گفتگو کی گئی ہے ابھی اپنی ابتدائی شکل میں سامنے آرہے ہیں۔ لامحالہ جب سی پیک جیسے بڑے منصوبے پر عملدرآمد کیا جاتا ہے تو اس کے ساتھ نئے نئے چیلنج بھی درپیش ہوتے ہیں۔ یہ بھی اس نوعیت کے معاملات ہیں۔ دونوں ممالک کی حکومتوں کو فی الفور ان پر مشاورت کا عمل شروع کر دینا چاہئے۔ کیونکہ چھوٹی چھوٹی باتیں بسا اوقات بہت بڑی بن جاتی ہیں۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں