• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

صدف کی ماضی کی ویڈیوز دکھانے والوں نے اپنا کیس خود کمزور کردیا، شہروز

کراچی (آئی این پی) اداکارہ و ماڈل صدف کنول کے بیان نے سوشل میڈیا میں بحث چھیڑ دی صارفین نے تنقید کا نشانہ بنایا تو شہروز سبزواری اہلیہ کے دفاع میں سامنے آ گئے۔گزشتہ دنوں اداکارہ صدف کنول نے ایک انٹرویو کے دوران کہا تھا کہ فیمنزم کا مطلب شوہر کا خیال رکھنا اور اس کی عزت کرنا ہے، شوہر کے کپڑے استری کرنا اس کے جوتے اٹھانا ہمارا کلچر ہیاداکارہ صدف کنول کا شوہر کا خیال رکھنے سے متعلق بیان پر سوشل میڈیا پر تبصروں کا طوفان آگیا کسی نے تعریف کی کسی نے تنقید کی۔ اب شہروز سبزواری نے بھی میدان میں آتے ہوئے کہا کہ ان کی اہلیہ نے اسلامی تعلیمات کے مطابق بات کی،صدف نے کچھ غلط نہیں کہا ان پر ناز ہے ان کے ساتھ کھڑا ہوں۔شہروز کا کہنا تھا کہ اہلیہ صدف کنول کے بیان پر مخالفت کرتے ہوئے کہا گیا اس طرح کے بیان نے معاشرے میں موجود پریشان خواتین کو مزید پریشان کردیا ہے لیکن ایسا نہیں ہے، میں خود بھی مسلمان ہوں، صدف سمیت میرا پورا گھرانہ ہر اس عورت کے ساتھ کھڑا ہے جو پریشان ہے مگر جو عورتیں بے شرمی کو عام بنانا چاہتی ہیں ہم ان کے ساتھ نہیں کھڑے۔انہوں نے کہا کہ عورت مارچ میں غیر مناسب نعرے لگائے گئے لیکن اس کے باوجود میڈیا خاموش رہا، مجھے یہ دیکھ کر احساس ہوا کہ بحیثیت اسلامی جمہوریہ پاکستان آج ہم کہاں کھڑے ہیں ؟ ہماری عورت تو اسلام سے خوش ہے۔اداکار کا کہنا تھا کہ اسلام میں یہ کہیں نہیں ہے کہ کسی کا ماضی اس کے حال میں دکھا کر اس کو شرمندہ کیا جائے، جنہوں نے صدف کی ماضی کی ویڈیوز کو ان کے حال میں دکھا کر ان سے سوالات کیے انہوں نے ایک طرح سے اپنا کیس خود ہی کمزور کردیا اور یہ ایک چھوٹا سا طبقہ ہے جس نے صدف کی مخالفت کی، بصورت دیگر پچھلے 4 روز سے پاکستان کی خواتین صدف کے ساتھ کھڑی ہیں۔شو میں شریک اداکارہ سلمیٰ ظفر نے شہروز کی بات کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ صدف کنول نے معصومانہ انداز میں اپنے بارے میں بات کی لیکن موجودہ حالات کے پیش نظر لوگوں کو یہ بات بری لگی۔

دل لگی سے مزید