آپ آف لائن ہیں
اتوار13؍ ربیع الثانی1442ھ 29؍ نومبر2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

مولانا فضل الرحمٰن کا نئے انتخابات کا مطالبہ

سربراہ جمعیت علمائے اسلام (ف) مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن 2018 کے انتخابات کو منسوخ کرے اور نئے انتخابات کا اعلان کرے۔

سربراہ جمعیت علمائے اسلام (ف) مولانا فضل الرحمٰن نے میڈیا سے گفتگو کے دوران کہا ہے کہ میں اصولوں پر سودے بازی نہیں کرتا، پاکستان میں حکومت نہیں ہے، جو ہے وہ بیساکھی پر کھڑی ہے، گوجرانوالہ، کراچی اور کوئٹہ میں پی ڈی ایم جلسے میں بڑی تعداد میں لوگ شریک ہوئے، عوام حالات سے حکومت بیزار ہوچکے ہیں، حکومت کو بھی ادراک ہے۔

مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ ہم مطمئن ہیں کہ تحریک کامیابی سے آگے بڑھے گی، لوگوں نے حکومت سے بیزاری کا اظہار کیا ہے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ فرانس میں بھی پر تشدد واقعات ہوئے ہیں، فرانس میں گستاخانہ خاکے پوری قوم کے لیے مضطرب کا باعث ہے، فرانس کے خلاف پوری امت مسلمہ احتجاج کر رہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ وقت ثابت کر رہا ہے کہ مسلمان شدت پسند نہیں مغربی دنیا شدت پسند ہے، فرانس سے حکومتی معاہدے ختم کردیئے جائیں، فرانس کو بتادیا جائے کہ معاشی بائیکاٹ کر رہے ہیں۔

مولانا فضل الرحمن نے کیپٹن صفدر کی گرفتاری سے متعلق بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی نے سندھ میں جو رویہ اختیار کیا وہ دانشمندانہ تھا۔

اُن کا کہنا تھا کہ کشمیرکو تین حصوں میں تقسیم کرنے کا فارمولا عمران خان کا تھا، مقبوضہ کشمیر کی متنازع حیثیت ختم کرکے ہندوستان میں شامل کر دیا گیا، پاکستانی سفارتی سطح پر کوئی کوشش نہیں ہے، یہ خاموشی رضا مندی کی طرح کی خاموشی تھی۔

مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ گلگت بلتستان میں بھی اسٹیک ہولڈر کو اعتماد میں نہیں لیا جارہا، اگر وہ سیکیورٹی نہیں دے سکتے تو ہم جلسے کی خود سیکیورٹی کریں گے۔

قومی خبریں سے مزید