A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined index: HTTP_REFERER

Filename: front/layout_front.php

Line Number: 246

Backtrace:

File: /var/www/js.jang.com.pk/application_jang/views/front/layout_front.php
Line: 246
Function: _error_handler

File: /var/www/js.jang.com.pk/application_jang/third_party/MX/Loader.php
Line: 351
Function: include

File: /var/www/js.jang.com.pk/application_jang/third_party/MX/Loader.php
Line: 294
Function: _ci_load

File: /var/www/js.jang.com.pk/application_jang/modules/frontend/controllers/Detail.php
Line: 464
Function: view

File: /var/www/js.jang.com.pk/html/index.php
Line: 333
Function: require_once

آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
منگل 15؍ صفرالمظفر 1441ھ 15؍اکتوبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

طنزو مزاح کے بے تاج بادشاہ، اداکار لہری

اداکار لہری کو مداحوں سے بچھڑے 7 برس بیت گئے


منفرد انداز اور بے ساختہ جملوں کے لیے مشہور نامور مزاحیہ اداکار لہری کو مداحوں سے بچھڑے 7 برس بیت گئے۔

اپنے انداز بیان سے سب کو متاثر کرنے والے پاکستان کے معروف فنکار سفیر اللہ صدیقی المعروف لہری 2 جنوری 1929 کو بھارت کے شہر کانپور میں پیداہوئےاور وہیں ان کی پرورش ہوئی ۔تقسیم بھارت کے بعد وہ اپنے اہل خانہ کے ہمراہ پاکستان آگئے اور کراچی میں رہنے لگے۔

لہری نے فن کی دنیا میں پہلا قدم اسلامیہ کالج میں ’مریض عشق ‘نامی ایک ڈرامے میں پرفارمنس دے کر کیا جس میں انہیں بے انتہا پذیرائی ملی، وہ اس کامیابی پر خوشی سے سرشار ہوکر آڈیشن دینے ریڈیو پاکستان پہنچ گئے لیکن بدقسمتی سےانہیں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔

ناکامی کے باوجود انہوں نے ہمت نہیں ہاری اور انتھک محنت کے بعد آخر قسمت کی دیوی ان پر مہربان ہوگئی،1955ء میں لچھو سیٹھ (شیخ لطیف فلم ایکسچینج والے) نے فلم ’انوکھی‘ بنانے کا اعلان کیا جس میں لہری کوبطور ہیرو کاسٹ کیا گیا۔

انہو ں نے فلم ’’افشاں، رم جھم، چھوٹی بہن، بالم، جلتے سورج کے نیچے، پھول میرے گلشن کا ، انجان اور پرنس میں اپنی لاجواب مزاحیہ اداکاری سے انگنت نقوش چھوڑے۔

لہری نے 300 سے زائد فلموں میں کام کیا، کئی برس تک مسلسل لاجواب کردار نگاری پر 13 نگار ایوارڈز کے علاوہ ملکی اداروں کی جانب سے لاتعداد ایوارڈز حاصل کیے۔

  1996ء میں ا نہیں صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی سے بھی نوازا گیا۔

لہری کا فلمی سفر اپنی آخری فلم دھنک تک 23 برس پر محیط رہا جس کے بعد وہ 13 ستمبر 2012ء کو 83 برس کی عمر میں خالق حقیقی سے جاملے۔