آپ آف لائن ہیں
پیر21؍ذیقعد 1441ھ 13؍جولائی 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

ڈاکٹر جوہر نگار پاکستان کی پہلی خاتون لیفٹیننٹ جنرل،سرجن جنرل تعینات

ڈاکٹر جوہر نگار پاکستان کی پہلی خاتون لیفٹیننٹ جنرل،سرجن جنرل تعینات


کراچی (نیوز ڈیسک، مانیٹرنگ ڈیسک) پاک فوج میں نئی تاریخ رقم کرتے ہوئے ایک خاتون افسر کو پہلی مرتبہ لیفٹیننٹ جنرل کے عہدے پر ترقی دے دی گئی۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کی جانب سے جاری ایک بیان کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے پاک فوج کی میڈیکل کور سے وابستہ میجر جنرل نگار جوہر کو لیفٹیننٹ جنرل کے عہدے پر ترقی دی۔آئی ایس پی آر کے مطابق نگار جوہر لیفٹیننٹ جنرل کے عہدے پر ترقی پانے والی پہلی خاتون افسر ہیں، ساتھ ہی یہ بھی بتایا گیا کہ لیفٹیننٹ جنرل نگار جوہر کو سرجن جنرل آف پاکستان آرمی تعینات کیا گیا ہے۔اس طرح وہ پاک فوج کی تاریخ کی پہلی تھری اسٹار افسر ہونے کے ساتھ ساتھ سرجن جنرل کے عہدے پر کام کرنے والی پہلی خاتون افسر بھی بن گئیں۔آئی ایس پی آر نے بتایا کہ لیفٹیننٹ جنرل نگار جوہر کا تعلق


خیبرپختونخوا کے ضلع صوابی کے علاقے پنج پیر سے ہے اور وہ اس وقت کمانڈنٹ ملٹری اسپتال راولپنڈی میں خدمات انجام دے رہی ہیں۔لیفٹیننٹ جنرل نگار جوہر آرمی میڈیکل کالج کی گریجویٹ ہیں اور پاک فوج میں تقریباً 3 دہائیوں پر مشتمل کیریئر میں انتظامی اور مختلف امور میں سربراہی کا وسیع تجربہ رکھتی ہیں۔انہوں نے فیملی میڈیسن میں ایم سی پی ایس، ایڈوانسڈ میڈیکل ایڈمنسٹریشن میں ایم ایس سی اور صحت عامہ میں ماسٹرز کررکھا ہے۔لیفٹننٹ جنرل نگار جوہر نے کئی دیگر کورسز بھی کیے اوراسپتالوں میں ہنگامی بنیادوں پر تیاریوں سے متعلق امور کی نیشنل انسٹرکٹر بھی ہیں۔انہیں پاک آرمی میں لیفٹننٹ جنرل کے رینک تک پہنچنے والی پاکستان کی پہلی خاتون ہونے کا اعزاز بھی حاصل ہوا ہے۔آرمی میڈیکل کور کے لیے نمایاں خدمات انجام دینے پر انہیں وزیراعظم پاکستان کی جانب سے تمغہ امتیاز ملٹری اور فاطمہ جناح گولڈ میڈل سے بھی نوازا گیا۔انہیں پاک فوج میں کئی عہدوں پر پاکستان کی پہلی خاتون کے طور پر کام کرنے کا اعزاز حاصل ہوا ہے جن میں پاک آرمی میں آزادی کے بعد یونٹ، اسپتال کی کمانڈنگ بھی شامل ہے۔لیفٹننٹ جنرل نگار جوہر نے بریگیڈیئر کی حیثیت سے سی ایم ایچ جہلم کی کمان سنبھالی تھی اور اب مسلح افواج کے سب سے بڑے اسپتال ایمریٹس ملٹری اسپتال راولپنڈی کی کمانڈنگ کر رہی ہیں۔واضح رہے کہ پاک فوج جس انداز میں کورونا وباء کے حوالے سے اپنا کردارادا کررہی ہے اور مختلف جو انٹرنیشنل تجربات کی روشی میں اس وباء کی روک تھا م کے لئے جو اقداما ت کررہی ہے وہ بھی سب کے سامنے ہے اور ایسے موقع پر ان کا سامنے آنا یہ کافی کٹھن جوب ہوگی لیکن جس اندازمیں ان کاکیریئر ہے اس کیریئرکودیکھتے ہوئے یقینا یہ اس وباء اورجو ان کی نئی ذمہ داریاں ہیں اس کوبھی بخوبی انجام دیں گی۔ سرجن جنرل ایک نہایت اہم ترین عہدہ ہے جوپاک فو ج اورتینوں مسلح افواج کے متعلق میڈیکل کے جو شعبے ہیں ان کی دیکھ بھال کرتا ہے اوریہ انتہائی اہم ترین ذمہ داری انہیں سونپی گئی ہے۔اب پوری جومیڈیکل کور ہے اس کی سربراہی بلکہ تینوں مسلح افواج کے متعلقہ شعبے ہیں ان کوتمام کویہ دیکھیں گی۔

اہم خبریں سے مزید