آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
بدھ24؍ جمادی الثانی 1441ھ 19؍ فروری 2020ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

’قلم تلوار سے زیادہ طاقتور نہیں ‘

مقبوضہ کشمیر سے تعلق رکھنے والی سابقہ بالی ووڈ اداکارہ زائرہ وسیم نے نامعلوم حوالے سے ایک اقتباس شیئر کیا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر زائرہ نے لکھا کہ ’ قلم میں تلوار سے زیادہ طاقت نہیں ہے، قلم جنگیں نہیں جیت سکتا اور تلوار شاعری نہیں لکھ سکتی لیکن طاقتور وہ ہاتھ ہے جسے یہ معلوم ہے کہ قلم کب اٹھانا ہے... اور تلوار کب اٹھانی ہے۔‘

یہ بھی پڑھیے: یہ غلط ہے کہ کشمیر میں سکون ہو چکا: زائرہ وسیم

اس سے قبل بھی زائرہ سوشل میڈیا پر مقبوضہ وادی میں بھارتی فوج کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزی کے خلاف اپنی آواز بلند کرتی رہی ہیں۔

View this post on Instagram

Kashmir continues to suffer and see- saw between hope and frustration। There’s a false and uneasy semblance of calmness in place of escalating despair and sorrow। Kashmiris continue to exist and suffer in a world where it is so easy to place restrictions on our liberty. Why do we have to live in a world where our lives and wills are controlled, dictated and bent? Why is it so easy to have our voices silenced? Why is it so easy to curtail our freedom of expression? Why aren’t we ever allowed to voice our opinions, let alone our disprovals, to decisions that are made contrary to our wishes? Why is it that instead of trying to see the cause of our view, our view is just condemned ruthfully? What is so easy to curb our voices so severely? Why can we not live simple lives without always having to wrestle and remind the world of our existence. Why is that life of a Kashmiri is just about experiencing a lifetime of crisis, blockade and disturbance so abundantly that it has taken away the recognition of normalcy and harmony from the hearts and minds? Hundreds of questions like these-unanswered; leaving us bewildered and frustrated, but our frustrations find no outlet. The authority doesn’t make the slightest effort to put a stop to our doubts and speculations but stubbornly tend to go their own way to confine our existence mired in a confused, conflicted and a paralysed world. But I ask the world, what has altered your acceptance of the misery and oppression we’re being subjected to? Do not believe the unfair representation of the facts and details or the rosy hue that the media has cast on the reality of the situation. Ask questions, re-examine the biased assumptions. Ask questions. For our voices have been silenced- and for how long....none of us really know!

A post shared by Zaira Wasim (@zairawasim_) on


انہوں نے مقبوضہ وادی میں انٹرنیٹ بلیک آؤٹ، بد ترین تشدد اور پر آشوب حالات کی مذمت کرتے ہوئے ایک طویل پوسٹ بھی شیئر کی تھی۔

انہوں نے دنیا کو اس بات سے خبردار کیا تھا کہ ’کشمیر میں سب اچھا ہے کی خبروں پر یقین نہ کریں‘ بلکہ سوال پوچھیں، جانبدارانہ مفروضوں کو دوبارہ جانچیں۔

واضح رہے کہ مودی سرکار نے گزشتہ 186 دنوں سے  80 لاکھ نہتے کشمیریوں کو محصور بنارکھا ہے۔ مظلوم کشمیری، بھارتی ظلم کی چکی میں مسلسل پس رہے ہیں۔

انٹرٹینمنٹ سے مزید