آپ آف لائن ہیں
جمعہ12؍ربیع الاوّل 1442ھ 30؍اکتوبر2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

میری بتائی چار باتوں پر عمل کرنا

ایک خاوند نے اپنی بیوی کو پہلی ملاقات میں یہ نصیحت کی۔ کہ چار باتوں کا خیال رکھنا۔

پہلی بات تو یہ ہے کہ مجھے آپ سے بہت محبت ہے اس لئے میں نے آپ کو بیوی کے طور پر پسند کیا ہے۔اگر آپ مجھے اچھی نہ لگتیں تو میںآ پ کے ساتھ شادی کا مقد س رشتہ قائم نہ کرتا ۔تا ہم میں بھی انسان ہوںفرشتہ نہیں اگر کسی وقت میں غلطی کر بیٹھوں تو تم اس سے چشم پوشی کرلینا۔ چھوٹی موٹی کو تاہیوں کو نظر انداز کردینا ۔ 

دوسری بات یہ کہ مجھے ڈھول کی طرح نہیں بجانا ۔بیوی کو اس پر بڑا تعجب ہوا ،اُس نے پوچھا، اس بات کا کیا مطلب ہے ۔شوہر نے کہا بلفرض میں اگر غصے میں ہوں تو تم اُس وقت مجھے جواب نہ دینا ۔جب مرد غصے میں کچھ کہہ رہا ہو اور عورت بھی برابر کی زبان چلا رہی ہوتو معاملہ مزید بگڑ جاتا ہے ۔عورت کو چاہیے کہ جب مرد غصے میں ہو تووہ اس کی باتوں کو نظر انداز کردے ۔دونوں کو بیک وقت غصہ آنا،ایسا ہی ہے جیسے کسی رسی کو دونوں طرف سے کھینچا جارہا ہو ۔

تیسری بات یہ کہ، راز ونیاز کی ہر بات کرنا لیکن لوگوں کے گلے شکوے یا شکایتیں نہ کرنا۔چوں کہ اکثر اوقات ساس کی باتیں ،نند کی باتیں یا کسی اور کی باتیں میاں بیوی کے درمیان زہر گھول دیتی ہیں ۔اسی لیے شکوے شکایتوں سے ممکنہ حد تک گریز کرنا ۔

چوتھی بات یہ کہ دل میں ایک وقت میں تو محبت ہو سکتی ہے یا نفرت دونوں ایک ساتھ ہونا مشکل ہوتا ہے۔ اگر خلا ف اصول میری کوئی بات بری لگےتو دل میں نہ رکھنا۔ مجھ سے بنا کسی ڈر خوف کے آرام سے کہہ دینا ،کیوں کہ بات دل میں رکھنےسے انسان شیطان کے وسوسوں کا شکار ہوکر دل میں زہر گھولتا رہتا ہے ۔اور جب میاں بیوی کے تعلقات خراب ہوجاتے ہیں تو زندگی کا رُخ بدل جاتا ہے ۔