آپ آف لائن ہیں
منگل11؍صفر المظفّر 1442ھ 29؍ستمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

یہ بات حوصلہ افزا ہے کہ ملک بھر میں عیدالاضحی کے دنوں میں ایس او پیز پر عمل کرتے ہوئے جانوروں کی منڈیاں انتہائی محدود سطح تک رکھنے اور مارکیٹوں کو حتی الوسع بند رکھنے سے کورونا کے ممکنہ پھیلائو کا خطرہ ٹل گیا جسے دیکھتے ہوئے حکومت پنجاب نے پانچ کی بجائے تین اگست ہی سے لاک ڈائون مکمل طور پر ختم کردیا جبکہ بلوچستان حکومت نے صوبے میں اسمارٹ لاک ڈائون میں مزید 15روز کی توسیع کی ہے جس کے تحت تجارتی مراکز ہفتے سے جمعرات تک صبح 9بجے سے رات دس بجے تک کھولنے کی اجازت ہوگی تندور ، دودھ دہی کی دکانیں، میڈیکل اسٹور 24گھنٹے کھولنے کی اجازت ہے۔ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر (این سی او سی) کے تین اگست کے اعداد و شمار کے مطابق اس وقت ملک میں کورونا کے ایکٹو کیسوں کی تعداد 25ہزار 172ہے جبکہ گزشتہ 24گھنٹے کے دوران اس سے آٹھ ہلاکتیں ہوئیں۔ یہاں یہ امر قابلِ ذکر ہے کہ جہاں ملک میں گزشتہ پانچ ماہ کے دوران کورونا کے مجموعی کیسوں کی تعداد دو لاکھ 80ہزار 24تک پہنچی وہیں وفاقی اور تمام صوبائی حکومتوں کی کامیاب حکمت عملی کی بدولت 2لاکھ 48ہزار 873افراد روبصحت ہوئے اور ہلاکتوں کی تعداد بھی خدشات کے برعکس پانچ ہزار 984تک رہی۔ مجموعی صورتحال کے مطابق اس وقت ایس اوپیز کو ملحوظ رکھتے ہوئے ملک بھر کے تعلیمی ادارے، شادی ہال اور بعض جملہ عوامی مقامات تاحال بند ہیں وفاقی و صوبائی حکومتوں کی حالات پر گہری نظر ہے اگر حالات بدستور حوصلہ افزا رہے تو یہ بات بڑے وثوق سے کہی جا سکتی ہے کہ ان مقامات کا بھی کھل جانا اب دنوں کی بات ہے البتہ یہ ایک حقیقت ہے کہ جب تک دنیا میں ایک بھی مریض موجود ہے کورونا کو کسی صورت نظر انداز نہیں کیا جا سکتا جس کے لئے ایس او پیز کا خیال رکھنا حکومتی حلقوں اور عوامی سطح پر لازم ہے۔

اداریہ پر ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائے دیں00923004647998