آپ آف لائن ہیں
جمعہ یکم جمادی الثانی 1442ھ15؍جنوری 2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

چیف منسٹر کا بیٹا ہونے کے باعث سلیمان شہباز کو انکار نا ممکن تھا، وعدہ معاف گواہ

شہباز شریف کے خاندان کے خلاف منی لانڈرنگ ریفرنس میں وعدہ معاف گواہ یاسر مشتاق نے لاہور کی احتساب عدالت میں بیان جمع کروا دیا، جس میں کہا گیا ہے کہ چیف منسٹر کا بیٹا ہونے کے باعث سلیمان شہباز کو انکار کرنا ہمارے لیے نا ممکن تھا۔

وعدہ معاف گواہ یاسر مشتاق کا عدالت میں جمع کرائے گئے بیان میں کہنا ہے کہ 2014ء میں شریف خاندان کے سی ایف او عثمان نے سلیمان شہباز کی 60 کروڑ کی رقم وائٹ کرانے کیلئے رابطہ کیا۔

یاسر مشتاق نے کہا ہے کہ سی ایف او محمد عثمان کو بتایا کہ رقم وائٹ کرنا ہمارے بس کی بات نہیں، سی ایف او نے بتایا کہ وہ ٹی ٹیز لگوانے کے لیے مشتاق اینڈ کمپنی کا اکاؤنٹ استعمال کریں گے۔

بیان میں وعدہ معاف گواہ نے کہا ہے کہ پرانے کاروباری تعلقات کی بناء پر ہم نے اپنی کمپنی کا اکاؤنٹ استعمال کرنے کی اجازت دی، چیف منسٹر کا بیٹا ہونے کے باعث ہمارا سلمان شہباز کو انکار کرنا نا ممکن تھا۔

یاسر مشتاق نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ 2014ء میں بیرونِ ملک سے 21 کروڑ سے زائد رقم ہماری کمپنی کے اکاؤنٹ میں آئی، جیسے جیسے رقم اکاؤنٹ میں آتی ہم چیک کاٹ کر محمد عثمان کو دے دیتے تھے۔

وعدہ معاف گواہ نے عدالت میں جمع کرائے گئے بیان میں کہا ہے کہ محمد عثمان کے کہنے پر نجی بینک کی سرکلر روڈ برانچ میں ایک اور اکاؤنٹ کھلوایا گیا، اسی برانچ میں سلمان شہباز کا اکاؤنٹ پہلے سے موجود تھا۔


یاسر مشتاق کا اپنے بیان میں مزید کہنا ہے کہ اس اکاؤنٹ میں بیرونِ ملک کے مختلف اکاؤنٹس سے 29 کروڑ سے زائد رقم کی ٹرایکشنز کی ٹی ٹی لگوائی گئی۔

وعدہ معاف گواہ نے بیان میں یہ بھی کہا ہے کہ سلیمان شہباز نے اپنے ملازم طاہر نقوی کے نام پر وقار ٹریڈنگ کمپنی بنائی، اس اکاؤنٹ سے 10 کروڑ روپے مشتاق اینڈ کمپنی کے نام بذریعہ چیک ٹرانسفر کیئے گئے۔

قومی خبریں سے مزید