آپ آف لائن ہیں
جمعرات 22؍ ذی الحج 1441ھ13؍اگست2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

عرفان خان کے بیٹے نے بالی ووڈ کی حقیقت سے پردہ اٹھا دیا

رواں سال دنیا سے رخصت ہونے والے بالی ووڈ کے لیجنڈ اداکار عرفان خان کے بیٹے بابیل کا کہنا ہے کہ عالمی سنیما میں بالی ووڈ کا ذکر شاذو نادر ہی ہوتا ہے۔

والد کی وفات کے بعد سے بابیل سوشل میڈیا خصوصاً انسٹاگرام پر کافی فعال دکھائی دے رہے ہیں، کبھی والد کی یاد میں تصویریں تو کبھی اُن کی باتیں اور یادیں مداحوں کے ساتھ شیئر کرتے دکھائی دیتے ہیں۔

حال ہی میں انہوں نے والد کے ساتھ اپنے بچپن کی ایک یادگار تصویر شیئر کرتے ہوئے تفصیلی کیپشن دیا۔

View this post on Instagram

You know one of the most important things my father taught me as a student of cinema? Before I went to film school, he warned me that I’ll have to prove my self as Bollywood is seldom respected in world cinema and at these moments I must inform about the indian cinema that’s beyond our controlled Bollywood. Unfortunately, it did happen. Bollywood was not respected, no awareness of 60’s - 90’s Indian cinema or credibility of opinion. There was literally one single lecture in the world cinema segment about indian cinema called ‘Bollywood and Beyond’, that too gone through in a class full of chuckles. it was tough to even get a sensible conversation about the real Indian cinema of Satyajit Ray and K.Asif going. You know why that is? Because we, as the Indian audience, refused to evolve. My father gave his life trying to elevate the art of acting in the adverse conditions of noughties Bollywood and alas, for almost all of his journey, was defeated in the box office by hunks with six pack abs delivering theatrical one-liners and defying the laws of physics and reality, photoshopped item songs, just blatant sexism and same-old conventional representations of patriarchy (and you must understand, to be defeated at the box office means that majority of the investment in Bollywood would be going to the winners, engulfing us in a vicious circle). Because we as an audience wanted that, we enjoyed it, all we sought was entertainment and safety of thought, so afraid to have our delicate illusion of reality shattered, so unaccepting of any shift in perception. All effort to explore the potential of cinema and its implications on humanity and existentialism was at best kept by the sidelines. Now there is a change, a new fragrance in the wind. A new youth, searching for a new meaning. We must stand our ground, not let this thirst for a deeper meaning be repressed again. A strange feeling beset when Kalki was trolled for looking like a boy when she cut her hair short, that is pure abolishment of potential. (Although I resent that Sushant’s demise has now become a fluster of political debates, but if a positive change is manifesting, in the way of the Taoist, we embrace it.)

A post shared by Babil Khan (@babil.i.k) on


انہوں نے اپنے کیپشن میں بالی ووڈ کی مبینہ خراب روایات کا ذکر کیا اور لکھا کہ عالمی سنیما میں بالی ووڈ کا ذکر کم ہی ہوتا ہے۔

انہوں نے حقیت سے پردہ اٹھاتے ہوئے لکھا کہ عالمی سنیما میں 90 کی دہائی کے بھارتی سنیما کے متعلق کوئی آگاہی نہیں ہے اور آج فلم کے نام پر جو لوگوں کو دکھایا جاتا ہے وہ حقیقت سے بلکل دور ہے۔

بابیل نے اپنے لوگوں اور بالی ووٖڈ پر کھلی تنقید کرتے ہوئے لکھا کہ بدقسمتی سے بھارتی ایسا ہی مواد دیکھنا چاہتے ہیں اور ناظرین اپنی سوچ اور ذوق بدلنے کے لیے تیار ہی نہیں ہیں۔

انہوں نے لکھا کہ والد نے اپنی تمام زندگی اداکاری اور فن کے معیار کو بلند کرتے گزار دی لیکن حقیقت سے دور ان فلموں میں جنس پرستی، پدرشاہی سوچ اور فوٹو شاپ آئٹم سانگز کے ساتھ جملے بازی کرتے سِکس پیک ایبس والے ہنکس نے باکس آفس پر میرے والد کو شکست دی ہے۔

اپنی پوسٹ کے آخر میں بابیل نے امید ظاہر کی کہ بالی ووڈ کو ایک تازہ ہوا کے جھونکے کی ضرورت ہے اور نئی نسل ایک تازہ ہوا کے جھونکے کی مانند ہے جو ان روایات کو تبدیل کرنے میں اہم کردار ادا کرنے کا جذبہ رکھتی ہے۔

انٹرٹینمنٹ سے مزید